بسم اللہ الرحمن الرحیم،الحمد للہ والصلوٰۃ والسلام علی من لا نبی بعدہ 

ہفتہ, 02 جنوری 2016 00:00

دعا کی اہمیت ، شرائط اور فوائد

Written by  ڈاکٹر علی بن عبد الرحمن الحذیفی ترجمہ شفقت الرحمن مغل

پہلا خطبہ:

تمام تعریفیں اللہ کیلیے ہیں جو آسمان و زمین کا پروردگار ہے، وہ دعائیں سننے والا ہے، نعمتیں اور رحمتیں عطا کرتا ہے ، وہی مشکل کشائی فرماتا ہے، اپنے رب کی تعریف اور شکر گزاری کرتے ہوئے اسی کی جانب رجوع کرتا ہوں اور گناہوں کی معافی چاہتا ہوں، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں وہ یکتا ہے، وہی عزت و کبریائی والا ہے، میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی  جناب محمد  ﷺ اللہ کے بندے اور اس کے رسول ہیں ، آپ کو کامل و روشن شریعت  دے کر بھیجا گیا، یا اللہ! اپنے بندے، اور رسول محمد  ، ان کی آل اور نیکیوں کیلیے بڑھ چڑھ کر حصہ لینے والے صحابہ کرام پر درود  و سلام اور برکتیں نازل فرما۔

حمد و صلاۃ کے بعد:

تقوی الہی کما حقُّہ اختیار کرو، تقوی حاصل کرنے والے کیلیے اللہ تعالی دنیا و آخرت  کی خیر یکجا فرما دے گا، جب کہ تقوی سے رو گردانی کرنے والا اپنے انجام میں بد بخت ٹھہرے گا چاہے اسے دنیا کتنی ہی مل جائے۔

مسلمانو!

اللہ تعالی نے دنیا و آخرت کیلیے خیر و سعادت کے اسباب مقرر کر  دیے ہیں ، اسی طرح دونوں جہانوں میں شر کے اسباب بھی مقرر فرما دیے ہیں، لہذا خیر و فلاح کے اسباب اپنانے والے کیلیے اللہ تعالی نے دنیاوی کامیابی کی ضمانت دے دی ہے، اور آخرت میں اسی کیلیے اچھا انجام ہو گا وہ ہمیشہ نعمتوں والی جنت میں رہے گا، اور ربِ رحیم کی رضا پائے گا، فرمانِ باری تعالی ہے: {هَلْ جَزَاءُ الْإِحْسَانِ إِلَّا الْإِحْسَانُ}بھلائی کا بدلہ صرف بھلائی ہی ہے۔ [الرحمن : 60]

اور برائی کے اسباب اپنانے والے کو زندگی میں اور مرنے کے بعد بھی برا انجام ہی ملے گا، فرمانِ باری تعالی ہے: {لَيْسَ بِأَمَانِيِّكُمْ وَلَا أَمَانِيِّ أَهْلِ الْكِتَابِ مَنْ يَعْمَلْ سُوءًا يُجْزَ بِهِ وَلَا يَجِدْ لَهُ مِنْ دُونِ اللَّهِ وَلِيًّا وَلَا نَصِيرًا} [جنت میں داخلہ] نہ تمہاری آرزوؤں پر [موقوف]ہے اور نہ اہل کتاب کی آرزوؤں  پر، جو بھی برے کام کرے گا اس کی سزا پائے گا اور اللہ کے سوا کسی کو اپنا دوست و مدد گار نہ پائے گا [النساء : 123]

یاد  رکھیں! اپنی اور دوسروں کی اصلاح و فلاح اور دائمی خیر و بھلائی، مصیبتوں اور عقوبتوں سے تحفظ، اور موجودہ مصائب و آلام کے ازالہ کا اہم طریقہ یہ ہے کہ اللہ تعالی سے اخلاص، دلی توجہ اور گڑگڑا کر دعا کی جائے، کیونکہ اللہ تعالی دعا کو پسند  فرماتا ہے، دعا مانگنے کا حکم دیتا ہے، دعا  موجودہ اور پیش آمدہ مصائب کیلیے بہترین اِکسیر ہے، فرمانِ باری تعالی ہے: {وَقَالَ رَبُّكُمُ ادْعُونِي أَسْتَجِبْ لَكُمْ إِنَّ الَّذِينَ يَسْتَكْبِرُونَ عَنْ عِبَادَتِي سَيَدْخُلُونَ جَهَنَّمَ دَاخِرِينَ} آپ کے پروردگار نے فرمایا ہے: "مجھے پکارو، میں تمہاری دعا قبول کروں گا جو لوگ میری عبادت سے تکبر کرتے ہیں جلد ہی ذلیل و خوار  ہو کر جہنم میں داخل ہوں گے" [غافر : 60]

حقیقت میں دعا ہی عبادت ہے، جیسے کہ نعمان بن بشیر رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی ﷺ نے فرمایا: (دعا ہی عبادت ہے) ابو داود، ترمذی نے اسے روایت کیا ہے اور ترمذی نے اسے حسن صحیح قرار دیا ہے۔

ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (اللہ تعالی کے ہاں کوئی چیز بھی دعا سے بڑھ کر معزز نہیں ہے) ترمذی، ابن حبان، اور حاکم نے اسے روایت کیا ہے، نیز حاکم نے اسے صحیح الاسناد قرار دیا ہے۔

ہر وقت دعا کرنے کی ترغیب دلائی گئی ہے، دعا کرنے پر اللہ تعالی عظیم ترین ثواب سے نوازتا ہے، دعا کے ذریعے خاص اور عام تمام قسم کے مطالبات پورے کروائے جا سکتے ہیں، چاہے ان کا تعلق دین سے ہو یا دنیا سے، زندگی سے ہو یا موت کے بعد سے۔

دعا کے فوائد کی وجہ سے اللہ تعالی نے فرض عبادات میں بھی دعا کو فرض یا مستحب قرار دیا ہے، یہ ہمارے رب کا ہم پر رحم و کرم اور فضل ہے، صرف اس لیے کہ ہم بھی اس پر اسی طرح عمل کریں جیسے اللہ تعالی نے ہمیں سکھایا ہے، اگر اللہ تعالی ہمیں نہ سکھاتا تو ہم خود سے یہ نہیں کر سکتے تھے، فرمانِ باری تعالی ہے: {وَعُلِّمْتُمْ مَا لَمْ تَعْلَمُوا أَنْتُمْ وَلَا آبَاؤُكُمْ } اور تمھیں وہ کچھ سکھایا گیا جو تم اور تمہارے آبا بھی نہیں جانتے تھے[الأنعام : 91] اس عظیم نعمت پر ہمہ قسم کی ڈھیروں، پاکیزہ اور برکتوں والی تعریفیں اللہ تعالی کیلیے ہی ہے، جیسے ہمارا رب پسند فرمائے اور راضی ہو۔

دعا کی ضرورت ہر وقت ہوتی ہے لیکن آج کل  کے پر فتن دور  ، تباہ کن  حادثات  اور مسلمانوں کی زبوں حالی کی وجہ سے دعا کی ضرورت مزید بڑھ جاتی ہے، کیونکہ مسلمانوں کی صفوں میں انتشار پیدا کرنے والے بدعتی فرقے پھل پھول رہے ہیں جو کہ معصوم لوگوں  کی جان و مال حلال سمجھتے ہیں، علم و علما کیساتھ جفا   کرتے ہیں اور جہالت و گمراہی کیساتھ فتوی دیتے ہیں ، اسلام دشمن قوتیں ان کے ساتھ ہیں اور اہل ایمان کے خلاف ریشہ دوانیوں میں سر گرم ہیں، مسلمانوں میں پھوٹ، اختلاف اور تصادم پیدا کرنے کے در پے ہیں، ان حالات میں دعا کی ضرورت مزید دو چند ہو جاتی ہے۔

مسلمانوں  کو پہنچنے والے نقصانات کے باوجود انہیں ظلم و بربریت کیساتھ بے گھر کیا گیا ، ضروریات زندگی میسر آنا مشکل ہو گئیں  کہ زمین اپنی کشادگی کے باوجود تنگ ہونے لگی، ایسے سنگین اور سخت حالات میں دعا کی ضرورت بہت بڑھ جاتی ہے ، ان حالات کی آگ میں مسلمان ایسے خطوں میں جل رہے ہیں جہاں فتنوں کی بھر مار ہے۔

اللہ تعالی نے  ایسے لوگوں کی تعریف بیان کی ہے جو مشکل حالات میں اللہ تعالی سے دعائیں کرتے ہیں، چنانچہ اللہ تعالی نے پوری انسانیت کے والدین آدم و حوا علیہما السلام کے متعلق فرمایا: {قَالَا رَبَّنَا ظَلَمْنَا أَنْفُسَنَا وَإِنْ لَمْ تَغْفِرْ لَنَا وَتَرْحَمْنَا لَنَكُونَنَّ مِنَ الْخَاسِرِينَ} ان دونوں نے کہا: "ہمارے پروردگار! ہم نے اپنے آپ پر ظلم کیا اور اگر تو نے ہمیں معاف  کیا اور ہم پر رحم نہ کیا تو ہم بہت نقصان اٹھانے والوں میں سے ہو جائیں گے" [الأعراف : 23]

اسی طرح فرمانِ باری تعالی ہے:  {وَلَنَبْلُوَنَّكُمْ بِشَيْءٍ مِنَ الْخَوْفِ وَالْجُوعِ وَنَقْصٍ مِنَ الْأَمْوَالِ وَالْأَنْفُسِ وَالثَّمَرَاتِ وَبَشِّرِ الصَّابِرِينَ (155) الَّذِينَ إِذَا أَصَابَتْهُمْ مُصِيبَةٌ قَالُوا إِنَّا لِلَّهِ وَإِنَّا إِلَيْهِ رَاجِعُونَ (156) أُولَئِكَ عَلَيْهِمْ صَلَوَاتٌ مِنْ رَبِّهِمْ وَرَحْمَةٌ وَأُولَئِكَ هُمُ الْمُهْتَدُونَ} اور ہم ضرور تمھیں  خوف اور فاقہ میں مبتلا کر کے، جان و مال اور پھلوں کے خسارے سے آزمائیں گے، اور ایسے صبر کرنے والوں کو خوش خبری دے دیجئے [156] جنہیں کوئی مصیبت آئے تو فوراً کہہ اٹھتے ہیں کہ : ہم بھی اللہ ہی کی ملکیت ہیں  ، اور اسی کی طرف ہمیں لوٹ کر جانا ہے [157] ایسے ہی لوگوں پر ان کے رب کی طرف سے عنایات اور رحمتیں برستی ہیں ایسے ہی لوگ ہدایت یافتہ ہوتے ہیں ۔[البقرة : 155 - 157]

اسی طرح اللہ تعالی یونس علیہ السلام کے بارے فرمایا: { فَنَادَى فِي الظُّلُمَاتِ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا أَنْتَ سُبْحَانَكَ إِنِّي كُنْتُ مِنَ الظَّالِمِينَ} انہوں نے اندھیروں میں پکارا: تیرے سوا کوئی معبود بر حق نہیں  ہے، تو پاک ہے، میں ہی ظالموں میں سے تھا۔[الأنبياء : 87] سعد بن ابی وقاص رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (جو بھی مسلمان کسی بھی چیز کیلیے مچھلی والے [یونس علیہ السلام] کی دعا مانگے تو اللہ تعالی اس کی دعا قبول فرماتا ہے)اسے احمد، ترمذی، اور حاکم نے روایت کیا ہے اور حاکم نے صحیح الاسناد قرار  دیا ہے۔

اسی طرح جب نبی ﷺ نے ثقیف قبیلے کے لوگوں کو اسلام کی دعوت دی اور انہوں نے آپ ﷺ کی دعوت قبول کرنے سے انکار ہی نہیں کیا بلکہ اتنے پتھر بھی مارے جن سے آپ کی ایڑھیاں خون میں لت پت ہو گئیں تو آپ ﷺ نے یہ کہتے ہوئے دعا فرمائی: (اَللَّهُمَّ أَشْكُو  إلَيْكَ ضَعْفَ قُوّتِي ، وَقِلّةَ حِيلَتِي ، وَهَوَانِي عَلَى النّاسِ، يَا أَرْحَمَ الرّاحِمِينَ ! إلَى مَنْ تَكِلُنِي ؟ إلَى بَعِيْدٍ يَتَجَهّمُنِي ؟ أَمْ إلَى عَدُوٍّ مَلّكْتَهُ أَمْرِي ؟ إنْ لَمْ يَكُنْ بِك غَضَبٌ عَلَيّ فَلَا أُبَالِي ، وَلَكِنّ عَافِيَتَك أَوْسَعُ لِي ، أَعُوذُ بِنُورِ وَجْهِك الّذِي أَشْرَقَتْ لَهُ الظّلُمَاتُ وَصَلُحَ عَلَيْهِ أَمْرُ الدّنْيَا وَالْآخِرَةِ أَنْ يَحِلّ بِي غَضَبُك ، أَوْ يَنْزِلَ بِي سُخْطُكَ، لَك الْعُتْبَى حَتّى تَرْضَى ، وَلَا حَوْلَ وَلَا قُوّةَ إلّا بِك[یا اللہ! میں اپنی کمزوری، تدبیر کی کمی، اور لوگوں کی نظروں میں ہلکا ہونے کی شکایت تجھ سے کرتا ہوں، یا ارحم الرحمین! تو مجھے کس کے سپرد کرنے والا ہے؟ کسی (تیوڑی چڑھا کر  ملنے والے) سخت  دشمن کے ؟ یا کسی ایسے دشمن کے سپرد کرنے لگا ہے جسے تو نے میرے  معاملہ کا مالک بنا دیا ہے؟ اگر تو مجھ پر غضبناک نہیں ہے تو مجھے کوئی پرواہ نہیں ہے، لیکن تیری طرف سے عافیت میرے لیے زیادہ بہتر ہے، میں تیرے چہرے کے نور کی پناہ چاہتا ہوں جس سے اندھیرے بھی روشن ہو گئے ہیں اور دنیا و آخرت کے معاملات درست ہو گئے ہیں، کہ مجھ پر تیرا غضب نازل ہو، یا مجھ پر تیری ناراضی اترے ،  میں تجھے مناتا رہوں گا حتی کہ تو راضی ہو جائے، نیکی کرنے کی طاقت اور برائی سے بچنے کی ہمت تیرے بغیر ممکن نہیں ہے])

اگر انسان کسی مشکل یا مصیبت کا مقابلہ کرنے سے قاصر ہوں تو دعا کے ذریعے اس کا مقابلہ کریں ، چنانچہ ثوبان رضی اللہ عنہ نبی ﷺ سے نقل کرتے ہیں کہ : (تقدیر کو دعا ہی ٹال سکتی ہے، عمر میں نیکی ہی اضافہ کر سکتی ہے، اور انسان کو گناہ کا ارتکاب کرنے پر رزق سے محروم کر دیا  جاتا ہے) ابن حبان اور حاکم نے اسے روایت کیا ہے اور حاکم نے اسے صحیح الاسناد قرار دیا ہے۔

ابن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ  رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (دعا موجودہ اور پیش آمدہ ہر قسم کی مصیبت میں فائدہ دیتی ہے، اس لیے اللہ کے بندو! دعا  لازمی کیا کرو) ترمذی، حاکم

اسی طرح ابو ہریرہ رضی اللہ  عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (اللہ تعالی فرماتا ہے: میں بندے کے گمان کے مطابق اپنے بندے کیساتھ ہوتا ہوں، جب بھی وہ مجھے پکارتا ہے میں اس کے ساتھ ہوتا ہوں) بخاری و مسلم، یہ بات مسلمان کیلیے کسی شرف سے کم نہیں ۔

اسی طرح اللہ تعالی  نے مصیبت اور پر فتن وقت میں دعا نہ کرنے والے لوگوں کی مذمت فرمائی، چنانچہ فرمایا: {وَلَقَدْ أَخَذْنَاهُمْ بِالْعَذَابِ فَمَا اسْتَكَانُوا لِرَبِّهِمْ وَمَا يَتَضَرَّعُونَ} اور ہم نے انہیں عذاب میں مبتلا کیا تب بھی وہ اپنے پروردگار کے سامنے جھکے اور نہ ہی گڑگڑائے۔[المؤمنون : 76]

اسی طرح فرمایا: {وَلَقَدْ أَرْسَلْنَا إِلَى أُمَمٍ مِنْ قَبْلِكَ فَأَخَذْنَاهُمْ بِالْبَأْسَاءِ وَالضَّرَّاءِ لَعَلَّهُمْ يَتَضَرَّعُونَ [42] فَلَوْلَا إِذْ جَاءَهُمْ بَأْسُنَا تَضَرَّعُوا وَلَكِنْ قَسَتْ قُلُوبُهُمْ وَزَيَّنَ لَهُمُ الشَّيْطَانُ مَا كَانُوا يَعْمَلُونَ} آپ سے پہلے ہم نے بہت سی قوموں کی طرف رسول بھیجے ، پھر   ہم نے انہیں سختی اور تکلیف میں مبتلا کر دیا تاکہ وہ گڑگڑا کر دعا کریں [42] پھر جب ان پر ہمارا عذاب آیا تو وہ کیوں نہ گڑگڑائے؟ مگر ان کے دل تو اور سخت ہو گئے اور جو کام وہ کر رہے تھے شیطان نے انہیں وہی کام خوبصورت بنا کر دکھائے۔[الأنعام :42-  43]

اسی طرح فرمایا: {وَمَا أَرْسَلْنَا فِي قَرْيَةٍ مِنْ نَبِيٍّ إِلَّا أَخَذْنَا أَهْلَهَا بِالْبَأْسَاءِ وَالضَّرَّاءِ لَعَلَّهُمْ يَضَّرَّعُونَ} اور ہم نے جب بھی کسی بستی میں نبی بھیجا تو وہاں کے رہنے والوں کو سختی و تکلیف  میں مبتلا کیا تاکہ وہ گڑگڑا کر دعا کریں [الأعراف : 94]

سنگین حالات میں بھی دعائیں نہ کرنا گناہوں پر اصرار میں شامل ہوتا ہے، بلکہ اللہ تعالی کی سخت پکڑ کو معمولی سمجھنے کی مانند ہے، حالانکہ فرمانِ باری تعالی ہے: {إِنَّ بَطْشَ رَبِّكَ لَشَدِيدٌ} بیشک تیرے رب کی پکڑ بہت سخت ہے۔[البروج : 12]

خیر و برکت کے نزول اور مشکل کشائی یا بلاؤں کے ٹالنے کیلیے دعا بہت عظیم ذریعہ ہے، دعا در پیش مصیبت  و تکلیف سے نکلنے کیلیے قوی ترین سبب بھی ہے، فرمانِ باری تعالی ہے: {وَأَيُّوبَ إِذْ نَادَى رَبَّهُ أَنِّي مَسَّنِيَ الضُّرُّ وَأَنْتَ أَرْحَمُ الرَّاحِمِينَ (83) فَاسْتَجَبْنَا لَهُ فَكَشَفْنَا مَا بِهِ مِنْ ضُرٍّ وَآتَيْنَاهُ أَهْلَهُ وَمِثْلَهُمْ مَعَهُمْ رَحْمَةً مِنْ عِنْدِنَا وَذِكْرَى لِلْعَابِدِينَ } ایوب نے اپنے پروردگار کو پکارا : "مجھے بیماری لگ گئی  ہے اور تو سب رحم کرنے والوں سے بڑھ کر رحم کرنے والا ہے" [83] چنانچہ ہم نے ان کی دعا قبول کی اور ان کی بیماری کو دور کر دیا، نیز ہم نے اُنہیں صرف اہل و عیال ہی نہ دیئے بلکہ ان کے ساتھ اتنے ہی  اور بھی دیئے اور یہ ہماری طرف سے خاص رحمت تھی اور [اس میں] عبادت گزاروں  کے لئے سبق ہے۔ [الأنبياء : 83 - 84]

اسی طرح فرمایا: {أَمَّنْ يُجِيبُ الْمُضْطَرَّ إِذَا دَعَاهُ وَيَكْشِفُ السُّوءَ} کون ہے جو لاچار کے پکارنے پر اس کی مدد کرتا ہے اور مشکل کشائی فرماتا ہے؟ [النمل : 62] یعنی : اللہ کے سوا کوئی لاچار کی پکار نہیں سنتا۔

اسی طرح فرمایا: {قُلْ مَنْ يُنَجِّيكُمْ مِنْ ظُلُمَاتِ الْبَرِّ وَالْبَحْرِ تَدْعُونَهُ تَضَرُّعًا وَخُفْيَةً لَئِنْ أَنْجَانَا مِنْ هَذِهِ لَنَكُونَنَّ مِنَ الشَّاكِرِينَ  }  آپ ان سے پوچھئے کہ: بحر و بر کی تاریکیوں میں پیش آنے والے خطرات سے تمھیں کون نجات دیتا ہے؟ جسے تم عاجزی کے ساتھ اور چپکے چپکے پکارتے ہو کہ:  "اگر اس نے ہمیں [اس مصیبت سے] نجات دے دی تو ہم  ضرور اس کے شکر گزار ہوں گے [الأنعام : 63]

مسلمان کو اپنے تمام معاملات کی درستگی کیلیے اللہ تعالی سے رجوع کرنا چاہیے، اپنی تمام تر ضروریات اللہ تعالی کے سامنے رکھے، ہر چیز اللہ تعالی سے ہی مانگے، اور مانگنے کی سب سے بڑی چیز جنت  میں داخلہ اور آگ سے نجات ہے، حدیث قدسی میں اللہ تعالی کا فرمان ہے: (میرے بندو! تم سب کے سب گمراہ ہو ، سوائے اس شخص کے جسے میں ہدایت دوں، اس لیے مجھ سے ہدایت مانگو میں تمھیں ہدایت دونگا، میرے بندو! تم سب کے سب بھوکے ہو ، سوائے اس شخص کے جسے میں کھلاؤں، اس لیے مجھ سے کھانا مانگو میں تمھیں کھانا کھلاؤں گا، میرے بندو! تم سب کے سب بے لباس ہو ، سوائے اس شخص کے جسے میں لباس پہناؤں ، اس لیے مجھ سے لباس مانگو میں تمھیں لباس پہناؤں گا، میرے بندو! تم رات دن گناہ کرتے ہو، اور میں سارے گناہ معاف کر سکتا ہوں اس لیے تم مجھ سے بخشش مانگو میں تمھیں معاف کر دونگا) مسلم نے اسے ابو ذر رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے، اس حدیث کا مطلب یہ ہے کہ تم مجھ سے ہدایت، کھانا، لباس، اور مغفرت مانگو، یا اللہ! ہمیں ہدایت دے، ہمیں کھلا، پہنا  اور بخش دے یا ارحم الراحمین!

ایک اور حدیث میں ہے کہ: (تم اپنے رب سے جوتے کا تسمہ اور کھانے کا نمک تک مانگو)

کتنی ہی ایسی دعائیں ہیں جنہوں نے تاریخ کا دھارا ہی بدل کر رکھ دیا، شر کو خیر میں اور بہتر کو بہترین سے تبدیل کر دیا، چنانچہ اللہ تعالی نے ہمارے جد امجد ابراہیم علیہ الصلاۃ و السلام کی دعا ذکر کرتے ہوئے فرمایا: {رَبَّنَا وَابْعَثْ فِيهِمْ رَسُولًا مِنْهُمْ يَتْلُو عَلَيْهِمْ آيَاتِكَ وَيُعَلِّمُهُمُ الْكِتَابَ وَالْحِكْمَةَ وَيُزَكِّيهِمْ إِنَّكَ أَنْتَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ} اے ہمارے پروردگار! ان میں ایک رسول مبعوث فرما  جو انہی میں سے ہو، وہ ان کے سامنے تیری آیات کی تلاوت کرے، انہیں کتاب اور حکمت  کی تعلیم دے اور ان کو پاکیزہ بنا دے۔  بلاشبہ تو غالب اور حکمت والا ہے" [البقرة : 129]

ابو امامہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے عرض کیا: "یا رسول اللہ ! آپ کی ابتدا کیسے تھی؟ تو آپ ﷺ نے فرمایا:(میں اپنے والد ابراہیم [علیہ السلام] کی دعا، عیسی [علیہ السلام] کی خوش خبری  ہوں، اور میری والدہ نے دیکھا کہ ان کے پیٹ سے  نور نکلا جس سے شام کے محل بھی روشن ہو گئے، دیگر انبیا کی مائیں بھی اسی طرح نور دیکھتی ہیں) " احمد

مسلمان اس دعا کی وجہ سے سرمدی خیر میں ہیں، اس دھرتی کو بھی اس دعا سے فائدہ ہوا، نوح علیہ السلام کی دعا بھی  موحد مؤمنوں کیلیے نجات اور خیر و برکت کا باعث بنی، اور مشرکین کیلیے نقصان کا باعث بنی۔

ایک وقت آئے گا جب عیسی ﷺ اور آپ کے حواری طور پہاڑ میں محصور  ہو کر دعا کریں گے، یہ دعا بھی مسلمانوں کی فتح  اور یاجوج و ماجوج کیلیے تباہی و بربادی کا باعث ہو گی، جو کہ ٹڈیوں کی طرح آئیں گے اور پوری زمین پر پھیل جائیں گے، وہ بد ترین اور فسادی  و سرکش ہوں گے، چنانچہ نواس بن سمعان رضی اللہ عنہ کی حدیث میں ہے کہ : (جس وقت عیسی  علیہ السلام دجال کو قتل فرمائیں گے تو اللہ تعالی عیسی ﷺ  کی جانب وحی فرمائے گا: "میں نے اپنے ایسے بندے نکال دیے ہیں  جن کا مقابلہ کرنے کی کسی میں سکت نہیں ہے، اس لیے میرے بندوں کو طور پہاڑ کی طرف لے چلو، تو اللہ تعالی یاجوج  ماجوج کو بھیجے گا اور وہ ہر اونچی جگہ سے گھسٹتے ہوئے آئیں گے، ان کا ہراول دستہ بحیرہ طبریہ سے گزرے  گا تو اس کا سارا پانی پی جائیں گے، جس وقت ان میں سے آخری شخص گزرے گا تو وہ کہے گا: "یہاں لگتا ہے کہ کبھی پانی تھا" اللہ کے نبی عیسی ﷺ اور ان کے ساتھی محصور ہو کر رہ جائیں گے، حتی کہ ان کے ہاں ایک بیل کی سری تمہارے 100 دینار سے بھی مہنگی ہو گی، تو اللہ نے نبی عیسی علیہ السلام و آپ کے حواری  اللہ سے دعا کریں گے، پھر اللہ تعالی یاجوج ماجوج کی گردنوں میں کیڑے پیدا کر دے گا، جس کی وجہ سے وہ سب کے سب یک لخت مر جائیں گے، اس کے بعد اللہ کے نبی عیسی اور ان کے ساتھی نیچے  اتریں گے  اور انہیں زمین پر ایک بالشت کے برابر بھی جگہ نہیں ملے گی جہاں یاجوج ماجوج کی چربی اور بد بو نہ ہو، پھر اللہ کے نبی عیسی ﷺ اور آپ کے رفقا اللہ تعالی سے دعا کریں گے تو اللہ تعالی ان پر بختی اونٹ کی گردنوں جیسے پرندے بھیجے گا جو اللہ کے حکم سے انہیں اٹھا کر جہاں اللہ چاہے گا پھینک دیں گے") مسلم

ہمارے نبی اور سید البشر محمد ﷺ نے صحابہ کیساتھ بدر میں جو دعا فرمائی تھی وہ اسلام  کیلیے ابدی  طور پر کار آمد اور کفر کیلیے سرمدی طور پر رسوائی کا باعث بنی ، فرمانِ باری تعالی ہے: {إِذْ تَسْتَغِيثُونَ رَبَّكُمْ فَاسْتَجَابَ لَكُمْ أَنِّي مُمِدُّكُمْ بِأَلْفٍ مِنَ الْمَلَائِكَةِ مُرْدِفِينَ} اس وقت کو یاد کرو جب تم اپنے رب سے فریاد کر رہے تھے پھر اللہ نے تمہاری سن لی کہ میں تم کو ایک ہزار فرشتوں سے مدد دونگا جو لگاتار چلے آئیں گے ۔[الأنفال : 9] آپ ﷺ نے بدر کے موقع پر دعا کرتے ہوئے بہت ہی الحاح اور اصرار کیساتھ دعا فرمائی تھی یہاں تک کہ آپ کی چادر گر گئی تو ابو بکر رضی اللہ عنہ نے آپ کو پکڑ کر تسلی دی اور کہا: "اللہ کے رسول! اللہ تعالی سے آپ نے کافی اصرار کر لیا ہے، اللہ تعالی  آپ سے کیا ہوا وعدہ ضرور پورا فرمائے گا، اس پر رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (ابو بکر ! خوش ہو جاؤ، یہ جبریل علیہ السلام ہیں جو فرشتوں کو  ترتیب دے رہے ہیں اور ان کے اگلے دانتوں پر غبار چڑھی ہوئی ہے)"اس سے پہلے کسی بھی نبی کیساتھ فرشتوں نے لڑائی میں براہ راست حصہ نہیں لیا، آپ ﷺ کے مقام و مرتبے ، اللہ تعالی پر کامل اعتماد و یقین  اور صحابہ کرام کے مخلص ہونے کی وجہ سے یہ بلند مقام آپ کو دیا گیا۔

حق کے غلبے اور باطل  کے مٹانے کی دعا کرنا حقیقت میں اللہ، کتاب اللہ، رسول اللہ، اور مسلم حکمرانوں سمیت تمام مسلمانوں کی بھی خیر خواہی ہے، اس لیے دعا سے بے رغبتی وہی شخص کرتا ہے جو دنیا و آخرت میں  اپنا نصیب کھونا چاہتا ہے، نیز اسلام اور مسلمانوں کے حوالے سے اپنی ذمہ داری میں کوتاہی برت رہا ہے، ایک حدیث میں ہے: (جو شخص مسلمانوں کے معاملات کی پرواہ نہیں کرتا وہ مسلمانوں میں سے نہیں ہے)

اگر ہم دعا کے مثبت نتائج، اثرات، برکات، خیر و بھلائی جمع کرنے لگیں تو بہت وقت در کار ہو گا اس لیے جو ہم نے بیان کر دیا ہے وہی کافی ہے۔

دعا کی کچھ شرائط اور آداب ہیں :  چنانچہ دعا کی شرائط میں حلال کھانا پینا اور پہننا شامل ہے، جیسے کہ نبی ﷺ نے سعد بن ابی وقاص رضی اللہ عنہ سے فرمایا تھا: (سعد! اپنا کھانا پاکیزہ رکھو تمہاری دعا قبول کی جائے گی)

اسی طرح دعا کی شرط ہے کہ : انسان سنت پر کار بند ہو، اللہ تعالی کے احکامات کو بجا لائے اور ممنوعات سے بچے، فرمانِ باری تعالی ہے: {وَإِذَا سَأَلَكَ عِبَادِي عَنِّي فَإِنِّي قَرِيبٌ أُجِيبُ دَعْوَةَ الدَّاعِ إِذَا دَعَانِ فَلْيَسْتَجِيبُوا لِي وَلْيُؤْمِنُوا بِي لَعَلَّهُمْ يَرْشُدُونَ} اور جب میرے بندے آپ سے میرے متعلق پوچھیں تو انہیں کہہ دیجئے کہ میں قریب ہی ہوں، جب کوئی دعا کرنے والا  مجھے پکارتا ہے تو میں اس کی دعا قبول کرتا ہوں لہذا انہیں چاہیے کہ میرے احکام بجا لائیں اور مجھ پر ایمان لائیں تا کہ وہ ہدایت پا جائیں [البقرة : 186]

اور اسی طرح فرمایا: {وَيَسْتَجِيبُ الَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ وَيَزِيدُهُمْ مِنْ فَضْلِهِ} جو لوگ ایمان لائیں اور نیک عمل کریں اللہ ان کی دعا قبول کرتا ہے  اور اپنے فضل سے انہیں زیادہ بھی دیتا ہے [الشورى : 26] لیکن اگر کوئی شخص مظلوم ہو چاہے وہ کافر یا بدعتی ہی کیوں نہ ہو اس کی بد دعا پھر بھی قبول ہوتی ہے۔

دعا کی یہ بھی شرط ہے کہ : اس میں اخلاص، حاضر قلبی، اللہ تعالی کے سامنے اصرار، اور سچے دل کیساتھ التجائیں کی جائیں، فرمانِ باری تعالی ہے: {فَادْعُوا اللَّهَ مُخْلِصِينَ لَهُ الدِّينَ وَلَوْ كَرِهَ الْكَافِرُونَ} اللہ کیلیے خالص عبادت کرتے ہوئے اللہ کو ہی پکارو چاہے یہ کافروں کیلیے نا گوار گزرے۔[غافر : 14]

اور ایک حدیث میں ہے کہ: (اللہ تعالی کسی ایسے دل سے دعا قبول نہیں فرماتا  جو سہو و لہو میں مبتلا ہو)

اسی طرح یہ بھی دعا کی شرط ہے کہ: گناہ اور قطع رحمی کی دعا نہ کی جائے اور دعا میں حد سے تجاوز نہ ہو ۔

دعا کی قبولیت کے اسباب میں  یہ شامل ہے کہ اللہ تعالی کے اسما و صفات کے ذریعے اللہ تعالی کی خوب حمد و ثنا بیان کی جائے ، اور نبی ﷺ پر درود و سلام پڑھیں، چنانچہ ایک حدیث میں ہے کہ: رسول اللہ ﷺ نے ایک آدمی کو کہتے ہوئے سنا: ("اَللَّهُمَّ إِنِّي أَسْأَلُكَ بِأَنِّي أَشْهَدُ أَنَّكَ أَنْتَ اللَّه لاَ إِلَهَ إِلاَّ أَنْتَ، الأَحَدُ، الصَّمَدُ، الَّذِي لَمْ يَلِدْ، وَلَمْ يُولَدْ، وَلَمْ يَكُنْ لَهُ كُفُوًا أَحَدٌ"[یا اللہ! میں تجھ سے اپنی گواہی کا واسطہ دیتے ہوئے سوال کرتا ہوں کہ تو ہی معبود بر حق ہے تیرے سوا کوئی معبود نہیں ، تو ہی یکتا اور بے نیاز ہے، اس سے کوئی پیدا نہیں ہوا اور نہ ہی وہ کسی سے پیدا ہوا ہے، اور اس کا کوئی ہم سر نہیں ہے]تو آپ ﷺ نے فرمایا: تو نے اللہ تعالی کے اس نام سے مانگا ہے جب بھی اس نام سے مانگا جائے تو وہ قبول فرماتا ہے) ابو داود، ترمذی نے اسے روایت کہا ہے اور ترمذی نے حسن کہا ہے، ابن ماجہ، ابن حبان، اور حاکم نے بریدہ رضی اللہ عنہ سے اسے بیان کیا ہے۔

اور فضالہ بن عبید رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ : (ایک بار رسول اللہ ﷺ بیٹھے ہوئے تھے تو ایک آدمی داخل ہوا اور نماز پڑھتے ہوئے کہنے لگا: "یا اللہ! مجھے معاف کر دے مجھ پر رحم فرما" تو آپ ﷺ نے فرمایا: نماز پڑھنے والے!  تم نے جلد بازی سے کام لیا ہے، جب تم  نماز پڑھو اور تشہد میں بیٹھو تو اللہ کی شایان ِ شان حمد و ثنا بیان کرو، اور پھر مجھ پر درود بھیجو، اس کے بعد دعا کرو) احمد، ابو داود، ترمذی نے اسے روایت کیا ہے اور ترمذی نے اسے حسن کہا ہے۔

اور ایک حدیث میں ہے کہ : (دعا آسمان اور زمین کے درمیان معلق رہتی ہے جب تک نبی ﷺ پر درود نہ پڑھا جائے)

دعا کے آداب اور قبولیت کی شرائط میں یہ بھی شامل ہے کہ :  قبولیت کیلیے جلد بازی نہ کرے، بلکہ دعا کرتا رہے اور صبر سے کام لے چنانچہ حدیث میں ہے کہ : (تمہاری دعا اس وقت تک قبول کی جاتی ہے جب تک جلد بازی نہ کرے اور کہے: "دعا تو بہت کی لیکن قبول ہی نہیں ہوتی[!]") بخاری و مسلم نے اسے ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے بیان کیا ہے۔

لہذا دائمی طور پر دعا کرتے رہنے سے ہی دعا قبول ہوتی ہے، ایک حدیث میں ہے کہ: (روئے زمین پر کوئی بھی مسلمان اللہ تعالی سے کچھ بھی دعا مانگے تو اللہ تعالی اسے وہی عطا کر دیتا ہے یا اس کے بدلے میں کوئی مصیبت ٹال دیتا ہے بشرطیکہ  کسی گناہ یا قطع رحمی کی دعا نہ کرے)، یہ بات سن کر ایک شخص نے کہا: پھر تو ہم بہت زیادہ دعائیں مانگیں گے! تو آپ ﷺ نے فرمایا: (اللہ تمھیں اس سے بھی زیادہ دے گا)ترمذی نے اسے حسن صحیح کہا ہے، نیز حاکم نے اسے ابو سعید رضی اللہ عنہ سے بیان کرتے ہوئے یہ بھی اضافہ نقل کیا ہے کہ: (یا اللہ تعالی اس کی دعا کو [آخرت کیلیے]ذخیرہ فرما لیتا ہے )

مسلمان کو قبولیتِ دعا کے اوقات تلاش کرنے چاہییں، چنانچہ رسول اللہ ﷺ سے عرض کیا گیا: "کون سی دعا سب سے زیادہ قبول ہوتی ہے؟" تو آپ ﷺ نے فرمایا: (رات کے آخری حصے میں اور فرض نمازوں کے آخر میں) ترمذی نے ابو امامہ رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہوئے حسن قرار دیا ہے۔

اور ایک حدیث میں ہے کہ: "ہمارا پروردگار رات کی آخری تہائی میں آسمان دنیا تک نازل ہو کر فرماتا ہے: "کوئی دعا کرنے والا ہے میں اس کی دعا قبول کروں، کوئی سوالی ہے میں اسے عطا کروں، کوئی بخشش چاہنے والا ہے میں اسے بخش دوں" بخاری و مسلم نے اسے ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے۔

اذان اور اقامت کے درمیان دعا رد نہیں کی جاتی، چنانچہ ایک حدیث میں ہے کہ: (اپنے رب کے قریب ترین بندہ سجدے  کی حالت میں ہوتا ہے، اس لیے سجدے میں کثرت سے دعائیں  کرو) مسلم نے اسے ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے۔

کعبہ کو دیکھتے ہوئے، بارش نازل ہوتے وقت، مشکل کے وقت، ختم قرآن کے بعد، صدقہ کے بعد بھی دعا قبول ہوتی ہے۔

ایسے شخص کی سعادت مندی اور کامیابی کے کیا ہی کہنے جس کا دل اللہ تعالی کی جانب متوجہ رہتا ہے، اسی سے دعائیں مانگتا ہے اور امید رکھتا ہے، اسی پر توکل و بھروسا رکھتا ہے اور مدد مانگتا ہے۔

اور وہ شخص کتنا ہی بد بخت اور شرک و کفر  میں مبتلا ہے جو مزاروں  اور قبر والوں سے مانگے، یا انبیائے کرام علیہم الصلاۃ و السلام سے مدد مانگے، یا اللہ تعالی کو چھوڑ کر اولیا کو پکارے، اپنی حاجت روائی اور فریاد رسی کیلیے فرشتوں  اور نبیوں سے درخواست کرے، حالانکہ انبیائے کرام لوگوں کو یہی دعوت دینے کیلیے آئے تھے صرف ایک اللہ کو پکارو، عبادت صرف اللہ کی کرو، ہمیں وہی عمل کرنے کی تلقین کی گئی ہے جو اولیا کرتے تھے نیز ان سے محبت کا حکم بھی دیا گیا ہے ، لیکن ان سے دعائیں مانگنا منع ہے، فرمانِ باری تعالی ہے: {وَأَنَّ الْمَسَاجِدَ لِلَّهِ فَلَا تَدْعُوا مَعَ اللَّهِ أَحَدًا} بیشک مساجد اللہ کیلیے ہیں اللہ کے ساتھ کسی کو مت پکارو[الجن : 18]

اسی طرح اللہ تعالی کا فرمان ہے: {قُلْ إِنَّمَا أَدْعُو رَبِّي وَلَا أُشْرِكُ بِهِ أَحَدًا} آپ کہہ دیں: میں صرف اپنے رب کو ہی پکارتا ہوں اور اس کیساتھ کسی کو شریک نہیں ٹھہراتا۔[الجن : 20]

غائب یا فوت شدگان کوئی بھی دعا کا جواب دینے کی سکت نہیں رکھتے، کیونکہ  یہ کام صرف اللہ تعالی کا ہی ہے، فرمانِ باری تعالی ہے: {لَهُ دَعْوَةُ الْحَقِّ وَالَّذِينَ يَدْعُونَ مِنْ دُونِهِ لَا يَسْتَجِيبُونَ لَهُمْ بِشَيْءٍ إِلَّا كَبَاسِطِ كَفَّيْهِ إِلَى الْمَاءِ لِيَبْلُغَ فَاهُ وَمَا هُوَ بِبَالِغِهِ وَمَا دُعَاءُ الْكَافِرِينَ إِلَّا فِي ضَلَالٍ} اسی کو پکارنا بر حق  ہے اور جو لوگ اس کے علاوہ دوسروں کو پکارتے ہیں وہ انھیں کچھ بھی جواب نہیں دے سکتے۔ انھیں پکارنا تو ایسا ہے جیسے کوئی شخص پانی کی طرف اپنے ہاتھ اس لئے پھیلائے کہ پانی اس کے منہ تک پہنچ جائے حالانکہ پانی کبھی اس کے منہ تک نہیں پہنچ سکتا۔ کافروں کی دعائیں صرف گمراہی میں ہیں ۔[الرعد : 14]

اسی طرح فرمانِ باری تعالی ہے: {وَمَنْ أَضَلُّ مِمَّنْ يَدْعُو مِنْ دُونِ اللَّهِ مَنْ لَا يَسْتَجِيبُ لَهُ إِلَى يَوْمِ الْقِيَامَةِ وَهُمْ عَنْ دُعَائِهِمْ غَافِلُونَ (5) وَإِذَا حُشِرَ النَّاسُ كَانُوا لَهُمْ أَعْدَاءً وَكَانُوا بِعِبَادَتِهِمْ كَافِرِينَ} اس شخص سے زیادہ گمراہ کون ہو سکتا ہے جو اللہ کے چھوڑ کر قیامت تک جواب نہ دینے والی ذات کو پکارے، بلکہ وہ ان کی پکار سے غافل بھی ہوں[05] اور جب لوگوں کو اکٹھا کیا جائے گا تو وہ ان کے دشمن بن جائیں گے اور وہ [معبودان باطلہ ]ان کی عبادت کا یکسر انکار کر دینگے[الأحقاف : 5 - 6]

اللہ تعالی نے اپنے افعال و تدابیر کے بارے میں خبر دیتے ہوئے فرمایا: {يُولِجُ اللَّيْلَ فِي النَّهَارِ وَيُولِجُ النَّهَارَ فِي اللَّيْلِ وَسَخَّرَ الشَّمْسَ وَالْقَمَرَ كُلٌّ يَجْرِي لِأَجَلٍ مُسَمًّى ذَلِكُمُ اللَّهُ رَبُّكُمْ لَهُ الْمُلْكُ وَالَّذِينَ تَدْعُونَ مِنْ دُونِهِ مَا يَمْلِكُونَ مِنْ قِطْمِيرٍ(13) إِنْ تَدْعُوهُمْ لَا يَسْمَعُوا دُعَاءَكُمْ وَلَوْ سَمِعُوا مَا اسْتَجَابُوا لَكُمْ وَيَوْمَ الْقِيَامَةِ يَكْفُرُونَ بِشِرْكِكُمْ وَلَا يُنَبِّئُكَ مِثْلُ خَبِيرٍ} وہ رات کو دن میں اور دن کو رات میں داخل کرتا ہے اور آفتاب و ماہتاب کو اسی نے مسخر کیا ،  ہر ایک میعاد معین پر چل رہا ہے،  یہی ہے اللہ  تم سب کا پالنے والا اسی کی سلطنت ہے، جنہیں تم اللہ کے سوا پکار رہے ہو وہ تو کھجور کی گٹھلی کے چھلکے کے بھی مالک نہیں [13] اگر تم انہیں پکارو وہ تمہاری پکار سنتے ہی نہیں  اور اگر [با لفرض] سن بھی لیں تو فریاد رسی نہیں کریں گے  بلکہ قیامت کے دن تمہارے شریک اس شرک کا صاف انکار کر جائیں گے ۔ آپ کو کوئی بھی حق تعالی جیسا خبردار خبریں نہ دے گا [فاطر : 13 - 14]

اللہ تعالی نے کسی سے بھی دعا مانگنے کی اجازت نہیں دی چاہے وہ کتنا ہی مقرب کیوں نہ ہو، فرمانِ باری تعالی ہے: {وَقَالَ الْمَسِيحُ يَا بَنِي إِسْرَائِيلَ اعْبُدُوا اللَّهَ رَبِّي وَرَبَّكُمْ إِنَّهُ مَنْ يُشْرِكْ بِاللَّهِ فَقَدْ حَرَّمَ اللَّهُ عَلَيْهِ الْجَنَّةَ وَمَأْوَاهُ النَّارُ وَمَا لِلظَّالِمِينَ مِنْ أَنْصَارٍ}  مسیح نے کہا تھا کہ: اے بنی اسرائیل اللہ ہی کی عبادت کرو جو میرا اور تمہارا سب کا رب ہے،  یقین مانو کہ جو شخص اللہ کے ساتھ شریک کرتا ہے اللہ تعالی نے اس پر جنت حرام کر دی ہے، اس کا ٹھکانا جہنم ہی ہے اور ظالموں کی مدد کرنے والا کوئی نہیں ہو گا ۔[المائدة : 72]

اسی طرح فرمایا: {وَلَا يَأْمُرَكُمْ أَنْ تَتَّخِذُوا الْمَلَائِكَةَ وَالنَّبِيِّينَ أَرْبَابًا أَيَأْمُرُكُمْ بِالْكُفْرِ بَعْدَ إِذْ أَنْتُمْ مُسْلِمُونَ} کسی کیلیے یہ ممکن نہیں کہ وہ فرشتوں اور نبیوں کو رب ماننے کا حکم دے، کیا وہ تمھیں مسلمان بننے کے بعد بھی کفر کا حکم دینا چاہتا ہے؟ [آل عمران : 80]

اور ایک حدیث میں ہے کہ: (جو شخص اس حالت میں فوت ہو کہ وہ غیر اللہ کو پکارتا تھا تو وہ جہنم میں جائے گا) بخاری نے اس حدیث کو ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے۔

مسلمان!

یہ اللہ کی کتاب اور رسول اللہ ﷺ کی احادیث تمہارے سامنے بیان کر رہی ہیں کہ  (دعا ہی عبادت ہے) اور دعا صرف اللہ تعالی سے مانگنی چاہیے، جو شخص اللہ تعالی کیساتھ کسی کو دعا میں شریک کرتا ہے تو وہ شرک اکبر میں ملوث مشرک ہے۔

گمراہی اور شرک میں کوئی کسی کی اندھی تقلید نہ کرے ؛ کیونکہ اولاد آدم میں شرک و کفر اندھی تقلید اور گمراہ لوگوں کی پیروی سے ہی پیدا ہوا، فرمانِ باری تعالی ہے: {أَذَلِكَ خَيْرٌ نُزُلًا أَمْ شَجَرَةُ الزَّقُّومِ (62) إِنَّا جَعَلْنَاهَا فِتْنَةً لِلظَّالِمِينَ (63) إِنَّهَا شَجَرَةٌ تَخْرُجُ فِي أَصْلِ الْجَحِيمِ (64) طَلْعُهَا كَأَنَّهُ رُءُوسُ الشَّيَاطِينِ (65) فَإِنَّهُمْ لَآكِلُونَ مِنْهَا فَمَالِئُونَ مِنْهَا الْبُطُونَ (66) ثُمَّ إِنَّ لَهُمْ عَلَيْهَا لَشَوْبًا مِنْ حَمِيمٍ (67) ثُمَّ إِنَّ مَرْجِعَهُمْ لَإِلَى الْجَحِيمِ (68) إِنَّهُمْ أَلْفَوْا آبَاءَهُمْ ضَالِّينَ (69) فَهُمْ عَلَى آثَارِهِمْ يُهْرَعُونَ}  کیا یہ مہمانی اچھی ہے یا [زقوم] کا درخت [62] جسے ہم نے ظالموں کے لئے ایک آزمائش بنا دیا [63] بیشک وہ درخت جہنم کی جڑ میں سے نکلتا ہے  [64] جس کے خوشے شیطانوں کے سروں جیسے ہوتے ہیں [65] وہ اسی کو کھا کر اپنے پیٹ بھریں گے [66] پھر اس پر گرم کھولتا ہوا پانی پلایا جائیگا [67] پھر انہیں دوزخ   کی طرف لوٹنا ہو گا [68] انہوں نے اپنے آبا و اجداد کو گمراہ ہی پایا [69] وہ انہی کے نشان قدم پر دوڑتے رہے   [الصافات : 62 - 70]

فرمانِ باری تعالی ہے: {اُدْعُوا رَبَّكُمْ تَضَرُّعًا وَخُفْيَةً إِنَّهُ لَا يُحِبُّ الْمُعْتَدِينَ [55] وَلَا تُفْسِدُوا فِي الْأَرْضِ بَعْدَ إِصْلَاحِهَا وَادْعُوهُ خَوْفًا وَطَمَعًا إِنَّ رَحْمَتَ اللَّهِ قَرِيبٌ مِنَ الْمُحْسِنِينَ} اپنے رب کو گڑگڑا کر اور خفیہ انداز میں پکارو، بیشک وہ زیادتی کرنے والوں کو پسند نہیں فرماتا[55] زمین میں خوشحالی کے بعد فساد بپا مت کرو، امید اور خوف کیساتھ اللہ تعالی کو ہی پکارو، بیشک اللہ تعالی کی رحمت احسان کرنیوالوں کے قریب ہے۔ [الأعراف : 55]

اللہ تعالی میرے اور آپ سب کیلیے قرآن کریم کو خیر و برکت والا بنائے، مجھے اور آپ سب کو اس کی آیات سے مستفید ہونے کی توفیق دے، اور ہمیں سید المرسلین  ﷺ کی سیرت و ٹھوس احکامات پر چلنے کی توفیق دے،  میں اپنی بات کو اسی پر ختم کرتے ہوئے اللہ سے اپنے اور تمام مسلمانوں کے گناہوں کی بخشش چاہتا ہوں، تم بھی اسی سے گناہوں کی بخشش مانگو ۔

دوسرا خطبہ

تمام تعریفیں  اللہ کیلیے ہیں وہی رحمن و رحیم ، عزیز و حکیم ہے، اس کے اچھے نام اور اعلی صفات ہیں، میں گواہی دیتا ہوں کہ اس کے علاوہ کوئی معبودِ بر حق نہیں وہ اکیلا ہے ، وہی بلند و بالا ہے، میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی اور سربراہ محمد ﷺ اس کے  بندے  اور چنیدہ رسول ہیں، یا اللہ! اپنے بندے اور رسول محمد ، انکی  آل ، اور متقی صحابہ کرام پر رحمت ، سلامتی اور برکتیں نازل فرما۔

حمد و صلاۃ کے بعد:

تقوی الہی اختیار کرو تو اللہ تعالی تمہارے اعمال کی اصلاح فرمائے گا، اور تمھیں حال و استقبال میں کامیاب ہونے والوں سے بنا دے گا۔

اللہ کے بندو!

اللہ کی جانب متوجہ رہو، ہمیشہ صرف اسی سے دعائیں مانگو، کیونکہ اس سے مانگنے والا  کبھی نا مراد نہیں ہوا، اس سے امید رکھنے والا کبھی محروم نہیں رہا۔

انسان کو ہر وقت نت نئی ضرورت کا سامنا ہوتا ہے بسا اوقات ایک ہی لمحے میں کئی ضروریات ہوتی ہیں، چنانچہ ہر انسان اپنے علم کے مطابق اللہ تعالی سے خیر مانگے، اور اپنے علم کے مطابق بری چیزوں سے پناہ چاہے۔

مانگنے کی سب سے بڑی چیز رضائے الہی اور جنت ہے، اور پناہ مانگنے کی سب سے بڑی چیز جہنم ہے۔

مسلمان کو جس چیز کی بھی ضرورت ہو اللہ تعالی سے اصرار کیساتھ مانگے ؛ کیونکہ اللہ تعالی غنی، کریم، حمید، اور عظیم سخی ہونے کیساتھ ساتھ قادر مطلق بھی ہے، حدیث قدسی میں اللہ تعالی کا فرمان ہے: (میرے بندو! اگر ابتدا سے لیکر انتہا تک، جن ہوں یا انسان سب کے سب ایک ہی میدان میں جمع ہو کر مجھ سے مانگنے لگیں تو میں ہر ایک کو اس کی ضرورت بھی دے دوں اس سے میرے خزانوں میں اتنی ہی کمی آئے گی جتنی سمندر میں سوئی ڈال کر نکالنے سے کمی آتی ہے) مسلم نے اسے ابو ذر رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے۔

ایک حدیث میں ہے کہ: (جو شخص اللہ تعالی سے نہ مانگے تو اللہ تعالی اس پر غضبناک ہوتا ہے)

مسلمان کیلیے مستحب ہے کہ وہ  نبی ﷺ سے منقول جامع ترین دعا اختیار کرے، جیسے کہ فرمانِ باری تعالی ہے: { رَبَّنَا آتِنَا فِي الدُّنْيَا حَسَنَةً وَفِي الْآخِرَةِ حَسَنَةً وَقِنَا عَذَابَ النَّارِ} ہمارے پروردگار ہمیں دنیا و آخرت میں بھلائی عطا فرما، اور ہمیں آگ کے عذاب سے بچا[البقرة : 201] آپ ﷺ عام طور یہی دعا کثرت سے فرماتے تھے۔

اسی طرح حدیث نبوی میں ہے کہ: (اَللَّهُمْ إِنِّي أَسْأَلُكَ الْجَنَّةَ وَمَا قُرِّبَ إِلَيْهَا مِنْ قَوْلٍ أَوْ عَمَلٍ ، وَأَعُوذُّ بِكَ مِنَ النَّارِ وَمَا قُرِّبَ إِلَيْهَا مِنْ قَوْلٍ أَوْ عَمَلٍ)[یا اللہ! میں تجھ سے جنت اور اس کے قریب کرنے والے قول و فعل کا سوال کرتا ہوں ، اور میں تجھ سے جہنم اور اس کے قریب کرنے والے ہر قول و عمل سے تیری پناہ چاہتا ہوں۔]

اللہ کے بندو!

 }إِنَّ اللَّهَ وَمَلَائِكَتَهُ يُصَلُّونَ عَلَى النَّبِيِّ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَيْهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِيمًا{ یقیناً اللہ اور اسکے فرشتے نبی پر درود بھیجتے ہیں، اے ایمان والو! تم بھی ان پر درود و سلام پڑھو[الأحزاب: 56]، اور آپ ﷺ کا فرمان ہے کہ: جو شخص مجھ پر ایک بار درود پڑھے گا اللہ تعالی اس پر دس رحمتیں نازل فرمائے گا۔

اس لئے سید الاولین و الآخرین اور امام المرسلین پر درود  و سلام پڑھو۔

اللهم صلِّ على محمدٍ وعلى آل محمدٍ، كما صلَّيتَ على إبراهيم وعلى آل إبراهيم، إنك حميدٌ مجيد، اللهم بارِك على محمدٍ وعلى آل محمدٍ، كما باركتَ على إبراهيم وعلى آل إبراهيم، إنك حميدٌ مجيد، وسلم تسليما كثيراً۔

یا اللہ ! تمام صحابہ کرام سے راضی ہو جا، یا اللہ! ہدایت یافتہ خلفائے راشدین ابو بکر، عمر، عثمان ، علی اور تمام صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین سے راضی ہو جا،  تابعین کرام اور قیامت تک انکے نقشِ قدم پر چلنے والے تمام لوگوں سے راضی ہو جا، یا اللہ ! انکے ساتھ ساتھ اپنی رحمت و کرم کے صدقے ہم سے بھی راضی ہو جا، یا ارحم الراحمین!

یا اللہ! ہم تجھ سے جلد یا دیر سے ملنے والی ہمہ قسم کی خیر کا سوال کرتے ہیں چاہے وہ خیر ہمارے علم میں ہے یا نہیں ، یا اللہ! ہم جلد یا دیر سے پہنچنے والے ہمہ قسم کے شر سے تیری پناہ چاہتے ہیں چاہے وہ شر ہمارے علم میں ہے یا نہیں ۔

یا اللہ! میں تجھ سے جنت اور اس کے قریب کرنے والے قول و فعل کا سوال کرتا ہوں ، اور میں تجھ سے جہنم اور اس کے قریب کرنے والے ہر قول و عمل سے تیری پناہ چاہتا ہوں۔

یا اللہ! تمام فوت شدگان کی مغفرت فرما، یا اللہ! فوت ہو جانے والے تمام فوت شدگان کی مغفرت فرما، یا اللہ! تمام مسلمان مرد و خواتین، مؤمن مرد و خواتین  کی بخشش فرما، زندہ اور فوت شدہ تمام کی مغفرت فرما، یا اللہ! فوت شدگان کی قبروں کو منور فرما،  یا اللہ! مسلمان مقروض لوگوں کے قرضے چکا دے، یا رب العالمین!

یا اللہ! تمام مسلمان بیماروں کو شفا یاب فرما، یا اللہ! تمام مسلمان بیماروں کو شفا یاب فرما، یا رب العالمین!

 یا اللہ! تمام مسلمانوں کے معاملات کی باگ ڈور سنبھال لے، اور ان کے حالات درست فرما دے، بیشک تو ہر چیز پر قادر ہے۔

یا اللہ! ظالموں پر اپنی پکڑ نازل فرما، جنہوں نے مسلمانوں پر تسلط قائم کر کے انہیں بے گھر کیا، یا رب العالمین!

یا اللہ! شام میں مسلمانوں پہ ظلم کرنے والوں پر اپنی پکڑ نازل فرما، یا اللہ! مسلمانوں کو ان کے شر سے محفوظ فرما، یا ذا الجلال و الاکرام! یا اللہ! مسلمانوں کو ان کے شر سے جلد از جلد محفوظ فرما، بیشک تو ہر چیز پر قادر ہے۔

یا اللہ! اپنے دین، قرآن اور سنت نبوی کا بول بالا فرما، یا ارحم الراحمین!

یا اللہ! ہمارے دلوں کو پاک صاف فرما، یا اللہ! ہمارے دلوں کو پاک صاف فرما، اور ہمارے گناہوں کو معاف فرما، یا اللہ! تمام معاملات میں ہمارا انجام بہتر فرما، ہمیں اپنی رحمت کے صدقے دنیاوی رسوائی اور آخرت کے عذاب سے محفوظ فرما،  یا ارحم الراحمین!

یا اللہ! ہمیں حق بات اچھی طرح سمجھا اور پھر اس پر عمل کرنے کی توفیق دے، یا اللہ! ہمیں باطل اچھی طرح دکھا اور پھر اس سے اجتناب کرنے کی توفیق دے،   اور باطل کے متعلق ہمارے دل میں کوئی جھول باقی نہ رکھ۔

یا اللہ! ہمیں اور ہماری اولاد کو شیطان ، شیطانی چیلوں اور شیطانی لشکروں سے محفوظ رکھ، یا اللہ! ہمیں شیطان اور شیطانی چیلوں اور شیطانی لشکروں سے محفوظ رکھ، یا رب العالمین!

یا اللہ! ہمیں ہمارے نفسانی اور برے اعمال کے شر سے محفوظ فرما، یا اللہ! ہمیں ہر شریر کے شر سے محفوظ فرما۔

یا اللہ! ہمارے ملک کو ہمہ قسم کے شر و نقصان سے محفوظ فرما، یا اللہ! ہمارے ملک کو ہمہ قسم کے شر و نقصان سے محفوظ فرما، یا اللہ! ہمیں ہمارے ملکوں اور علاقوں میں امن و امان عطا فرما، اور ہمارے حکمرانوں کی اصلاح فرما۔

یا اللہ! خادم حرمین شریفین کو اپنے پسندیدہ کام کرنے کی توفیق دے، یا اللہ! اُسکی تیری مرضی کے مطابق  رہنمائی  فرما، اور اسکے تمام اعمال اپنی رضا کیلیے قبول فرما، یا اللہ! انہیں صائب رائے اور عمل صالح عطا فرما، یا اللہ! ان کے  مشیروں کی اپنی مرضی کے مطابق  رہنمائی  فرما۔

یا اللہ! ہمیں بارش عطا فرما، یا اللہ! ہمیں برکت والی بارش عطا فرما، یا اللہ! رحمت والی بارش عطا فرما، یا اللہ! تباہی اور غرق کرنے والی بارش نہ ہو، یا اللہ! خیر و برکت والی بارش بنا اس میں نقصان اور تباہی مت بنا، یا رب العالمین! بیشک تو ہر چیز پر قادر ہے۔

یا اللہ! ہمیں دنیا و آخرت میں بھلائی عطا فرما، اور ہمیں جہنم کے عذاب سے محفوظ فرما۔

اللہ کے بندو!

}إِنَّ اللَّهَ يَأْمُرُ بِالْعَدْلِ وَالْإِحْسَانِ وَإِيتَاءِ ذِي الْقُرْبَى وَيَنْهَى عَنِ الْفَحْشَاءِ وَالْمُنْكَرِ وَالْبَغْيِ يَعِظُكُمْ لَعَلَّكُمْ تَذَكَّرُونَ (90) وَأَوْفُوا بِعَهْدِ اللَّهِ إِذَا عَاهَدْتُمْ وَلَا تَنْقُضُوا الْأَيْمَانَ بَعْدَ تَوْكِيدِهَا وَقَدْ جَعَلْتُمُ اللَّهَ عَلَيْكُمْ كَفِيلًا إِنَّ اللَّهَ يَعْلَمُ مَا تَفْعَلُونَ{ اللہ تعالی تمہیں عدل و احسان اور قریبی رشتہ داروں کو (مال) دینے کا حکم دیتا ہے، اور تمہیں فحاشی، برائی، اور سرکشی سے روکتا ہے ، اللہ تعالی تمہیں وعظ کرتا ہے تاکہ تم نصیحت پکڑو[90] اور اللہ تعالی سے کئے وعدوں کو پورا کرو، اور اللہ تعالی کو ضامن بنا کر اپنی قسموں کو مت توڑو، اللہ تعالی کو تمہارے اعمال کا بخوبی علم ہے [النحل: 90، 91]

اللہ عز  و جل کا تم ذکر کرو وہ تمہیں کبھی نہیں بھولے گا، اس کی نعمتوں پر شکر ادا کرو وہ تمہیں اور زیادہ عنایت کرے گا، اللہ کا ذکر بہت بڑی عبادت ہے، اور اللہ جانتا ہے جو تم کرتے ہو۔

Read 1706 times

جدید خطبات

خطبات

  • نیکی پر استقامت اور ان کی حفاظت
    نیکی پر استقامت اور ان کی حفاظت
    حمد و صلاۃ کے بعد: کتاب اللہ بہترین  کلام ہے، اور سیدنا محمد ﷺ  کا طریقہ سب سے بہترین طریقہ ہے، دین میں شامل کردہ خود ساختہ امور بد ترین امور ہیں، ہر بدعت گمراہی ہے اور ہر گمراہی جہنم میں لے جانے والی ۔ اللہ کے بندو میں اپنے آپ اور تمام سامعین کو تقوی الہی کی نصیحت کرتا ہوں، اللہ تعالی نے پہلے گزر جانے اور بعد میں آنے والے سب لوگوں کو  اسی کی نصیحت فرمائی ہے: {وَلَقَدْ وَصَّيْنَا الَّذِينَ أُوتُوا الْكِتَابَ مِنْ قَبْلِكُمْ وَإِيَّاكُمْ أَنِ اتَّقُوا اللَّهَ} اور یقیناً ہم نے تم سے پہلے کتاب دیئے جانے والے لوگوں کو اور تمہیں یہی نصیحت کی ہے کہ تقوی الہی اختیار کرو۔[النساء: 131] مسلم اقوام! وقت کا تیزی سے گزرنا عظیم نصیحت ہے، دنوں کا آ کر چلے جانا بہت بڑی تنبیہ ہے، {إِنَّ فِي اخْتِلَافِ اللَّيْلِ وَالنَّهَارِ وَمَا خَلَقَ اللَّهُ فِي السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ لَآيَاتٍ لِقَوْمٍ يَتَّقُونَ} بیشک رات اور دن کے آنے جانے  میں اور جو کچھ اللہ نے آسمانوں اور زمین میں پیدا کیا ہے ان سب میں متقی قوم کیلیے نشانیاں ہیں۔[يونس: 6] اللہ کے بندو! ہم نے چند دن پہلے  مبارک مہینے ،نیکیوں  اور برکتوں کی عظیم بہار کو الوداع کہا ہے،  یہ…
    in خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • نیکیوں کا تحفظ اور میڈیا کے لیے ہدایات
    نیکیوں کا تحفظ اور میڈیا کے لیے ہدایات
    ﷽ فضیلۃ  الشیخ ڈاکٹر جسٹس حسین بن عبد العزیز آل شیخ حفظہ اللہ نے 07-رمضان- 1438 کا خطبہ جمعہ مسجد نبوی میں بعنوان " نیکیوں کا تحفظ اور میڈیا کے لیے ہدایات" ارشاد فرمایا ، جس میں انہوں نے کہا کہ تھوڑے وقت میں زیادہ  نیکیاں سمیٹنا بہت اعلی ہدف  ہے اور ماہِ رمضان اس ہدف کی تکمیل کیلیے معاون ترین مہینہ ہے چنانچہ اس مہینے میں قیام اور صیام  کا اہتمام کر کے ہم اپنے سابقہ گناہ معاف کروا سکتے ہیں  اور دیگر نیکیاں بجا لا کر اپنے نامہ اعمال کو نیکیوں سے پر کر سکتے ہیں، انہوں نے یہ بھی کہا کہ نیکیاں کرنے کے بعد انہیں تحفظ دینا بھی انتہائی اہم کام ہے، بہت سے لوگ اس جانب توجہ نہیں دیتے اور اپنی محنت پر پانی پھیر دیتے ہیں، حقیقت یہ ہے کہ اپنی محنت دوسروں کے کھاتے میں ڈالنے والے ہی مفلس ہوتے ہیں جو کہ قیامت کے دن حقوق العباد کی پامالی کے صلے میں اپنی نیکیاں دوسروں میں تقسیم کروا بیٹھیں گے، لہذا اگر کسی سے کوئی غلطی ہو بھی جائے تو فوری معافی مانگ لیا کرے اسی میں نجات ہے۔ پھر انہوں نے کہا کہ روزے رکھتے ہوئے اصل ہدف یعنی حصول تقوی…
    in خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • عبادات کا مہینہ ماہ رمضان
    عبادات کا مہینہ ماہ رمضان
    بسم الله الرحمن الرحيم فضیلۃ الشیخ پروفیسر ڈاکٹر علی بن عبد الرحمن الحذیفی حفظہ اللہ نے 30 -شعبان-1438  کا خطبہ جمعہ  بعنوان " عبادات کا مہینہ ماہ رمضان" ارشاد فرمایا جس میں انہوں نے  کہا کہ انسان نیکی کرے یا بدی اس کا نفع یا نقصان صرف انسان کو ہی ہوتا ہے وہ اپنی بدی سے کسی اور کو نقصان نہیں پہنچاتا، چنانچہ ماہ رمضان کو اللہ تعالی نے خصوصی فضیلت بخشی  اور اس ماہ میں تمام تر عبادات یکجا فرما دیں ، اس مہینے میں نماز، روزہ، عمرے کی صورت میں حج اصغر، زکاۃ ، صدقات و خیرات اور دیگر نیکی کے کام سر انجام دئیے جاتے ہیں، روزے داروں کیلیے جنت میں خصوصی دروازہ ہے اور ہر نیکی کا بدلہ اس کی نوعیت کے مطابق دیا جائے گا بالکل اسی طرح گناہ کا بدلہ بھی اسی کے مطابق ہو گا، پھر انہوں نے کہا کہ: آپ ﷺ شعبان کے آخر میں رمضان کی خوشخبری دیتے تھے، نیز رمضان سے پہلے تمام گناہوں سے توبہ   اور حقوق العباد کی ادائیگی استقبالِ رمضان میں شامل ہے، نیز روزے کے دوران جس قدر مختلف نیکیاں قیام، صیام، صدقہ، خیرات، غریبوں کی مدد، کسی کا ہاتھ بٹانا وغیرہ کی جائیں تو ان…
    in خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • نعمتوں کو دوام بخشنے کا راز
    نعمتوں کو دوام بخشنے کا راز
    بسم الله الرحمن الرحيم فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر جسٹس صلاح  بن محمد البدیر حفظہ اللہ نے 16-شعبان- 1438  کا مسجد نبوی میں خطبہ جمعہ بعنوان "شکر،،، نعمتوں کو دوام بخشنے کا راز" ارشاد فرمایا، جس میں انہوں نے  کہا کہ شکر گزاری سے نعمتوں میں اضافہ اور دوام حاصل ہوتا ہے، کیونکہ اللہ تعالی اپنے وعدے کے مطابق شکر گزاروں کو مزید نعمتوں سے نوازتا ہے، انہوں نے کہا کہ نعمتوں کا صحیح استعمال  اور گناہوں سے دوری  دونوں کا نام شکر ہے، اگر اللہ کی نعمتوں پر تکبر اور گھمنڈ کیا جائے تو یہ صریح ناشکری ہے اور نعمتوں کے زائل ہونے کا پیش خیمہ ہے، کسی فاسق و فاجر کو نعمتیں حاصل ہوں تو یہ اللہ تعالی کی طرف سے ڈھیل ہوتی ہے اور اللہ تعالی ڈھیل کو اچانک ختم   فرماتا ہے، انہوں نے یہ بھی کہا کہ شرعی احکامات سے بچنے کیلیے حیلے بہانے تلاش کرنا فاسق لوگوں کا وتیرہ ہے، جبکہ مومن  کا اخلاق اس سے کہیں بلند ہوتا ہے، انہوں نے یہ بھی کہا کہ قناعت پسندی شکر گزاری کا سبب بنتا ہے، اور اگر کوئی شخص اللہ تعالی کی تقسیم پر راضی نہ ہو تو وہ ہمیشہ ذہنی تناؤ کا شکار رہتا ہے،  آخر میں …
    in خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • ماہِ رجب کی حرمت اور بداعمالیاں
    ماہِ رجب کی حرمت اور بداعمالیاں
    ﷽ پہلا خطبہ تمام تعریفیں اللہ تعالی کیلیے ہیں وہی دنوں اور مہینوں  کا دائرہ چلانے والا ہے، وہ سالوں اور برسوں کو قصہ پارینہ بنانے والا ہے، وہ تمام مخلوقات کو جمع فرمائے گا، جب تک دن، مہینے اور سال یکے بعد دیگرے آتے رہیں گے نیز باد صبا اور پچھمی ہوائیں چلتی رہیں  گی میں تمام معاملات پر اسی کا حمد خواں رہوں گا، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبودِ بر حق نہیں، اس کا کوئی شریک نہیں، اس نے ہمارے لیے دین مکمل کیا اور نعمتیں پوری فرمائیں اور ہمارے لیے دین اسلام پسند کیا، مبنی بر یقین یہ سچی گواہی   دلوں کو ٹھنڈ پہنچاتی ہے اور قبر میں بھی فائدہ دے گی، نیز جس دن صور پھونکا جائے گا تب ہمیں با وقار بنا دے گی، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ محمد ﷺ اس کے بندے اور رسول ہیں، آپ نے پیغام رسالت پہنچا دیا اور امانت ادا کر دی ،امت کی خیر خواہی فرمائی، اور موت تک راہِ الہی میں جہاد کرنے کا حق ادا کر دیا ۔ اللہ تعالی آپ پر ، آپ کی آل، صحابہ کرام اور ان کے نقشِ قدم پر چلنے والے تمام لوگوں…
    in خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم