بسم اللہ الرحمن الرحیم،الحمد للہ والصلوٰۃ والسلام علی من لا نبی بعدہ 
الإثنين, 11 كانون1/ديسمبر 2017 14:07

سیدنا بلال رضی اللہ عنہ اور ہمارے حالات

مولف/مصنف/مقرر  ڈاکٹر عبد اللہ بن عبد الرحمن بعیجان ۔ ترجمہ شفقت الرحمن مغل
پہلا خطبہ

یقیناً تمام  تعریفیں اللہ کیلیے ہیں، ہم اس کی حمد بیان کرتے ہیں اور اسی سے مدد   طلب کرتے ہیں ، اپنے گناہوں کی بخشش بھی مانگتے ہیں، نیز نفسانی و بُرے اعمال کے شر سے اُسی کی پناہ چاہتے ہیں، جسے اللہ ہدایت عنایت کر دے اسے کوئی بھی گمراہ نہیں کر سکتا، اور جسے وہ گمراہ کر دے اس کا کوئی بھی رہنما نہیں بن سکتا، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی بھی معبودِ بر حق نہیں ، اور اس کا کوئی شریک نہیں، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں سیدنا محمد  -ﷺ-اللہ بندے اور اس کے رسول  ہیں ، آپ نے پیغام رسالت پہنچا دیا، امانت ادا کر دی  اور امت کی مکمل خیر خواہی فرمائی، نیز  راہِ حق میں کما حقہ جہاد کیا یہاں تک کہ آپ اس جہاں سے رخصت ہوگئے، اللہ تعالی آپ پر آپ کی آل، صحابہ کرام اور ان کے نقش قدم پر چلنے والوں پر روزِ قیامت تک ڈھیروں سلامتی اور رحمتیں نازل فرمائے۔

حمد و صلاۃ کے بعد:

سب سے سچا کلام قرآن مجید ہے، سب سے افضل ترین طرزِ زندگی جناب محمد ﷺ کا ہے، بد ترین امور  بدعات ہیں اور ہر بدعت گمراہی ہے، اور ہر گمراہی آگ میں لے جانے والی ہے،{يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ حَقَّ تُقَاتِهِ وَلَا تَمُوتُنَّ إِلَّا وَأَنْتُمْ مُسْلِمُونَ}  اے ایمان والو! اللہ سے ایسے ڈرو جیسے ڈرنے کا حق ہے اور تمہیں موت صرف اسلام کی حالت میں ہی آئے۔[آل عمران : 102]

اللہ کے بندو!

امت اسلامیہ آج جن فتنوں ، آزمائشوں، مصیبتوں اور مسائل سے  گزر رہی ہے، دشمن مسلمانوں پر مسلط ہیں؛ یہ در حقیقت  واضح فتح اور کامیابی  کیلیے امتحان   اور چھان پرکھ کا پیش خیمہ ہے، یہ اللہ کے حکم سے غلبے اور فتح کا پہلا  زینہ ہے، فرمانِ باری تعالی ہے: {مَا كَانَ اللَّهُ لِيَذَرَ الْمُؤْمِنِينَ عَلَى مَا أَنْتُمْ عَلَيْهِ حَتَّى يَمِيزَ الْخَبِيثَ مِنَ الطَّيِّبِ} جس حال میں تم ہو اسی پر اللہ ایمان والوں کو نہ چھوڑے گا جب تک کہ پاک اور ناپاک الگ الگ نہ کر دے۔ [آل عمران: 179]

اسی طرح فرمایا: {أَمْ حَسِبْتُمْ أَنْ تَدْخُلُوا الْجَنَّةَ وَلَمَّا يَأْتِكُمْ مَثَلُ الَّذِينَ خَلَوْا مِنْ قَبْلِكُمْ مَسَّتْهُمُ الْبَأْسَاءُ وَالضَّرَّاءُ وَزُلْزِلُوا حَتَّى يَقُولَ الرَّسُولُ وَالَّذِينَ آمَنُوا مَعَهُ مَتَى نَصْرُ اللَّهِ أَلَا إِنَّ نَصْرَ اللَّهِ قَرِيبٌ}  کیا تم یہ خیال کرتے ہو کہ یوں ہی جنت میں داخل ہو جاؤ گے! حالانکہ تمہیں ابھی وہ مصائب پیش ہی نہیں آئے جو تم سے پہلے ایمان لانے والوں کو پیش آئے تھے۔ ان پر اس قدر سختیاں اور مصیبتیں آئیں جنہوں نے ان کو ہلا کے رکھ دیا۔ حتی کہ خود رسول اور ان کے ساتھ ایمان لانے والے سب پکار اٹھے کہ اللہ کی مدد کب آئے گی ؟ سن لو ! اللہ کی مدد قریب ہے۔ [البقرة: 214]

مسلم اقوام!

زمانہ قدیم میں ایک شخص کو پکڑ کر لایا جاتا اور اسے زمین  میں گاڑ دیا جاتا تھا، پھر آرا لا کر اس کے سر پہ رکھ کے  اسے دو حصوں میں چیر دیا جاتا تھا؛ لیکن اس کے باوجود بھی وہ اپنے دین سے نہ پھرتا، لوہے کی کنگھیوں سے  اس کا گوشت ہڈیوں سے جدا کر دیا جاتا تھا، لیکن اس طرح وحشیانہ اور اذیت ناک سزائیں بھی اسے اس کے دین سے موڑنے میں کامیاب نہ ہوتیں۔

اللہ کی قسم! اللہ تعالی اس دین کو غالب کر کے چھوڑے گا؛ {وَلَيَنْصُرَنَّ اللَّهُ مَنْ يَنْصُرُهُ إِنَّ اللَّهَ لَقَوِيٌّ عَزِيزٌ} اور اللہ تعالی ضرور بہ ضرور ان کی مدد کرے گا جو اللہ کی مدد کریں، بیشک اللہ انتہائی طاقتور اور غالب ہے۔[الحج: 40]

اللہ کے بندو!

ابتدا میں  جن لوگوں نے اعلانیہ اسلام قبول کیا تھا ان کی تعداد صرف سات تھی: رسول اللہ ﷺ ، ابو بکر ، عمار، عمار کی والدہ سمیہ، صہیب، بلال اور مقداد رضی اللہ عنہم جمیعاً ۔ ان میں سے اللہ تعالی نے رسول اللہ ﷺ کو ان کے چچا ابو طالب  کی پشت پناہی عطا فرمائی، جبکہ ابو بکر رضی اللہ عنہ کا ان کے قبیلے نے  دفاع کیا، لیکن بقیہ لوگوں کو مشرکوں نے پکڑ کر سخت اور شدید ترین عذاب سے دو چار رکھا، ان میں سے بلال رضی اللہ عنہ کے علاوہ ہر ایک کی زبان سے ایسے کلمات جاری ہوئے جو مشرکین چاہتے تھے ، لیکن بلال رضی اللہ عنہ نے غیر مناسب کلمات نہ کہنے کی وجہ سے راہِ الہی میں بڑی تکلیفیں اٹھائیں، بلال رضی اللہ عنہ پر مشرکوں نے ظلم کی کوئی کسر نہ چھوڑی، مشرکین  نے انہیں خوب سزائیں اور تکلیفیں دیں کہ شاید بلال  اپنے دین کو چھوڑ دے، لیکن بلال رضی اللہ عنہ نے ان کی سزاؤں سے بھی بڑھ کر پامردی اور چٹان جیسی ثابت قدمی  کا ثبوت دیا، اس پر کافروں نے آپ کو مزید سزاؤں سے دو چار کیا، بلال رضی اللہ عنہ کا آقا امیہ بن خلف آپ کو مکے کی دوپہر کے وقت جھلساتی دھوپ میں  گھر سے نکالتا اور مکہ  کے سنگ ریزوں  پر کمر کے بل لٹا کر بلال رضی اللہ عنہ کے سینے پر بھاری پتھر رکھنے کا حکم دے دیتا اور کہتا: "توں موت تک اسی طرح سزا جھیلتا رہے گا، یا توں محمد پہ ایمان سے انکار کر دے" امیہ یہ بھی کہتا تھا کہ: "او ذلیل غلام! تیری وجہ سے ہم پر کیا نحوست آن پڑی ہے! اگر توں نے ہمارے معبودوں کا اچھے لفظوں میں تذکرہ نہ کیا تو میں تمہیں دیگر غلاموں کیلیے نشان عبرت بنا دوں گا" امیہ کی ان دھمکیوں پہ بلال رضی اللہ عنہ بڑی جرأت اور پامردی  سے کہتے ہیں: "میر ا رب اللہ ہے، وہ ایک ہے، وہ ایک ہے۔ اگر میرے علم میں تمہارے لیے اس سے بھی ناگوار کوئی  جملہ ہوتا تو میں وہ بھی کہہ دیتا"

جب جان سوزی اور اذیت ناکی اپنی انتہا کو پہنچی تو آسانی بھی آ گئی، چنانچہ ابو بکر رضی اللہ عنہ نے انہیں خرید کر رضائے الہی کیلیے آزاد کر دیا، آپ کے اسی عمل کے متعلق اللہ تعالی کا یہ فرمان نازل ہوا: {وَسَيُجَنَّبُهَا الْأَتْقَى (17) الَّذِي يُؤْتِي مَالَهُ يَتَزَكَّى (18) وَمَا لِأَحَدٍ عِنْدَهُ مِنْ نِعْمَةٍ تُجْزَى (19) إِلَّا ابْتِغَاءَ وَجْهِ رَبِّهِ الْأَعْلَى (20) وَلَسَوْفَ يَرْضَى}  اور جو بڑا پرہیز گار ہوگا اسے جہنم سے دور رکھا جائے گا  [17]جس نے پاک ہونے کیلیے اپنا مال دیا [18] اس پر کسی کا کوئی احسان نہ تھا جس کا وہ بدلہ چکاتا [19]وہ صرف اپنے بلند و بالا پروردگار کی رضا کیلیے  دیتا ہے[20] اور یقیناً عنقریب  وہ اس سے راضی ہو جائے گا۔[الليل: 17 - 21]

اس کے بعد دن گزرتے گئے اور رسول اللہ ﷺ  مسلمانوں سمیت مدینہ ہجرت کر جاتے ہیں اور بلال رضی اللہ عنہ بھی ہجرت کر کے مدینہ پہنچ جاتے ہیں تو  سیدنا بلال  اسلام کے مؤذن قرار پائے۔

پھر بلال رضی اللہ عنہ کچھ عرصے کے بعد رسول اللہ ﷺ کے ہمراہ معرکہ بدر میں شرکت کیلیے نکل پڑتے ہیں، دوسری جانب مشرکین  اپنے سرغنّوں کے ہمراہ  مسلمانوں سے لڑنے کیلیے مکہ سے نکلتے ہیں ان میں  امیہ بن خلف  اور ابو جہل بھی  شامل ہوتا ہے، مشرکین بڑے گھمنڈ  اور غرور  سے پیش قدمی کر رہے ہوتے ہیں کہ  ہمارا لشکر ایک ہزار جنگجوؤں پر مشتمل ہے، ان کے ساتھ ناچ گانے والیاں دف کی تال پر  مسلمانوں کی ہجو کر رہی ہوتی ہیں اور سب جنگجو کہہ رہے ہوتے ہیں: "اللہ کی قسم! ہم بدر  میں تین دن قیام کے بغیر واپس نہیں جائیں گے، ہم وہاں ٹھہر کر اونٹ نحر کریں گے، کھانے کھائیں گے، شراب نوشی کریں گے، ناچنے والیاں ہمارا دل بہلائیں گی، سارے عرب  میں ہمارا چرچا ہو گا، وہ ہمارے اس عظیم لشکر کی باتیں  کریں گے اور ہمیشہ ہم سے ڈر کر رہیں گے ، ان پر ہماری دھاک بیٹھ جائے گی"

دوسری جانب مسلمان تین سو دس سے کچھ اوپر ہوتے ہیں، ان میں گھڑ سوار صرف مقداد ہیں، اب میدانِ معرکہ سجا ہوا ہے اور اللہ کے فیصلے  ہونے والے ہیں کہ وہ اس دھرتی پہ کمزور سمجھے جانے والوں پر اللہ اپنا کرم فرمائے اور انہیں قیادت دے کر دھرتی کا والی وارث بنا دے۔

اور اسی دوران بلال کو بھی اپنا ظالم آقا امیہ بن خلف نظر آ جاتا ہے کہ جس نے بلال کو مکہ میں خوب اذیتیں دی تھیں، تو بلال بھی صفیں چیرتے ہوئے  اور شیر کی طرح دھاڑتے ہوئے  پکارتے ہیں: "کفر کا سرغنّہ  امیہ بن خلف! اگر وہ بچ  گیا تو میں  نہیں بچوں گا۔ کفر کا سرغنّہ  امیہ بن خلف! اگر وہ بچ  گیا تو میں  نہیں بچوں گا" تو اللہ تعالی نے امیہ کو بلال رضی اللہ عنہ  کے قابو میں دے دیا، اور بلال نے امیہ پہ چڑھ کر اسے قصۂ پارینہ اور ماضی کی داستان بنا دیا۔ تو اسی کے بارے میں سیدنا ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے فرمایا:

هَنِيْئًا زَادَكَ الرَّحْمَنُ عِزًّا

فَقَدْ أَدْرَكْتَ ثَأْرَكَ يَا بِلَالُ

اے بلال تمہیں مبارک ہو، رحمن تمہاری عزت میں اضافہ فرمائے، تم نے اپنا بدلہ لے لیا ہے۔

جبکہ اللہ کا دشمن ابو جہل  بھی بڑے تکبر، غرور اور گھمنڈ کے ساتھ جنگی اشعار پڑھتے ہوئے  آیا اور کہا:

مَا تَنْقِمُ الْحَرْبُ الْعَوَانُ مِنِّيْ

بَازِلُ عَامَيْنِ حَدِيْثٌ سِنِّي

تجربہ کار جنگجو مجھ سے اسی لیے کڑھتے ہیں کہ  میں انتہائی طاقتور کڑیل اور  جوان ہوں

لِمِثْلِ هَذَا وَلَدَتْنِيْ أُمِّيْ

اسی کیلیے مجھے میری ماں نے جنم دیا تھا۔

تو اللہ تعالی نے اسے بھی مدینے کے دو چھوٹے چھوٹے لڑکوں کے ہاتھوں  ذلیل کروایا ، یہ دونوں عفراء کے بیٹے تھے۔ اس پر ابو جہل حسرت سے کہنے لگا: "کاش  مجھے کاشت کاروں کے علاوہ کسی اور نے قتل کیا ہوتا، تو یہ زیادہ اچھا تھا اس سے میری شان میں تو کمی نہ آتی!! اور کوئی مجھے طعنہ نہ دے پاتا!!"

پھر ابن مسعود رضی اللہ عنہ آگے بڑھ کر ابو جہل  کی گردن پہ پاؤں رکھ کر کہتے ہیں: "اللہ نے تجھے ذلیل کروا ہی دیا، اللہ کے دشمن!" اس پر ابو جہل اپنی آخری ہچکی سے  پہلے ابن مسعود رضی اللہ عنہ پر جملہ کستے ہوئے کہتا ہے: "بکریوں کے چھیڑو! توں نے بہت گراں قدر  جگہ پہ پاؤں رکھ لیا ہے!"

پھر جب مکہ فتح ہو گیا اور بلال رضی اللہ عنہ  کعبہ کی چھت پہ چڑھ کر  کلمہ توحید  کی صدا بلند کرتے ہیں تو قریب ہی وہ جگہ بھی تھی جہاں بلال کو انہی کلمات کی وجہ سے جھلساتی دھوپ میں سزائیں دی جاتی تھیں ، پھر سب کے سامنے بہ بانگ دہل بلال یہ صدا لگاتے ہیں: "الله أكبر الله أكبر. أشهد أن لا إله إلا الله. أشهد أن محمدا رسول الله." بلال کے یہ بول سن کر بلال کے دشمنوں کا غصہ جوبن پہ آ جاتا ہے اور کچھ تو یہ کہنے پہ مجبور ہو جاتے ہیں: "اللہ نے میرے باپ پہ کرم فرمایا کہ بلال کے منہ سے یہ الفاظ سننے سے پہلے ہی وہ مر گیا "

کسی نے یہ بھی کہا: "کاش یہ وقت مجھے نہ دیکھنا پڑتا اور میں اس سے پہلے ہی مر گیا ہوتا!!"

مسلم اقوام!

بلال رضی اللہ عنہ کو اتنا بلند مقام و مرتبہ  اسلام میں بہت سی تکلیفوں ،آزمائشوں ، صبر اور جد و جہد کے بعد ہی کہیں جا کر ملا، {يَاأَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اصْبِرُوا وَصَابِرُوا وَرَابِطُوا وَاتَّقُوا اللَّهَ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ} اے ایمان والو! صبر کرو، ایک دوسرے کو صبر کی تلقین کرو اور مورچوں میں ڈٹے رہو، اور اللہ سے ڈرو تا کہ تم کامیاب ہو جاؤ۔ [آل عمران: 200]

اللہ تعالی میرے اور آپ کیلیے قرآن مجید کو بابرکت بنائے، مجھے اور آپ کو قرآنی آیات اور حکمت بھری نصیحتوں سے مستفید فرمائے، میں اسی پر اکتفا کرتا ہوں اور عظمت و جلال والے اللہ  سے اپنے اور سب مسلمانوں کیلیے گناہوں کی بخشش طلب کرتا ہوں، اس لیے آپ بھی اسی سے بخشش طلب کرو، بیشک وہ بخشنے والا ہے اور نہایت رحم کرنے والا ہے۔

 


دوسرا خطبہ

تمام تعریفیں اللہ کیلیے ہیں  ، وہ ہی حق کو غالب  اور عالی شان بنانے والا ہے، وہ باطل کو رسوا کر کے دھتکارنے والا ہے، اسی نے اپنے رسول کو ہدایت اور دینِ حق دے کر بھیجا تا کہ اس دین کو دیگر تمام ادیان پہ غالب کر دے، چاہے مشرکین کو ناگوار ہی کیوں نہ لگے۔ یا  اللہ !محمد -ﷺ-پر  اور آل محمد پر اسی طرح رحمتیں نازل فرما  جیسے توں نے ابراہیم  پر اور آل ابراہیم پہ رحمتیں نازل فرمائیں، بیشک تو ہی حمد کے لائق اور بزرگی والا ہے۔

اللہ کے بندو!

اللہ تعالی مہلت تو دیتا  ہے لیکن غفلت نہیں برتتا،  اللہ تعالی ظالم کو مہلت دئیے جاتا ہے لیکن جب پکڑتا ہے تو اسے خلاصی کا موقع نہیں دیتا {وَلَا يَحْسَبَنَّ الَّذِينَ كَفَرُوا أَنَّمَا نُمْلِي لَهُمْ خَيْرٌ لِأَنْفُسِهِمْ إِنَّمَا نُمْلِي لَهُمْ لِيَزْدَادُوا إِثْمًا وَلَهُمْ عَذَابٌ مُهِينٌ} کافر لوگ ہرگز یہ نہ سمجھ بیٹھیں کہ ہم جو انہیں ڈھیل  دے رہے ہیں، یہ ان کے حق میں بہتر ہے، ہم تو صرف اس لیے ڈھیل دیتے ہیں کہ جتنے زیادہ سے زیادہ گناہ کر سکتے ہیں کر لیں اور ان کے لیے رسوا کرنے والا عذاب ہوگا [آل عمران: 178]

چنانچہ مکہ میں مسلمانوں کو ابتدائے اسلام میں جو بھی تکالیف اور آزمائشیں آئیں  یہ سب ایک نئی نسل تیار کرنے کیلیے تھیں؛  تا کہ اللہ تعالی بعد میں انہی کو زمام کار تھمائے اور انہیں فاتح بنائے، نیز اچھے اور برے لوگوں میں فرق  کر دیا جائے۔

اور یہ مختصر سا دورانیہ تھا  کہ جس کے بعد اللہ تعالی نے مظلوم و مقہور لوگوں پر احسان فرمایا جنہیں زمین پر کمزور سمجھ لیا گیا  تھا  للہ تعالی نے انہیں حکمران بنا  دیا اور انہیں زمین کا وارث بنا کر  زمین کا کنٹرول انہی کو دے دیا۔

تو شرک و کفر کے سر غنّے اور گرو گھنٹال انہی مسلمانوں کے ہاتھوں ذبح ہونے لگے، بلکہ مسلمانوں میں سے بھی غلاموں کے ہاتھوں قتل ہوئے،  جیسے کہ بلال اور امیہ کا واقعہ ہے اور اسی طرح ابن مسعود اور ابو جہل ، اس طرح مسلمانوں کے کلیجے ٹھنڈے ہوئے اور انہوں نے اپنے بدلے بھی چکا دئیے؛ اور یہ حقیقت ہے کہ: {وَلَيَنْصُرَنَّ اللَّهُ مَنْ يَنْصُرُهُ إِنَّ اللَّهَ لَقَوِيٌّ عَزِيزٌ} اللہ تعالی ضرور بہ ضرور ان کی مدد کرتا ہے جو اللہ کی مدد کریں، بیشک اللہ انتہائی طاقتور اور غالب ہے۔ [الحج: 40]

اللہ کے بندو!

اللہ تعالی کے ہاں فضیلت اور مقام کا معیار عمل ہے، نسب یا عہدہ، یا مال و جاہ معیار نہیں ہے، لوگ بالکل اسی طرح برابر ہیں جیسے کنگھی  کے دندانے برابر ہوتے ہیں،  تم سب کے سب آدم سے پیدا ہوئے ہو اور آدم مٹی سے پیدا ہوا ہے، کسی بھی عربی کو  عجمی پہ تقوی کے بنا کوئی فضیلت نہیں، {يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِنَّا خَلَقْنَاكُمْ مِنْ ذَكَرٍ وَأُنْثَى وَجَعَلْنَاكُمْ شُعُوبًا وَقَبَائِلَ لِتَعَارَفُوا إِنَّ أَكْرَمَكُمْ عِنْدَ اللَّهِ أَتْقَاكُمْ} لوگو! ہم نے تمہیں ایک مرد اور عورت سے ہی پیدا کیا ہے، اور ہم نے تمہیں اقوام اور قبائل میں تعارف کیلیے بنایا، بیشک اللہ کے ہاں تم میں سے معزز وہی ہے جو سب سے زیادہ متقی ہے۔[الحجرات: 13]

لَعَمْرُكَ مَا الْإِنْسَانُ إِلَّا بِدِيْنِهِ

فَلَا تَتْرُكِ التَّقْوَى اِتَّكَالًا عَلَى النَّسَبِ

تجھے عمر دینے والے کی قسم! انسان دین کے بنا کچھ نہیں، اس لیے نسب پر تکیہ کر کے تقوی کا دامن مت چھوڑو

فَقَدْ رَفَعَ الْإِسْلَامُ سَلْمَانَ فَارِسٍ

وَقَدْ وَقَعَ الشِّرْكُ النَّسِيْبُ أَبَا لَهَبٍ

کیونکہ اسلام نے سلمان فارسی کو [تقوی کی بنا  پر ہی] بلند فرمایا، اور شرک نے بلند نسب والے ابو لہب کو گرا دیا

کتنے ہی ایسے غیر معروف متقی لوگ ہیں جن کی کوئی پرواہ نہیں کرتا انہیں دروازوں سے دھتکار دیا جاتا ہے، حالانکہ اللہ تعالی اور اس کے درمیان کوئی پردہ نہیں ہوتا، اگر وہ اللہ تعالی پر قسم ڈال دے تو اللہ تعالی اس کی قسم پوری فرما دے۔

ایک بار سیدنا ابو ذر رضی اللہ عنہ نے بلال رضی اللہ عنہ کو نا مناسب الفاظ میں بلاتے ہوئے کہا: "کالی کے بیٹے!" تو رسول اللہ ﷺ کو یہ سن کر غصہ آ گیا اور فرمایا: (ابو ذر! تم نے اسے اس کی ماں کا طعنہ دیا!! تم میں جاہلیت پائی جاتی ہے)

نیز رسول اللہ ﷺ نے سیدنا بلال رضی اللہ عنہ کو جنت کی خوش خبری بھی دی اور فرمایا: (بلال! مجھے اپنے اس عمل کے بارے میں تو بتلاؤ جس کی بدولت تمہیں [حصولِ جنت کی ]بہت زیادہ امید ہو؛ کیونکہ میں نے تمہارے جوتوں کی آواز جنت میں سنی ہے)

مسلم اقوام!

مشرکین کو اس وقت بہت تکلیف ہوئی جب انہوں نے کعبہ کی چھت سے بلال رضی اللہ عنہ کی آواز میں اذان سنی، ایک طرف بلال کی آواز مشرکوں کو ناگوار گزرتی تھی تو دوسری جانب مسلمانوں کے دلوں کو بھی موہ لیتی تھی، مسلمان بلال رضی اللہ عنہ کی اذان سننے کے مشتاق رہتے تھے، چنانچہ جب بلال رضی اللہ عنہ رسول اللہ ﷺ کے رخصت ہو جانے کے بعد اذان دیتے تو اپنے جذبات بے قابو کر بیٹھتے ، اور پھوٹ پھوٹ کر  رو دیتے، آپ پر غشی طاری ہو جاتی اور لوگوں  کو بھی جذباتی کر دیتے تھے، بلکہ رسول اللہ ﷺ کی یاد میں پورا مدینہ ہی گونج اٹھتا تھا۔

ایک بار نبی ﷺ کی وفات کے بعد سحری کے وقت بلال نے اذان دینے کیلیے اسی مسجد نبوی کی چھت پر چڑھے اور جب انہوں نے " الله أكبر الله أكبر" ہی کہا تو پورا مدینہ لوگوں کی آواز سے گونج اٹھا، پھر جب آپ نے اذان میں: "أشهد أن لا إله إلا الله" کہا تو پورے شہر سے آواز میں مزید گونج پیدا ہوئی ، پھر جب آپ نے کہا:"أشهد أن محمدا رسول الله " تو  لوگ گھروں سے نکل کھڑے ہوئے۔ اس دن سے زیادہ کسی بھی دن میں مرد و زن کو روتے ہوئے نہیں دیکھا گیا۔

اسی طرح جب عمر رضی اللہ عنہ شام تشریف لائے اور بیت المقدس فتح ہو گیا، تو آپ نے بلال رضی اللہ عنہ کو اذان دینے کا حکم دیا، اس پر بلال کہنے لگے: "امیر المؤمنین! میں نے ارادہ کیا ہے کہ رسول اللہ ﷺ کے بعد کسی کیلیے اذان نہیں دوں گا، لیکن چونکہ آپ نے مجھے حکم دیا ہے تو صرف اس ایک نماز کیلیے اذان دوں گا، پھر جب بلال نے اذان دی اور صحابہ کرام نے بلال رضی اللہ عنہ کی اذان سنی تو  پھوٹ پھوٹ کر رو دئیے"

کیونکہ بلال نے انہیں ان کے حبیب اور ان کی آنکھوں کی ٹھنڈک یاد دلوا دی تھی، اسی یاد نے ان کے ایمان  میں ہیجان پیدا کر دیا تھا ۔ چونکہ آپ ﷺ ہی ان صحابہ کرام کی نجات کا باعث بنے تھے اس لیے آپ سے محبت بھی دلی تھی، ان کا قلبی لگاؤ آپ ﷺ سے تھا، ان کے جذبات آپ کے تذکرے کے اسیر تھے، آپ کی محبت سودائے قلب میں شامل ہو کر  دلوں پر براجمان تھی۔

نَبِيُّ صِدْقٍ هَدَتْ أَنْوَارُ غُرَّتِهِ

بَعْدَ الْعَمَى لِلْهُدَى مَنْ كَانَ عِمِّيْتاً

سچے نبی  کی پیشانی کی روشنی  نے بھٹکے ہوئے لوگوں کو گمراہی کے بعد راہ ہدایت دکھائی

وَأَصْبَحَتْ سُبُلُ الدِّيْنِ الْحَنِيْفِ بِهِ

عَوَامِرًا بَعْدَ أَنْ كَانَتْ أَمَارِيْتَا

آپ کی وجہ سے دین حنیف کے راستے چٹیل اور ویران ہونے کے بعد آباد ہو گئے

أَحْيَا بِهِ اللهُ قَوْمًا قَامَ سَعْدُهُمُوْ

كَمَا أَمَاتَ بِهَ قَوْمًا طَوَاغِيْتاً

آپ کے ذریعے اللہ تعالی نے اقوام کو خوشحال فرمایا جیسے کہ آپ کے ذریعے طاغوتی اقوام کا خاتمہ فرمایا

اتنی گہری محبت پر انہیں ملامت نہیں کی جا سکتی؛ کیونکہ  یہاں تو کھجور کا درخت بھی آپ کی محبت میں سسکیاں لے کر رو پڑا تھا، آپ ﷺ سے محبت اور اظہار مودت کیلیے احد جیسا  پہاڑ  بھی اپنے جذبات کی ترجمانی کیلیے جھوم اٹھا تھا، یا اللہ! ہمیں بھی آپ ﷺ کی اتنی محبت عطا فرما، یا اللہ! ہمیں بھی آپ ﷺ کی اتنی محبت عطا فرما، یا اللہ! ہمیں بھی آپ کا اطاعت گزار بنا، اور ہمیں آپ ہی کے گروہ میں زندہ کر کے اٹھانا، اور ہمیں آپ کی شفاعت نصیب فرمانا۔

مسلم اقوام!

صبر آسودگی کی کنجی ہے، جنت کو ناگوار چیزوں سے گھیر دیا گیا ہے، جبکہ جہنم کو شہوتوں سے گھیر دیا گیا ہے۔

اللہ تعالی اپنے دین کی ضرورت مدد فرمائے گا جیسے اللہ تعالی نے مکہ میں کمزور لوگوں کی مدد فرمائی تھی، جس طرح اللہ تعالی نے فتح مکہ سے پہلے اور بعد میں  اپنے اولیا کی مدد فرمائی، اور پھر{وَيَوْمَئِذٍ يَفْرَحُ الْمُؤْمِنُونَ (4) بِنَصْرِ اللَّهِ يَنْصُرُ مَنْ يَشَاءُ وَهُوَ الْعَزِيزُ الرَّحِيمُ [5] وَعْدَ اللَّهِ لَا يُخْلِفُ اللَّهُ وَعْدَهُ وَلَكِنَّ أَكْثَرَ النَّاسِ لَا يَعْلَمُونَ} اس دن مومن خوش ہو جائیں گے [4] اللہ کی مدد سے، اللہ جس کی چاہتا ہے مدد کرتا ہے اور وہی سب پر غالب، نہایت رحم والا ہے[5] یہ اللہ کا وعدہ ہے ، اور اللہ اپنے وعدے کی خلاف ورزی نہیں فرماتا، لیکن بہت سے لوگ جانتے ہی نہیں ہیں۔ [الروم: 4-6]

یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما۔ یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما۔ یا اللہ! اپنے موحد بندوں کی مدد فرما۔ یا اللہ! اس ملک کو اور تمام مسلم ممالک کو پر امن اور مستحکم بنا۔

یا اللہ! ہمارے ملک کو فتنوں سے محفوظ فرما۔ یا اللہ! ہمارے ملک کو فتنوں سے محفوظ فرما۔ یا اللہ! اس ملک کو مکاروں کی مکاری اور فسادیوں کے شر سے محفوظ فرما، دشمنوں اور حاسدین کے شر سے محفوظ فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! ہمارے حکمران خادم حرمین شریفین کو  خصوصی توفیق سے نواز، ان کی خصوصی مدد فرما، یا اللہ! ان کے ذریعے اپنے دین کو غالب فرما، یا اللہ! انہیں سنت نبوی کی خدمت پہ بہترین جزا عطا فرما، یا اللہ! ان کے اس کارنامے کو اپنی رضا کیلیے خالص بنا، یا اللہ! اپنی رحمت کے صدقے ان کے اس عمل کو جنتوں کے حصول کا باعث بنا، یا ارحم الراحمین! یا اللہ! ولی عہد کو  ایسے کام کرنے کی توفیق دے جس میں اسلام اور مسلمانوں کی بہتری ہو، جس میں ملک و قوم  کا فائدہ ہو، یا رب العالمین!

یا اللہ! ہماری سرحدوں کو محفوظ بنا، ہمارے فوجیوں کی مدد فرما، یا اللہ! بیمار فوجیوں کو شفا یاب فرما، فوت شدگان کو شہدا میں قبول فرما، یا اللہ! ان کی خصوصی حفاظت فرما، ان کا خصوصی خیال فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! تو ہی معبود بر حق ہے، تیرے سوا کوئی حقیقی معبود نہیں۔ یا اللہ! تو ہی معبود بر حق ہے، تیرے سوا کوئی حقیقی معبود نہیں۔ یا اللہ! تو ہی غنی ہے ہم تو فقیر ہیں، یا اللہ! تو ہی غنی ہے ہم تو فقیر ہیں، یا اللہ! ہمیں بارش عطا فرما اور ہمیں مایوس ہونے والوں میں سے مت بنا۔

یا اللہ! ہمیں بارش عطا فرما، یا اللہ! ہمیں بارش عطا فرما، یا اللہ! ہمیں بارش عطا فرما، یا اللہ! ایسی بارش ہو جو برکت والی، بے ضرر، زر خیز، موسلا دھار، بڑے بڑے قطروں والی، بھر پور ، ساری زمین پر ہونے والی مفید اور نقصانات سے مبرّا بارش عطا فرما۔

یا اللہ! بارش کے ذریعے دھرتی کو لہلہا دے، شہروں اور دیہاتوں سب کیلیے اس بارش کو مفید بنا دے،  یا اللہ! شہروں اور دیہاتوں سب کیلیے بارش کو مفید بنا دے۔

یا اللہ! اپنی رحمت کے صدقے ہمیں رحمت والی بارش عطا فرما، مکانات منہدم کرنے والی، غرق آب کرنے والی اور آزمائشوں میں ڈالنے والی بارش نہ ہو۔

یا اللہ! ہم تجھ سے مغفرت طلب کرتے ہیں ، یا اللہ! ہم تجھ سے مغفرت طلب کرتے ہیں ؛ کیونکہ تو ہی گناہ بخشنے والا ہے، ہم پر آسمان سے موسلا دھار بارش نازل فرما، ہم پر اپنی رحمت کے صدقے آسمان سے موسلا دھار بارش نازل فرما، یا ارحم الراحمین!

اللہ کے بندو!

اللہ تعالی نے تمہیں اپنے نبی پر درود و سلام پڑھنے کا حکم دیتے ہوئے اللہ تعالی نے فرمایا: {إِنَّ اللَّهَ وَمَلَائِكَتَهُ يُصَلُّونَ عَلَى النَّبِيِّ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَيْهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِيمًا} اللہ اور اس کے فرشتے نبی پر درود بھیجتے ہیں۔ اے ایمان والو! تم بھی ان پر درود و سلام  بھیجا  کرو۔ [الأحزاب: 56]

اَللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا صَلَّيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ، اَللَّهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمَّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا بَارَكْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ.

یا اللہ! ہدایت یافتہ خلفائے راشدین : ابو بکر ، عمر، عثمان، علی اور دیگر تمام صحابہ سے راضی ہو جا؛ یا اللہ! اپنے رحم و کرم کے صدقے ہم سے بھی راضی ہو جا، یا ارحم الراحمین!

ملاحظہ کیا گیا 914 بار آخری تعدیل الإثنين, 11 كانون1/ديسمبر 2017 14:10

جدید خطبات

خطبات

  • استغفار! اہمیت، آداب اور مسنون الفاظ
    استغفار! اہمیت، آداب اور مسنون الفاظ
    ﷽ فضیلۃ الشیخ پروفیسر ڈاکٹر علی بن عبد الرحمن الحذیفی حفظہ اللہ نے 06 ربیع الاول 1439  کا مسجد نبوی میں خطبہ جمعہ  بعنوان "استغفار،،، اہمیت، آداب اور مسنون الفاظ" ارشاد فرمایا جس میں انہوں نے  کہا کہ کہا: نیکیوں کے طریقے اور انداز بہت زیادہ ہیں چنانچہ ان میں سے ایک استغفار بھی ہے جو کہ آدم، حوا، نوح، ابراہیم، موسی، داود  علیہم السلام اور سیدنا محمد ﷺ  سمیت تمام انبیائے کرام کی عادت مبارکہ  ہے، نبی ﷺ سے استغفار کیلیے متعدد الفاظ ثابت ہیں، استغفار نیک لوگوں کی امتیازی صفت ہے، بخشش اور توبہ ایسی نیکیوں میں شامل ہے جن کی قبولیت کا وعدہ اللہ تعالی نے کیا ہوا ہے،  انہوں نے یہ بھی کہا کہ: استغفار  سے  ہمہ قسم کی رحمت و نعمت کا حصول، گناہوں کی بخشش، جنت کا داخلہ، بارشوں کا نزول، عذاب سے تحفظ، حاجت روائی و مشکل کشائی  اور رزق میں فراوانی   حاصل ہوتی ہے، مسلمانوں کیلیے بخشش مانگنے کا ثواب بھی بہت زیادہ ہے، فرشتے بھی مسلمانوں کیلیے بخشش مانگتے ہیں۔ صالح، نوح، ہود اور دیگر انبیائے کرام نے اپنی اقوام کو استغفار کی ترغیب دلائی، آخر میں انہوں نے کہا کہ: دنیا کی زندگی کو غنیمت جانیں یہاں سے جانے والا…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • بیت المقدس کی فضیلت اور مسئلے کا حل
    بیت المقدس کی فضیلت اور مسئلے کا حل
      پہلا خطبہ تمام  تعریفیں اللہ کیلیے ہیں جس نے مخصوص جگہوں کو بلند مقام عطا فرمایا، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبودِ بر حق نہیں  وہ یکتا ہے ، اس کا کوئی شریک نہیں وہی اعلی اور بلند و بالا ہے، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی محمد  اللہ کے بندے  اور اس کے  رسول ہیں، آپ کو اللہ تعالی نے مسجد الحرام سے مسجد اقصی تک راتوں رات سیر کروائی، یا اللہ! اُن پر، اُن کی آل، اور تمام متقی صحابہ کرام پر رحمتیں، سلامتی، اور برکتیں نازل فرما۔ {يَاأَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِنْ تَتَّقُوا اللَّهَ يَجْعَلْ لَكُمْ فُرْقَانًا وَيُكَفِّرْ عَنْكُمْ سَيِّئَاتِكُمْ وَيَغْفِرْ لَكُمْ وَاللَّهُ ذُو الْفَضْلِ الْعَظِيمِ} اے ایمان والو ! اگر تم اللہ سے ڈرتے رہے تو اللہ تمہیں [حق و باطل کے مابین] تفریق کی قوت عطا کرے گا، تم سے تمہاری برائیاں دور کر دے گا اور تمہیں بخش دے گا اور اللہ بڑا ہی فضل کرنے والا ہے [الأنفال: 29] حمد و صلاۃ کے بعد: ہر مسلمان کے دل میں ایک بہت ہی اہم مسئلہ جا گزین ہے اور وہ ہے مسجد اقصی کا مسئلہ ؛ بیت المقدس قبلہ اول ، حرمین شریفین کے بعد تیسری…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • موسمیاتی تبدیلیاں اور بیت المقدس
    موسمیاتی تبدیلیاں اور بیت المقدس
    "یقیناً تمام تعریفیں اللہ کےلیے ہیں جس کے حکم سے زمانہ چل رہا ہے، اسی کے حکم سے صدیاں تسلسل کے ساتھ گزرتی جا رہی ہیں، وہی رات کو دن پر اور دن کو رات پر غلاف بنا دیتا ہے، اسی نے سورج کو ضیا اور چاند کو منور بنایا، اسی نے ان کی منزلیں بنائیں تا کہ تم سالوں کا اور دیگر امور کا حساب رکھ سکو، میں اسی کی حمد بیان کرتا ہوں وہی ثنا اور تعریف کا اہل ہے، میں اس کی بے شمار اور لا تعداد نعمتوں پر شکر بجا لاتا ہوں، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی بھی معبودِ بر حق نہیں ، اور اس کا کوئی شریک نہیں، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں جناب محمد صلی اللہ علیہ وسلم اللہ بندے اور اس کے رسول ہیں ، آپ نے لوگوں کو رضائے الہی کی دعوت دی، اللہ تعالی نے آپ کو ہدایت اور دین اسلام دے کر بھیجا تا کہ تمام ادیان پر اسلام کو غالب کر دے، چاہے یہ بات مشرکوں کو کتنی ہی ناگوار گزرے، اللہ تعالی آپ پر آپ کی آل، صحابہ کرام ،آپ کی ہدایات اور سنتوں پر چلنے والوں پر روزِ قیامت تک ڈھیروں…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • سیدنا بلال رضی اللہ عنہ اور ہمارے حالات
    سیدنا بلال رضی اللہ عنہ اور ہمارے حالات
    پہلا خطبہ یقیناً تمام  تعریفیں اللہ کیلیے ہیں، ہم اس کی حمد بیان کرتے ہیں اور اسی سے مدد   طلب کرتے ہیں ، اپنے گناہوں کی بخشش بھی مانگتے ہیں، نیز نفسانی و بُرے اعمال کے شر سے اُسی کی پناہ چاہتے ہیں، جسے اللہ ہدایت عنایت کر دے اسے کوئی بھی گمراہ نہیں کر سکتا، اور جسے وہ گمراہ کر دے اس کا کوئی بھی رہنما نہیں بن سکتا، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی بھی معبودِ بر حق نہیں ، اور اس کا کوئی شریک نہیں، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں سیدنا محمد  -ﷺ-اللہ بندے اور اس کے رسول  ہیں ، آپ نے پیغام رسالت پہنچا دیا، امانت ادا کر دی  اور امت کی مکمل خیر خواہی فرمائی، نیز  راہِ حق میں کما حقہ جہاد کیا یہاں تک کہ آپ اس جہاں سے رخصت ہوگئے، اللہ تعالی آپ پر آپ کی آل، صحابہ کرام اور ان کے نقش قدم پر چلنے والوں پر روزِ قیامت تک ڈھیروں سلامتی اور رحمتیں نازل فرمائے۔ حمد و صلاۃ کے بعد: سب سے سچا کلام قرآن مجید ہے، سب سے افضل ترین طرزِ زندگی جناب محمد ﷺ کا ہے، بد ترین امور  بدعات ہیں اور ہر بدعت…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • کرپشن اور بد عنوانی کی مذمت اور دیارِ غیر میں مسلمان کی ذمہ داری
    کرپشن اور بد عنوانی کی مذمت اور دیارِ غیر میں مسلمان کی ذمہ داری
    ﷽   پہلا خطبہ: تمام تعریفیں اللہ کیلیے  ہیں، اسی نے اپنے بندوں  میں روزی، رزق اور اپنا فیض تقسیم فرمایا، اللہ تعالی نے چوری حرام قرار دی اور اس پر چوروں اور ڈاکوؤں کے ہاتھ کاٹنے کی سزا مقرر فرمائی ، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی حقیقی معبود نہیں وہ یکتا ہے اس کا کوئی شریک  نہیں  ، اسی کا فرمان ہے: {مَا عِنْدَكُمْ يَنْفَدُ وَمَا عِنْدَ اللَّهِ بَاقٍ} تمہارے پاس جو کچھ ہے وہ ختم ہو جائے گا اور جو اللہ کے پاس ہے وہ ہمیشہ رہے گا۔ [النحل: 96]، اور یہ بھی گواہی دیتا ہوں  کہ ہمارے نبی سیدنا محمد اس کے بندے اور رسول ہیں ، آپ کو مکارم اخلاق کی تکمیل کے لیے مبعوث فرمایا گیا۔ اللہ تعالی آپ پر ، آپ کی اولاد اور صحابہ کرام  پر  اس وقت تک رحمتیں نازل فرمائے جب تک آفتاب  طلوع ہوتا رہے اور سورج کی روشنی چمکتی رہے۔ حمد و صلاۃ کے بعد: مسلمانو! اللہ سے ڈرو، کہ تقوی الہی افضل ترین نیکی ہے، اور اس کی اطاعت سے ہی قدرو منزلت بڑھتی ہے {يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ حَقَّ تُقَاتِهِ وَلَا تَمُوتُنَّ إِلَّا وَأَنْتُمْ مُسْلِمُونَ} اے ایمان والو! اللہ سے ایسے…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم