بسم اللہ الرحمن الرحیم،الحمد للہ والصلوٰۃ والسلام علی من لا نبی بعدہ 
الثلاثاء, 12 آذار/مارس 2019 14:41

اعتدال اور فتوی نویسی کے ضوابط

مولف/مصنف/مقرر  فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر جسٹس صلاح بن محمد البدیر حفظہ اللہ ہ ،ترجمہ: شفقت الرحمن مغل

 شریعت اعتدال اور میانہ روی کا نام ہے، اللہ تعالی نے شرعی احکامات انسان کی کمزوری کو مد نظر رکھ کر مرتب فرمائے ہیں، متعدد آیات اور احادیث اس بات پر زور دیتی ہیں کہ اسلام آسانی والا دین ہے، لیکن آسانی سے مراد یہ ہرگز نہیں ہے کہ انسان من مانیاں کرنے لگے اور دل چاہتے انداز میں شرعی احکام کی تعبیر اور تعمیل کرے، بلکہ آسانی سے مراد یہ ہے کہ شرعی دلائل جس چیز کی رخصت دیتے ہیں ان پر عمل کیا جائے، پھر یہ سنگین غلطی ہے کہ شریعت میں موجود اعتدال اور میانہ روی کے نام پر ایسی گری ہوئی باتیں کی جائیں جن کا اسلام سے دور کا تعلق نہ ہو،  اس پر انہوں نے اہل علم کے اقوال ذکر کرتے ہوئے واضح کیا کہ فقہی مذاہب میں موجود شاذ اور اچنبھے اقوال کو اپنانا شریعت سے دوری ہے، اصل ضرورت اس بات کی ہے کہ کتاب و سنت کی روشنی میں بھر پور انداز سے عمل کرنے کی کوشش کی جائے، اور اسی کی دوسروں کو دعوت دیں، انہوں نے یہ بھی کہا کہ اگر نا اہل اور مقاصد شریعت سے نابلد افراد دنیاوی مفادات کی خاطر فتوی نویسی پر تل جائیں تو یہ اسلام کیلیے انتہائی نقصان دہ امر ہے، ان کی وجہ سے  بڑے بڑے فتنے بپا ہوتے ہیں، اور ان میں سے کچھ ایسے بھی ہوتے ہیں جو اپنی دنیا کی خاطر آخرت خراب نہیں کرتے بلکہ کسی کی دنیا کیلیے اپنی آخرت اجاڑ بیٹھتے ہیں، ایسے لوگوں کو روزِ قیامت کا دن اپنی نگاہوں کے سامنے رکھنا چاہیے جب انسان کے تمام بھید کھولے جائیں گے اور تمام تر کارستانیاں سب کے سامنے رکھی جائیں گی، فتوی نویسی میں جلد بازی کی مذمت میں انہوں نے اہل علم کے اقوال ذکر کئے، نیز انہوں نے کہا کہ ایسی فتوی نویسی کو اللہ تعالی   اپنی ذات پر تہمت اور جھوٹ قرار دیا ہے،۔

پہلا خطبہ:

تمام تعریفیں اللہ تعالی کے لیے ہیں جس نے مومنوں کو روشن بصیرت عطا کی، مکلف بندوں کیلیے حلال اور حرام واضح فرمایا، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی حقیقی معبود نہیں وہ یکتا ہے اس کا کوئی شریک، معاون اور مدد گار نہیں، اور یہ بھی گواہی دیتا ہوں  کہ ہمارے نبی سیدنا محمد اس کے بندے اور رسول ہیں ، آپ نے راہ چلتے افراد کیلیے احکامات واضح  اور راستے کی نشانیاں مقرر فرمائیں، اللہ تعالی آپ پر ، آپ کی اولاد اور صحابہ کرام  پر رحمتیں برکتیں اور سلامتی  نازل فرمائے۔

حمد و صلاۃ کے بعد:

مسلمانو! تقوی الہی اپناؤ ؛ کیونکہ سانسیں گنی جا چکی ہیں، اعمال کی کڑی نگرانی جاری ہے:

وَالْمَرْءُ يُذْكَرُ بِالْجَمَائِلِ بَعْدَهُ

فَارْفَعْ لِذِكْرِكَ بِالْجَمِيْلِ بِنَاءَ

انسان کو اس کی خوبیوں کے ذریعے یاد کیا جاتا ہے، اس لیے اپنے اچھے تذکرے کی عمارت  کو بلندیوں تک لے جا

وَاعْلَمْ بِأَنَّكَ سَوْفَ تَذْكُرُ مَرَّةً

فَيُقَالُ أَحْسَنَ أَوْ يُقَالُ أَسَاءَ

یہ ذہن نشین کر لو! یقیناً تمہارا کبھی نہ کبھی ذکر ضرور ہو گا، اس وقت کہا جائے گا: فلاں بہت اچھا تھا یا کہا جائے گا کہ وہ برا تھا!

اس لیے اپنی زبان کو لگام دو، صرف تشنگی دور کرنے والی نصیحت، یا حکمت بھری بات، یا جامع خیر خواہی یا اچھا کلام ہی زبان سے نکالو، {يَاأَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ وَقُولُوا قَوْلًا سَدِيدًا (70) يُصْلِحْ لَكُمْ أَعْمَالَكُمْ وَيَغْفِرْ لَكُمْ ذُنُوبَكُمْ وَمَنْ يُطِعِ اللَّهَ وَرَسُولَهُ فَقَدْ فَازَ فَوْزًا عَظِيمًا}اے ایمان والو، اللہ سے ڈرو اور ہمیشہ راست گوئی سے کام لو [70] اللہ تعالی تمہارے معاملات سنوار دے گا اور تمہارے گناہ معاف کر دے گا، اور جو شخص بھی اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرے تو وہ بہت بڑی کامیابی پا گیا۔ [الأحزاب: 70، 71]

مسلمانو!

شریعت اعتدال اور میانہ روی لے کر آئی ہے، اس کی دلیل یہ ہے کہ شریعت کے احکام میں آسانی، وسعت اور کشادگی  ہے، پھر مکلف افراد سے تنگی کو دور رکھا گیا ہے، اللہ تعالی کا فرمان ہے: {وَمَا جَعَلَ عَلَيْكُمْ فِي الدِّينِ مِنْ حَرَجٍ}اور اس نے تم پر دین میں کوئی تنگی نہیں بنائی۔ [الحج: 78]

ایک اور مقام پر فرمایا: {يُرِيدُ اللَّهُ أَنْ يُخَفِّفَ عَنْكُمْ وَخُلِقَ الْإِنْسَانُ ضَعِيفًا} اللہ تعالی چاہتا ہے کہ تم پر نرمی کرے، اور انسان کو کمزور پیدا کیا گیا ہے۔[النساء: 28] یعنی مطلب یہ ہے کہ: اللہ تعالی تم پر اپنے شرعی احکامات، اوامر اور نواہی  میں اس حد تک نرمی کرتا ہے جس کی تم استطاعت رکھتے ہو؛ {وَخُلِقَ الْإِنْسَانُ ضَعِيفًا}اور انسان کو کمزور پیدا کیا گیا ہے۔ [النساء: 28] چنانچہ انسان کی کمزوری  اور ناتوانی کی بنا پر  نرمی اور آسانی  انسان کیلیے مناسب ہے۔

سیدنا ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (بے شک دین آسان ہے اور جو شخص دین میں سختی اختیار کرے گا تو دین اس پر غالب آ جائے گا [یعنی اس کی سختی نہ چل سکے گی ] لہذا ہر ممکنہ حد تک صحیح انداز سے عمل کرو اور خوش ہو جاؤ [ کہ اس طرز عمل سے تم کو دارین کے فوائد حاصل ہوں گے ] اور صبح ،دوپہر، شام اور کسی قدر رات میں [ عبادت سے ] مدد حاصل کرو) متفق علیہ

رسول اللہ ﷺ کا فرمان ہے: (بیشک تم ایسی امت ہو جس کیلیے آسانی اختیار کی گئی ہے) مسند احمد

اور ایک روایت میں ہے: (بیشک تمہاری بہترین دینداری وہ ہے جو آسانی سے ہو، بیشک تمہاری بہترین دینداری وہ ہے جو آسانی سے ہو) مسند احمد

انس بن مالک رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (آسانی کرو، سختی مت کرو، اطمینان  پھیلاؤ متنفر مت کرو) بخاری ، مسلم

بخاری اور مسلم کی ہی ایک روایت میں ہے کہ: "رسول اللہ ﷺ نے معاذ اور ابو موسی رضی اللہ عنہما کو یمن کا گورنر بنا کر بھیجتے ہوئے فرمایا:"(خوش  کرنا متنفر مت کرنا، آسانی کرنا سختی مت کرنا، ایک دوسرے کی بات ماننا آپس میں مت جھگڑنا)

آپ ﷺ کا فرمان ہے کہ: (لیکن مجھے دین حنیف اور کشادگی والے دین کے ساتھ بھیجا گیا ہے) احمد

وَمِنْ قَوَاعِدِ شَرْعِنَا التَّيْسِيْرُ

فِيْ كُلِّ أَمْرٍ نَابَهُ تَعْسِيْرُ

جس معاملے میں بھی مشکل در پیش ہو تو وہاں آسانی ہماری شریعت کے قواعد میں سے ہے۔

لیکن یہاں آسانی سے مراد ہرگز یہ  نہیں ہے کہ: فقہی مذاہب  اور علمائے کرام کے موقف میں سے رخصتوں کو تلاش کر کے آسان ترین موقف پر عمل کیا جائے، بلکہ یہاں آسانی سے مراد شرعی رخصتیں مراد ہیں جن کے بارے میں شرعی دلائل  موجود ہیں اور اہل عذر افراد مثلاً: مریض، مسافر ، یا چھوٹے بچے کیلیے فرائض اور واجبات میں رخصت دی گئی ہے۔

ابو حمزہ کہتے ہیں کہ : "میں نے ابن عباس رضی اللہ عنہما سے سفر میں روزہ رکھنے کے متعلق پوچھا تو انہوں نے کہا: "آسانی اور مشکل دو چیزیں ہیں، تو اللہ تعالی کی طرف سے دی گئی آسانی پر عمل کرو""

قتادہ رحمہ اللہ فرمانِ باری تعالی : {يُرِيدُ اللَّهُ بِكُمُ الْيُسْرَ وَلَا يُرِيدُ بِكُمُ الْعُسْرَ} اللہ تعالی تمہارے لیے آسانی چاہتا ہے وہ تمہارے لیے مشکل نہیں چاہتا ۔[البقرة: 185] کے بارے میں کہتے ہیں: "تو تم وہی اختیار کرو جو اللہ تعالی تمہارے لیے چاہتا ہے"

اسی طرح یعلی بن امیہ کہتے ہیں کہ : "میں نے عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے کہا: {فَلَيْسَ عَلَيْكُمْ جُنَاحٌ أَنْ تَقْصُرُوا مِنَ الصَّلَاةِ إِنْ خِفْتُمْ أَنْ يَفْتِنَكُمُ الَّذِينَ كَفَرُوا} اگر تم کافروں سے خدشے کی بنا پر نماز قصر کرو تو تم پر کوئی حرج نہیں ہے[النساء: 101] کہ اب تو لوگ پر امن ہیں؟[یعنی اب بھی نماز قصر کریں گے؟] تو عمر رضی اللہ عنہ نے کہ: "جس وجہ سے تم تعجب میں ہو مجھے بھی اسی پر تعجب ہوا تھا تو میں نے رسول اللہ ﷺ سے اس بابت دریافت کیا تو آپ ﷺ نے فرمایا: "(یہ اللہ تعالی کی طرف سے تم پر صدقہ ہے، تو اللہ تعالی کے اس صدقے کو قبول کرو)"مسلم

شریعت میں موجود اس قسم کے اعلی اور خوبصورت قطعی مفاہیم کا مطلب ہرگز یہ نہیں ہے کہ اللہ تعالی پر بہتان باندھتے ہوئے اعتدال اور میانہ روی کے نام پر ایسی باتیں شریعت میں شامل کر دی جائیں جو بے دلیل اور ہوس پرستی کے مطابق ہوں، اور بلا دلیل ہر چیز کی اجازت دینے والوں کے فتوے تلاش کئے جائیں۔

امام ذہبی رحمہ اللہ کہتے ہیں: "جو شخص فقہی مذاہب  کی رخصتوں اور مجتہدین کے مبنی بر خطا موقف کو اپنانے لگ جائے تو اس کی دینی حالت بہت پتلی ہو جاتی ہے"

ابن حزم رحمہ اللہ کہتے ہیں: "کچھ لوگوں کی دینی  حالت  اور تقوی کی اتنی پتلی حالت ہو چکی ہے کہ وہ اپنی خواہشات کی تکمیل کیلیے کسی کا بھی فتوی تلاش کرنے کیلیے تیار ہیں، چنانچہ وہ ہر اس شخص کا موقف اپناتے ہیں جس میں چھوٹ اور رخصت ہو، انہیں اس چیز کی غرض نہیں ہوتی کہ اللہ تعالی اور رسول اللہ ﷺ کے فرمان نے ہم پر کیا واجب کیا ہے۔"

امام احمد رحمہ اللہ کہتے ہیں:  "اگر کوئی شخص ہر رخصت والے فتوے پر عمل کرے تو وہ فاسق ہو جائے گا"

حسن بصری رحمہ اللہ کہتے ہیں: " قسم ہے اس ذات کی جس کے سوا کوئی حقیقی معبود نہیں، غلو اور نفرت کے درمیان سنت کا راستہ ہے، چنانچہ -اللہ تم پر رحم فرمائے-سنت طریقے پر قائم رہو۔اہل سنت کی ماضی میں تعداد کم تھی، اور آئندہ بھی تعداد میں کم ہوں گے۔ یہ لوگ عیش پرستوں کے ساتھ عیش پرستی میں مگن نہیں ہوتے، نہ بدعتی لوگوں کے ساتھ بدعات میں شرکت کرتے ہیں، وہ اللہ تعالی سے ملنے تک سنت طریقے پر گامزن رہتے ہیں ، تو تم بھی اللہ کے حکم سے انہی جیسے بن جاؤ"

علی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں: "بیشک حقیقی فقیہ وہ ہے جو لوگوں کو اللہ کی رحمت سے مایوس نہ کرے، انہیں اللہ کے عذاب سے بے خوف بھی نہ کرے، اللہ کی نافرمانی کیلیے اجازت نہ دے، اور قرآن مجید سے توجہ ہٹا کر کسی اور جانب مبذول نہ کرے، ایسی کوئی بھی عبادت خیر کا باعث نہیں ہے جس میں علم نہ ہو، اور نہ ہی ایسے کسی علم کا فائدہ ہے جس کا فہم نہ ہو"

یہ بڑی آزمائش ہے کہ ایسے لوگ فتوے صادر کرنے لگیں جو اہل علم کے ہاں نامعلوم یا غیر معروف ہیں، فتوی نویسی میں ان کا کوئی مقام و مرتبہ نہیں ہے، وہ در حقیقت  اس بات سے دھوکا کھا گئے کہ ان سے سوال پوچھنے والوں کی تعداد بہت زیادہ ہے، نیز جاہل ترین لوگ ان سے سوال کرنے میں پہل کرتے ہیں۔

امام مالک رحمہ اللہ کہتے ہیں: "مجھے ایک آدمی نے بتلایا کہ وہ ربیعہ بن ابو عبد الرحمن  کے پاس گیا تو ربیعہ رو رہے تھے، تو اس نے ربیعہ سے کہا:  آپ کیوں رو رہے ہیں؟ کیا آپ کو کوئی تکلیف لاحق ہے؟ تو ربیعہ نے کہ: نہیں ، تکلیف تو نہیں ہے، لیکن ایک جاہل شخص سے فتوی مانگا گیا ہے اور یہ اسلام میں بہت گھناؤنی حرکت ہے۔ ربیعہ نے مزید کہا کہ: یہاں فتوے دینے کچھ ایسے بھی ہیں جن کو چوروں سے پہلے جیل بھیجنے کا حق بنتا ہے۔"

جس وقت بھی مقاصد شریعہ اور نصوص شریعت سے جاہل لوگ جسارت کریں اور غیر یقینی فہم کے ذریعے تخمینے لگائیں، رسوخ العلم کے بغیر بڑا بننے کا دعوی کریں، مشتبہ امور میں تفریق کے بغیر چہ میگوئیاں کریں، فتوی نویسی کے میدان میں علم، اہلیت اور دلائل کے بغیر داخل ہوں تو دینی امور میں تحریف اور تبدیلی رونما ہو جاتی ہے، شرعی تعلیمات کے ساتھ ظلم و زیادتی سامنے آتی ہے۔

مسلمانو!

 نا اہل لوگوں کے شاذ فتوے اور ان کے غیر معقول موقف اسلام  کو منہدم کرنے اور دین کا حلیہ بگاڑنے کا باعث بنتے ہیں، ان سے فتنے اور فساد پھیلتے ہیں، جو کمزور عقل، علم اور دین کے مالک ہیں  وہ ان کی وجہ سے پریشانی میں ملوث ہو جاتے ہیں، انہیں حق باطل کی صورت میں اور باطل حق کی صورت میں نظر آتا ہے۔

یہ بات اللہ تعالی پر جھوٹ باندھنے اور اللہ کی شریعت  کے ساتھ اس کے بندوں پر  تہمت لگانے کے مترادف ہے کہ کچھ لوگ عارضی ،گھٹیا اور دنیاوی فوائد کی خاطر علم کے بغیر فتوے صادر کر رہے ہیں، بغیر کسی حجت کے اللہ کی جانب بات منسوب کرتے ہیں، ہوس پر مبنی اور من گھڑت فتوے صادر کر رہے ہیں اور صحیح دلیل سے متصادم رخصتوں پر عمل کرنے والے ہیں، منسوخ یا ضعیف دلائل پر مبنی شاذ اقوال اپناتے ہیں، ان کے فتووں سے پیدا ہونے والی خرابیوں اور اسلام سمیت مسلمانوں کے ہونے والے نقصان کا  ادراک معمولی سی بھی بصیرت رکھنے والا بھی رکھتا ہے، ایسا موقف اپناتے ہیں جو وہی شخص ہی کہہ سکتا ہے جس کا دل اللہ تعالی کی تعظیم، جلال اور تقوی سے خالی ہو، جو شخص دنیا کی محبت میں خالق کو چھوڑ کر مخلوق  سے تعلق بنانے کا رسیا ہو۔

کسی نے کیا خوب کہا ہے کہ: "بد بخت وہ شخص ہے جو اپنی آخرت کو دنیا کے بدلے فروخت کر دے، اور اس سے بھی بڑا بدبخت وہ ہے جو کسی کی دنیا کیلیے اپنی آخرت برباد کر لے"

کیا یہ لوگ اس دن کو یاد نہیں کرتے جب بڑوں بڑوں کے پیتے پانی ہو جائیں گے، جب اعضا اور جسم کا ہر حصہ گواہی دے گا، اس دن دلوں اور قبروں کے بھید کھولے جائیں گے، جب دھوکے بازوں کو علم ہو گا کہ وہ تو خود اپنے آپ کو دھوکا دیتے آئے ہیں، اور اپنے دین سے کھلواڑ کرتے رہے ہیں{وَمَا يَمْكُرُونَ إِلَّا بِأَنْفُسِهِمْ وَمَا يَشْعُرُونَ} وہ اپنے خلاف ہی مکر کر رہے ہیں، اور انہیں شعور نہیں ہے۔[الأنعام: 123]

{لِيَحْمِلُوا أَوْزَارَهُمْ كَامِلَةً يَوْمَ الْقِيَامَةِ وَمِنْ أَوْزَارِ الَّذِينَ يُضِلُّونَهُمْ بِغَيْرِ عِلْمٍ أَلَا سَاءَ مَا يَزِرُونَ}  تاکہ قیامت کے دن اپنے بوجھ تو پورے کے پورے اٹھائیں اور کچھ ان لوگوں کے بھی جنہیں وہ بغیر علم کے گمراہ کرتے رہے  دیکھو ! کیسا برا بوجھ ہے جو وہ اٹھائیں گے [النحل: 25]

یہ ایسے لوگ ہیں کہ علم سے کورے ، اور ان کا مطالعہ انتہائی محدود ہے، بے راہ روی میں مبتلا ہیں، یہ شریعت سے متصادم امور کا علی الاعلان اظہار کر رہے ہیں، اسلام کے نام پر انہوں نے ایسے کام کئے ہیں جن کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں۔

سحنون بن سعید رحمہ اللہ نے بالکل صحیح کہا ہے کہ: "فتوی لگانے میں جلد باز وہی ہوتا ہے جس کے پاس علم کم ہو، انسان کے پاس صرف ایک مسئلے کی معلومات ہوتی ہے  لیکن وہ سمجھتا ہے کہ مجھے ہر چیز کا علم ہے"

ایسے ہی ابن وہب رحمہ اللہ کہتے ہیں: "میں نے امام مالک رحمہ اللہ کو سنا کہ :فتوی دینے میں جلد بازی  بھی جہالت اور نابلد ہونے کی قسم ہے" امام مالک رحمہ اللہ ہی مزید کہتے ہیں: "میں نے اس وقت تک فتوی دینا شروع نہیں کیا جب تک میرے بارے میں ستر اہل علم نے فتوی نویسی کے اہل ہونے کی گواہی نہیں دی"

امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ  کہتے ہیں: " بندے کو اللہ تعالی سے ڈرنا چاہیے، اور دیکھے کہ اس کی زبان سے کیا نکل رہا ہے؛ کیونکہ اس سے پوچھا جائے گا"

کسی نے یہ بھی کہا ہے کہ: "تم میں سے کسی کو یہ کہتے ہوئے ڈرنا چاہیے کہ: "اللہ نے فلاں چیز حرام اور فلاں چیز حلال قرار دی ہے"، مبادا اللہ تعالی اسے کہہ دے: تم نے جھوٹ بولا میں نے فلاں کو حلال اور فلاں چیز کو حرام قرار نہیں دیا"

اللہ تعالی نے اس شخص کو خوب وعید سنائی ہے جو من مانی کرتے ہوئے اللہ کی حرام کردہ چیزوں کو حلال قرار دے، یا اللہ تعالی کی جانب سے حلال کردہ چیز کو حرام قرار دے،  چنانچہ فرمانِ باری تعالی ہے: {وَلَا تَقُولُوا لِمَا تَصِفُ أَلْسِنَتُكُمُ الْكَذِبَ هَذَا حَلَالٌ وَهَذَا حَرَامٌ لِتَفْتَرُوا عَلَى اللَّهِ الْكَذِبَ إِنَّ الَّذِينَ يَفْتَرُونَ عَلَى اللَّهِ الْكَذِبَ لَا يُفْلِحُونَ (116) مَتَاعٌ قَلِيلٌ وَلَهُمْ عَذَابٌ أَلِيمٌ}  اپنی زبانوں سے جھوٹ بولتے ہوئے یوں نہ کہو کہ: "یہ حلال ہے اور یہ حرام ہے " تا کہ تم اللہ پر جھوٹ افترا کرنے لگو۔ جو لوگ اللہ پر جھوٹ افترا کرتے ہیں وہ کبھی فلاح نہیں پاتے  [117] انہیں بہت معمولی فائدہ ملتا ہے اور ان کے لئے ہی دردناک عذاب ہے۔ [النحل: 116، 117]

میں اسی پر اکتفا کرتا ہوں اور اللہ تعالی سے مغفرت طلب کرتا ہوں تم بھی اسی سے مغفرت طلب کرو، بیشک وہ رجوع کرنے والوں کو بخشنے والا ہے۔

دوسرا خطبہ:

تمام تعریفیں اللہ کے لیے ہیں وہی ہمیں سکھاتا اور سمجھاتا ہے، میں گواہی دیتا ہوں  کہ اللہ کے سوا کوئی حقیقی معبود نہیں وہ یکتا ہے اس کا کوئی شریک نہیں، اور یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی محمد اللہ کے بندے اور رسول ہیں ، اللہ تعالی آپ پر، آپ آل، اور صحابہ کرام  سمیت روزِ قیامت تک ان کے طریقے پر چلنے والوں پر رحمتیں ،سلامتی، اور برکتیں نازل فرمائے۔

 حمدو صلاۃ کے بعد:

مسلمانو! تقوی الہی اختیار کرو، اور اسے اپنا نگہبان جانو، اسی کی اطاعت کرو، اور نا فرمانی مت کرو، {يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ وَكُونُوا مَعَ الصَّادِقِينَ}اے ایمان والو! تقوی الہی اختیار کرو، اور سچے لوگوں کے ساتھ رہو۔ [التوبہ : 119]

مسلمانو!

دین الہی غلو اور شدت کے درمیان  اعتدال کا نام ہے۔ غلو،  شدت اور افراط و تفریط یہ دو انتہائی آفتیں ہیں، یہ منحرف راستے اور کج روی ہیں، یہ مضبوط دین اور صراط مستقیم سے دوری کا باعث ہیں؛ اس لیے غلو اور شدت سے اجتناب کرو، چنانچہ عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ: (رسول اللہ ﷺ نے ہمارے لیے ایک لکیر کھینچی  اور پھر فرمایا: یہ اللہ کا راستہ ہے، پھر اس کے بعد اس لکیر کے دائیں بائیں بھی لکیریں کھینچیں، اور پھر فرمایا: یہ الگ الگ راستے ہیں، ہر ایک راستے پر شیطان بیٹھا اس کی طرف بلا رہا ہے، پھر آپ نے یہ آیت پڑھی: {وَأَنَّ هَذَا صِرَاطِي مُسْتَقِيمًا فَاتَّبِعُوهُ وَلَا تَتَّبِعُوا السُّبُلَ فَتَفَرَّقَ بِكُمْ عَنْ سَبِيلِهِ}  اور بلاشبہ یہی میری سیدھی راہ ہے لہذا اسی پر چلتے جاؤ اور دوسری راہوں پر نہ چلو ورنہ وہ تمہیں اللہ کی راہ سے ہٹا کر جدا جدا کر دیں گی اللہ نے تمہیں انہی باتوں کا حکم دیا ہے شاید کہ تم (کجروی سے) بچ جاؤ [الأنعام: 153]) احمد

ابان بن ابو عیاش کہتے ہیں کہ ایک شخص نے ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے سوال کیا کہ: "صراط مستقیم کیا ہے؟ تو  انہوں نے کہا: ہمیں رسول اللہ ﷺ نے ایک سرے پر چھوڑا اور اس کا دوسرا سرا جنت میں ہے، اس کے دائیں بائیں تیز رو گھوڑے ہیں، اور وہاں پر لوگ ہیں جو وہاں سے گزرنے والوں کو بلاتے ہیں، تو جو بھی ان گھوڑوں کو پکڑ لے تو وہ گھوڑے اسے جہنم میں لے جاتے ہیں، اور جو شخص راستے پر ہی چلتا رہے تو وہ جنت میں پہنچ جائے گا ۔"

اور نواس بن سمعان انصاری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (اللہ تعالی نے صراط مستقیم کی مثال ذکر کی کہ: صراط مستقیم کے دونوں جانب دیواریں ہیں جن میں کھلے ہوئے دروازے ہیں  اور دروازوں پر پردے لٹکے ہوئے ہیں، اور راستے کے دروازے پر ایک بلانے والا پکار رہا ہے: لوگو! راستے میں سب کے سب داخل ہو جاؤ ، اور اِدھر اُدھر مت ہونا، پھر راستے کے اوپر ایک اور بلانے والا ہے، جب کوئی شخص ان دروازوں میں سے کسی دروازے کو کھولنے کی کوشش کرتا ہے تو وہ کہتا ہے: تمہاری بربادی ہو! اسے مت کھولو، اگر تم اس کو کھولو گے تو اس میں داخل ہو جاؤ گے۔ اس مثال میں راستہ اسلام ہے، لٹکے ہوئے پردے اللہ کی حدود ہیں، کھلے ہوئے دروازے اللہ کے حرام کردہ امور ہیں، اور اس راستے کے سرے پر پکارنے والا اللہ کا قرآن ہے، اور اوپر سے پکارنے والا ہر مسلمان کے دل میں موجود ضمیر ہے ) احمد، ترمذی

احمد الہادی، شفیع الوری ، نبی  ﷺ پر بار بار درود و سلام بھیجو، (جس نے ایک بار درود پڑھا اللہ تعالی اس کے بدلے میں اس پر  دس رحمتیں نازل فرمائے گا)

یا اللہ! اپنے بندے اور رسول محمد پر درود  و سلام نازل فرما،   تمام صحابہ کرام، اہل بیت اور تابعین و تبع تابعین سے راضی ہو جا، اور ان کے کیساتھ ساتھ ہم سے بھی راضی ہو جا، یا کریم! یا وہاب!

یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما، یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما، یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما، یا اللہ! شرک اور مشرکوں کو ذلیل و رسوا فرما،  یا اللہ! طاغوتوں، ظالموں اور قاتلوں کو  تباہ و برباد فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! جلد از جلد ہمارے شامی کمزور بھائیوں کی مشکلات وا فرما، یا اللہ! جلد از جلد ہمارے شامی کمزور بھائیوں کی مشکلات وا فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! ہمارے حکمران خادم حرمین شریفین   کو صرف انہی کاموں کی توفیق عطا فرما جن سے توں راضی ہوتا ہے اور جنہیں تو پسند فرماتا ہے، نیز اس کی نیکی اور تقوی پر مبنی کاموں کے لیے رہنمائی فرما، یا اللہ! انہیں اور ان کے ولی عہد کو  اسلام اور مسلمانوں  کی بہتری کیلیے اقدامات کرنے کی توفیق عطا فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! مسلمان بیماروں کو شفا یاب فرما، مشکل میں پھنسے لوگوں کی مشکلیں آسان فرما، قیدیوں کو رہائی عطا فرما، اور فوت شدگان  پر رحم فرما، اور ہم پر زیادتی کرنے والوں کے خلاف ہماری مدد فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! تمام مسلم ممالک کو خوشحالی، امن و سلامتی  اور استحکام عطا فرما،  یا رب العالمین!

یا اللہ! مسلم ممالک میں سے جنگوں اور جھگڑوں کا خاتمہ فرما دے، یا اللہ! فتنے اور اختلافات ختم فرما دے، یا رب العالمین!

یا اللہ! ہماری دعاؤں کو قبول فرما، یا اللہ! ہماری دعاؤں کو اپنی بارگاہ میں بلند فرما، یا کریم! یا رحیم! یا عظیم!

ملاحظہ کیا گیا 173 بار

جدید خطبات

خطبات

  • حقوق الوالدین
    حقوق الوالدین
    والدین کے حقوق ادا کرنے کی اہمیت بہت زیادہ ہے اور ان کی ادائیگی کا فائدہ بھی انسان کو ہی ہوتا ہے اور اگر کوئی کسی کی حق تلفی کرے تو وہ اپنا ہی نقصان کرتا ہے کسی کا کچھ نہیں بگاڑ سکتا، اور مظلوم کو قیامت کے دن پورے حقوق مل جائیں گے، حقوق العباد میں عظیم ترین والدین کا حق ہے، والدین اپنی اولاد کیلیے جنت میں داخلے کا باعث ہوتے ہیں،پہلا خطبہ:۔ تمام تعریفیں اللہ کیلئے ہیں، جس نے اپنے بندوں پر فضل کرتے ہوئے حقوق و واجبات کی تفصیلات سے انہیں آگاہ فرمایا، اور انکے لئے نیک اعمال پسندیدہ قرار دیتے ہوئے، گناہوں کو ناپسند قرار دیا، اور نیک لوگوں کیساتھ بھلائی کا وعدہ فرمایا۔ میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے علاوہ کوئی معبودِ بر حق نہیں وہ یکتا ہے ، وہی دعائیں قبول کرنے والا ہے، اور یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی سیدنا محمد اللہ کے بندے اور رسول ہیں، آپ کی معجزوں کے ذریعے تائید کی گئی، یا اللہ! اپنے بندے اور رسول محمد ، ان کی اولاد اور جہادو دلائل کے ذریعے دین کو غالب کرنے والے صحابہ کرام پر اپنی رحمتیں ، سلامتی اور برکتیں نازل فرما۔ حمد…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • اعتدال اور فتوی نویسی کے ضوابط
    اعتدال اور فتوی نویسی کے ضوابط
    ﷽  شریعت اعتدال اور میانہ روی کا نام ہے، اللہ تعالی نے شرعی احکامات انسان کی کمزوری کو مد نظر رکھ کر مرتب فرمائے ہیں، متعدد آیات اور احادیث اس بات پر زور دیتی ہیں کہ اسلام آسانی والا دین ہے، لیکن آسانی سے مراد یہ ہرگز نہیں ہے کہ انسان من مانیاں کرنے لگے اور دل چاہتے انداز میں شرعی احکام کی تعبیر اور تعمیل کرے، بلکہ آسانی سے مراد یہ ہے کہ شرعی دلائل جس چیز کی رخصت دیتے ہیں ان پر عمل کیا جائے، پھر یہ سنگین غلطی ہے کہ شریعت میں موجود اعتدال اور میانہ روی کے نام پر ایسی گری ہوئی باتیں کی جائیں جن کا اسلام سے دور کا تعلق نہ ہو،  اس پر انہوں نے اہل علم کے اقوال ذکر کرتے ہوئے واضح کیا کہ فقہی مذاہب میں موجود شاذ اور اچنبھے اقوال کو اپنانا شریعت سے دوری ہے، اصل ضرورت اس بات کی ہے کہ کتاب و سنت کی روشنی میں بھر پور انداز سے عمل کرنے کی کوشش کی جائے، اور اسی کی دوسروں کو دعوت دیں، انہوں نے یہ بھی کہا کہ اگر نا اہل اور مقاصد شریعت سے نابلد افراد دنیاوی مفادات کی خاطر فتوی نویسی پر تل جائیں…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • اسرا و معراج، فضائل و اسباق
    اسرا و معراج، فضائل و اسباق
    پہلا خطبہ: تمام تعریفیں اللہ کیلیے ہیں، اللہ تعالی کا فرمان ہے: {سُبْحَانَ الَّذِي أَسْرَى بِعَبْدِهِ لَيْلًا مِنَ الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ إِلَى الْمَسْجِدِ الْأَقْصَى} پاک ہے وہ ذات جس نے اپنے بندے کو رات کے کچھ حصے میں مسجد الحرام سے مسجد اقصی  کی سیر کروائی۔ [الإسراء: 1]، میں لا تعداد اور بے شمار نعمتوں پر اللہ کی حمد اور شکر بجا لاتا ہوں ، اور  گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبودِ بر حق نہیں وہ اکیلا ہے، اس کا کوئی شریک نہیں ، وہ بلند و بالا ہے،  میں یہ بھی  گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی سیدنا محمد اس کے بندے  اور رسول  ہیں، آپ کو معراج کے سفر میں آسمانوں کی  بلندیوں پر لے جایا گیا۔  اللہ تعالی آپ پر ، آپ کی آل  ،اور تمام صحابہ کرام    سمیت آپ کے تابعداروں پر رحمتیں  نازل فرمائے ۔ حمد و صلاۃ کے بعد:  میں اپنے آپ اور تمام سامعین کو تقوی الہی کی نصیحت کرتا ہوں، اللہ تعالی کا فرمان ہے: {سُبْحَانَ الَّذِي أَسْرَى بِعَبْدِهِ لَيْلًا مِنَ الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ إِلَى الْمَسْجِدِ الْأَقْصَى الَّذِي بَارَكْنَا حَوْلَهُ لِنُرِيَهُ مِنْ آيَاتِنَا} پاک ہے وہ ذات جس نے اپنے بندے کو رات کے کچھ حصے میں مسجد الحرام سے مسجد…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • آیت الکرسی کا مفہوم
    آیت الکرسی کا مفہوم
    ﷽ فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر عبد الباری بن عواض ثبیتی حفظہ اللہ نے مسجد نبوی میں 10 صفر 1440 کا خطبہ جمعہ " آیت الکرسی کا مفہوم اور افواہوں کے متعلق ہدایات" کے عنوان پر ارشاد فرمایا جس میں انہوں نے کہا کہ قرآن مجید میں عظیم ترین آیت ؛ آیت الکرسی ہے، اس آیت میں اللہ تعالی کے اسما و صفات کا جامعیت کے ساتھ ذکر ہے، سب سے پہلے اس آیت میں اللہ تعالی کی الوہیت کا اقرار، پھر ازل سے ابد تک قائم دائم رہنے کی صفت ذکر ہوئی، اللہ تعالی کو نیند آتی ہے اور نہ ہی اونگ، آسمان و زمین کی ہر چیز اسی کی بادشاہت میں شامل ہے، کوئی بھی اس کی اجازت کے بغیر سفارش نہیں کر سکتا، اور نبی ﷺ کی سفارش اہل توحید کے لیے سب سے پہلے میسر ہو گی، انہوں نے یہ بھی بتلایا کہ اس کائنات میں اللہ کے سوا کوئی علم غیب نہیں جانتا، اس کی کرسی آسمان و زمین سے بھی وسیع ہے، جس سے اللہ تعالی کی بے انتہا عظمت اور کبریائی کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے، اس لیے اللہ سے جب مانگیں تو وہ بھی بے حساب مانگیں، انہوں نے آخر میں یہ بھی…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • اعلی اخلاقی اقدار کی فضیلت اور اہمیت
    اعلی اخلاقی اقدار کی فضیلت اور اہمیت
    ﷽ فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر جسٹس حسین بن عبد العزیز آل شیخ حفظہ اللہ نے 13-رجب- 1439 کا خطبہ جمعہ مسجد نبوی میں بعنوان "اعلی اخلاقی اقدار کی فضیلت اور اہمیت" ارشاد فرمایا ، جس میں انہوں نے کہا کہ دنیا و آخرت میں کامیابی کیلیے حسن اخلاق کا کوئی ثانی نہیں، اسی لیے کتاب و سنت میں اچھا اخلاق اپنانے کی بہت زیادہ تاکید کی گئی ہے، نیز رسول اللہ ﷺ کی جن خوبیوں کا ذکر اللہ تعالی نے فرمایا ان میں حسن اخلاق سر فہرست ہے، آپ ﷺ نے خود فرمایا کہ مجھے اعلی اخلاقیات کی تکمیل کیلیے بھیجا گیا ہے، مومن شخص اعلی اخلاق کی بدولت نفل روزے اور راتوں کو قیام کرنے والے کا درجہ پا لیتا ہے، اچھے اخلاق کا مالک شخص جنت میں رسول اللہ ﷺ کے قریب ترین ہو گا، حسن اخلاق کی وجہ سے بڑی تعداد میں لوگ جنت جائیں گے، قیامت کے دن اخلاق سے بڑھ کر کوئی چیز وزنی نہیں ہو گی، ایک جگہ آپ ﷺ یہاں تک فرما دیا کہ: نیکی حسن اخلاق کا نام ہے، پھر انہوں نے بتلایا کہ حسن خلق کا مطلب یہ ہے کہ انسان کی زندگی شریعت کے مطابق ہو، دوسروں کی خدمت، جود و…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم