بسم اللہ الرحمن الرحیم،الحمد للہ والصلوٰۃ والسلام علی من لا نبی بعدہ 

الخميس, 17 كانون1/ديسمبر 2015 00:00

زدواجی زندگی مقاصد، تعلیمات اور حقوق

مولف/مصنف/مقرر  پروفیسر ڈاکٹر علی بن عبد الرحمن الحذیفی ﷾ ترجمہ: شفقت الرحمن مغل

پہلا خطبہ:

تمام تعریفیں اللہ کیلئے ہیں، اسی نے پیدا اور درست انداز میں استوار کیا، وہی صحیح اندازے کے مطابق رہنمائی کرتا ہے، میں اپنے رب کی حمد خوانی اور شکر بجا لاتا ہوں، اسی کی طرف رجوع اور بخشش چاہتا ہوں، میں یہ گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے علاوہ کوئی معبودِ بر حق نہیں وہ یکتا ہے ، وہی بلند و بالا ہے، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی سیدنا محمد اللہ کے بندے ، اور چنیدہ رسول ہیں، یا اللہ! اپنے بندے ، اور رسول محمد ، انکی اولاد اور متقی و نیکو کار صحابہ کرام پر اپنی رحمتیں ، سلامتی اور برکتیں نازل فرما۔

حمد و صلاۃ کے بعد:

حکمِ الہی کے مطابق تقوی اختیار کرو، اور جن امور سے اس نے روکا ہے، ان سے رک جاؤ۔

اللہ کے بندو!

تمہارے رب نے اس کائنات کو ایک مقررہ وقت تک کیلئے آباد کرنے کا شرعی اور کونی ارادہ فرمایا، اور یہ آباد کاری باہمی تعاون، اتحاد و اتفاق ، اور زندگی کی بنیاد عدل و انصاف پر مبنی مفید اصولوں پر رکھنے کی وجہ سے ہی ممکن ہے۔

انسان کو اس زمین پر نائب بنایا گیا کہ زمین پر آباد کاری کیلئے بڑھ چڑھ کر حصہ لے، اور یہاں رہتے ہوئے اللہ کی عبادت کرے، کیونکہ انسان کی خوشحالی کا راز اللہ کی بندگی اور بد بختی اللہ کی نافرمانی میں ہے، اللہ تعالی کا فرمان ہے: {وَمَنْ يُطِعِ اللَّهَ وَرَسُولَهُ وَيَخْشَ اللَّهَ وَيَتَّقْهِ فَأُولَئِكَ هُمُ الْفَائِزُونَ} جو شخص اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرے، اللہ سے ڈرے، اور اس کی نا فرمانی سے بچتا رہے تو ایسے ہی لوگ با مراد ہیں [النور : 52]

اسی طرح فرمایا: {وَمَنْ يَعْصِ اللَّهَ وَرَسُولَهُ وَيَتَعَدَّ حُدُودَهُ يُدْخِلْهُ نَارًا خَالِدًا فِيهَا وَلَهُ عَذَابٌ مُهِينٌ} اور جو اللہ اور اس کے رسول کی نافرمانی کرے اور اللہ کی حدود سے آگے نکل جائے اللہ اسے دوزخ میں داخل کرے گا جس میں وہ ہمیشہ رہے گا اور اسے رسوا کرنے والا عذاب ہوگا [النساء : 14]

ایک مقام پر فرمایا: {وَلَوِ اتَّبَعَ الْحَقُّ أَهْوَاءَهُمْ لَفَسَدَتِ السَّمَاوَاتُ وَالْأَرْضُ وَمَنْ فِيهِنَّ} اور اگر حق ان کی خواہشات کے مطابق ہوتا تو یہ زمین و آسمان اور ان میں جو کچھ ہے ان سب کا نظام درہم برہم ہو جاتا [المؤمنون : 71]

اس دنیا میں انسان کی تخلیق کا سب سے پہلا مرحلہ اللہ اور اسکے رسول کے طریقے کے مطابق بیوی کا حصول ہے، خاوند و بیوی میں باہمی تعاون، پیار، انس، اور محبت کامل ترین صورت میں ہوتی ہے، انکے مقاصد و اہداف یکساں ہوتے ہیں، میاں بیوی باہمی تعلقات کے دوران عظیم تعمیری اور فطرتی تسکین حاصل کرتے ہیں، اور نیک اولاد کی صورت میں بلند اہداف و مقاصد حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

بیوی نسلوں کی پرورش گاہ، نو مولود بچوں کیلئے پہلی درس گاہ، اور بچوں کی تعمیری رہنمائی و اصلاح کیلئے تربیت گاہ ہے۔

ماں اور باپ کا اپنی اولاد پر ہمیشہ اثر رہتا ہے، اگر والدین نیک ہوں تو حقیقت میں وہی کسی بھی اچھے معاشرے کی بنیادی اینٹ کی حیثیت رکھتے ہیں ۔

والدین چھوٹوں کیلئے پیار، رحمت، شفقت، محبت، اور الفت کا گہوارہ ہیں۔

اصل میں رشتہ داری اور قرابت داری یہ ہے کہ جس کی وجہ سے باہمی تعاون، شفقت، کفالت، ربط، محبت پیدا ہو اور حوادثات زمانہ میں ایک دوسرے کا خیال رکھا جائے۔

نکاح ازلی رسم و رواج ہے، اس کے ان گنت فوائد ، اور لا متناہی برکتیں ہیں، نکاح ایسے ابدی طریقوں میں سے ہے جس کے فوائد کبھی ختم نہیں ہونگے۔

نکاح انبیائے کرام، اور رسولوں کی سنت بھی ہے، فرمانِ باری تعالی ہے: {وَلَقَدْ أَرْسَلْنَا رُسُلًا مِنْ قَبْلِكَ وَجَعَلْنَا لَهُمْ أَزْوَاجًا وَذُرِّيَّةً} اور یقیناً ہم نے آپ سے پہلے بھی رسول بھیجے، اور ہم نے ان کیلئے بیویاں اور اولاد بھی بنائی[الرعد : 38]

اسی طرح مؤمنوں کی صفات ذکر کرتے ہوئے فرمایا: {وَالَّذِينَ يَقُولُونَ رَبَّنَا هَبْ لَنَا مِنْ أَزْوَاجِنَا وَذُرِّيَّاتِنَا قُرَّةَ أَعْيُنٍ وَاجْعَلْنَا لِلْمُتَّقِينَ إِمَامًا} اور وہ لوگ جو کہتے ہیں: اے ہمارے پروردگار! ہمیں ہماری بیویوں، اور اولاد سے آنکھوں کی ٹھنڈک عطا فرما، اور ہمیں متقی لوگوں کا پیشوا بنا۔[الفرقان : 74]

بلکہ نکاح کا حکم دیتے ہوئے فرمایا: {وَأَنْكِحُوا الْأَيَامَى مِنْكُمْ وَالصَّالِحِينَ مِنْ عِبَادِكُمْ وَإِمَائِكُمْ إِنْ يَكُونُوا فُقَرَاءَ يُغْنِهِمُ اللَّهُ مِنْ فَضْلِهِ } اور تم میں سے جو لوگ غیر شادی شدہ ہیں ان کے نکاح کر دو ، اور اپنی نیک صالح لونڈی، غلاموں کے بھی ،اگر وہ محتاج ہیں تو اللہ اپنی مہربانی سے انھیں غنی کر دے گا[النور : 32]

اور عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا: (نوجوانو! جو تم میں سے نکاح کے اخراجات کی استطاعت رکھتا ہے، تو وہ نکاح کر لے؛ کیونکہ اس سے نظریں نیچی، اور شرمگاہ کو تحفظ حاصل ہوتا ہے، اور جو نکاح کی طاقت نہیں رکھتا تو وہ روزے رکھے، اس طرح اسکی شہوت کم ہو جائے گی) بخاری و مسلم

حدیث میں مذکور "الباءۃ" سے مراد حق مہر، نان و نفقہ، اور رہائش کے اخراجات ہیں، جو ان کی استطاعت نہیں رکھتا اور اسے نکاح کی ضرورت بھی ہے تو وہ روزے رکھے، روزوں کا اسے ثواب بھی ملے گا، اور شہوت بھی کم ہوگی، اور اللہ کی طرف سے شادی میسر ہونے تک روزے ہی رکھتا رہے۔

انس رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ: کچھ لوگوں نے امہات المؤمنین سے آپکی تنہائی کی عبادات سے متعلق استفسار کیا، تو ان میں سے کچھ نے کہا: "میں شادی نہیں کرونگا"، اور کچھ نے کہا: "میں گوشت نہیں کھاؤں گا"، اور کچھ نے کہا کہ : "میں بستر پر آرام نہیں کرونگا" انکی یہ باتیں نبی ﷺ تک پہنچیں تو آپ ﷺ نے حمد و ثنا کے بعد فرمایا: (لوگوں کو کیا ہو گیا ہے!؟ انہوں نے کچھ ایسی ویسی باتیں کیں ہیں! لیکن میں [رات کو] نماز بھی پڑھتا ہوں، اور آرام بھی کرتا ہوں، [نفلی]روزے رکھتا بھی ہوں، اور چھوڑتا بھی ہوں، اور شادیاں بھی کی ہوئیں ہیں، جو شخص بھی میری سنت سے اعراض کرے، تو وہ مجھ سے نہیں ) بخاری مسلم

اسلام نے نکاح کی استطاعت اور ضرورت رکھنے والے پر اسے واجب قرار دیا ہے، آپ ﷺ کا فرمان ہے کہ : (محبت کرنے والی اور بچے جننے والی عورتوں سے شادی کرو، یقیناً میں تمہاری کثرت کی وجہ سے قیامت کے دن دیگر انبیاء پر فخر کرونگا) اسے احمد نے روایت کیا ہے، اور ابن حبان نے انس رضی اللہ عنہ سے اسے روایت کیا ہے اور صحیح قرار دیا ہے۔

نکاح زوجین کیلئے پاکیزگی اور عفت کا باعث ہے، اسی کی بدولت معاشرے کی اصلاح ہوگی، اور انحراف سے تحفظ ملے گا، فرمانِ باری تعالی ہے: {وَإِذَا طَلَّقْتُمُ النِّسَاءَ فَبَلَغْنَ أَجَلَهُنَّ فَلَا تَعْضُلُوهُنَّ أَنْ يَنْكِحْنَ أَزْوَاجَهُنَّ إِذَا تَرَاضَوْا بَيْنَهُمْ بِالْمَعْرُوفِ ذَلِكَ يُوعَظُ بِهِ مَنْ كَانَ مِنْكُمْ يُؤْمِنُ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ ذَلِكُمْ أَزْكَى لَكُمْ وَأَطْهَرُ وَاللَّهُ يَعْلَمُ وَأَنْتُمْ لَا تَعْلَمُونَ} نیز جب تم عورتوں کو طلاق دو اور وہ اپنی عدت کو پہنچ جائیں تو انہیں اپنے (پہلے) خاوندوں سے نکاح کرنے سے نہ روکو جبکہ وہ معروف طریقے سے آپس میں نکاح کرنے پر راضی ہوں ، جو کوئی تم میں سے اللہ پر اور آخرت کے دن پر ایمان رکھتا ہے اسے اسی بات کی نصیحت کی جاتی ہے، یہی تمہارے لیے شائستہ اور پاکیزہ طریقہ ہے؛(اپنے احکام کی حکمت) اللہ ہی جانتا ہے تم نہیں جانتے [البقرة : 232]

نکاح معاشرے کو زنا، اور لواطت سے تحفظ فراہم کرتا ہے، اور کسی بھی علاقے میں زنا عام ہو جائے تو اللہ تعالی ان پر غربت اور ذلت مسلط فرما دیتا ہے، اور وہاں ایسی بیماریاں پھوٹ پڑتی ہیں جو پہلے لوگوں میں نہیں تھیں، مزید بر آں کہ زنا کاروں کیلئے آخرت میں عذاب و رسوائی بھی ہوگی، فرمانِ باری تعالی ہے: {وَالَّذِينَ لَا يَدْعُونَ مَعَ اللَّهِ إِلَهًا آخَرَ وَلَا يَقْتُلُونَ النَّفْسَ الَّتِي حَرَّمَ اللَّهُ إِلَّا بِالْحَقِّ وَلَا يَزْنُونَ وَمَنْ يَفْعَلْ ذَلِكَ يَلْقَ أَثَامًا (68) يُضَاعَفْ لَهُ الْعَذَابُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ وَيَخْلُدْ فِيهِ مُهَانًا } اور وہ لوگ اللہ کے ساتھ کسی اور الٰہ کو نہیں پکارتے نہ ہی اللہ کی حرام کی ہوئی کسی جان کو ناحق قتل کرتے ہیں اور نہ زنا کرتے ہیں اور جو شخص ایسے کام کرے گا ان کی سزا پاکے رہے گا[68] قیامت کے دن اس کا عذاب دگنا کر دیا جائے گا اور ذلیل ہو کر اس میں ہمیشہ کے لئے پڑا رہے گا۔ [الفرقان : 68 - 69]

لواطت کا ارتکاب کرنے والے کا دل تباہ، فطرت الٹ، نفس خبیث ، اور اخلاق بگڑ جاتا ہے، اسے دنیا و آخرت میں شدید ترین سزا دی جائی گی، اور ہم قوم لوط پر نازل ہونے والی سزائیں جانتے ہیں، جو ان سے پہلے کسی اور قوم کو نہیں دی گئیں تھیں، ان پر کھنگر پتھروں کی بارش کی گئی، جبریل علیہ السلام نے ان کے علاقوں کو آسمان تک اٹھا کر الٹا گرایا، اور سب کو تہ و بالا کر دیا، اور اللہ تعالی نے ان پر پتھر بھی برسائے، نیز انہیں دائمی جہنمی قرار دیا۔

اس جرم کی سنگینی کے باعث نبی ﷺ نے فرمایا: (لواطت کرنے والے پر اللہ تعالی کی لعنت ہو، لواطت کرنے والے پر اللہ تعالی کی لعنت ہو، لواطت کرنے والے پر اللہ تعالی کی لعنت ہو)

نکاح : زنا و لواطت سے تحفظ ، دلی پاکیزگی اور تزکیہ نفس کا باعث ہے، اور عبادتِ الہی اور زمینی آباد کاری کیلئے مسلسل نسلیں پیدا ہونے کا ذریعہ ہے۔

شرعی طور پر خاوند کو با اخلاق، دیندار، اور خوبصورت بیوی اختیار کرنے کا حق ہے، اس بارے میں آپ ﷺ کا فرمان ہے: (عورت سے شادی چار چیزوں کی بنا پر کی جاتی ہے، مال، حسب نسب، خوبصورتی، اور دین کی وجہ سے، تم دیندار خاتون تلاش کرو، [اگر تم نہ مانو تو]تمہارے ہاتھ خاک آلود ہوں) اسے بخاری و مسلم نے ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے۔

اسی طرح عورت کو دیندار اور با اخلاق خاوند اختیار کرنا چاہیے، چنانچہ ایک حدیث میں ہے کہ ایک آدمی نے رسول اللہ ﷺ سے سوال کیا کہ میں اپنی بیٹی کی شادی کس سے کروں؟ تو آپ نے فرمایا: (کسی متقی سے اس کی شادی کرو، کیونکہ اگر وہ اس سے محبت کریگا تو اس کی عزت کریگا، اور اگر ناپسند ہوگی تو ظلم نہیں کریگا)

اسی طرح آپ ﷺ کا فرمان ہے: (جب تمہارے پاس شادی کیلئے لڑکی کا رشتہ آئے اور تمہیں دینی اور اخلاقی اعتبار سے اچھا بھی لگے تو تم اسے بیاہ دو، اگر ایسا نہیں کرو گے تو زمین پر وسیع و عریض فتنہ فساد بپا ہو جائے گا ) ترمذی نے اسے ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے۔

کسی بھی لڑکی کو اسے ناپسند لڑکے کیساتھ شادی پر مجبور نہ کیا جائے، بلکہ لڑکی کی رضا مندی بھی ضروری ہے، آپ ﷺ کا فرمان ہے: (بیوہ کا نکاح اس کے مشورے کے بغیر نہ کیا جائے، اور کنواری کی شادی اس کی اجازت کے بغیر نہ کی جائے) صحابہ کرام نے کہا: "اللہ کے رسول! اس کی اجازت کیسے پتہ چلے گی؟" تو آپ نے فرمایا: (اس کی خاموشی اسکی اجازت ہے) بخاری و مسلم نے ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے۔

اگر اچھا رشتہ آئے اور لڑکی بھی نکاح کے قابل ہو تو لڑکی کا ولی نکاح میں تاخیر مت کرے، کیونکہ یہ اس کے پاس امانت ہے، اور قیامت کے دن اس کے بارے میں استفسار بھی ہوگا۔

ولی لڑکی کی پڑھائی کی وجہ سے رشتے میں تاخیر مت کرے، کیونکہ دونوں پڑھائی جاری رکھنا چاہیں تو ایک دوسرے کا تعاون کر سکتے ہیں، اسی طرح اُسے اپنی بقیہ زندگی میں شادی کی تاخیر کے باعث نقصان بھی اٹھانا پڑ سکتا ہے۔

اسی طرح ولی رشتہ مانگنے والوں کو لڑکی کی ملازمت سے ملنے والی تنخواہ کھانے کیلئے مسترد نہ کرے، کیونکہ اس لالچ کی وجہ سے لڑکی ضائع ہو جائے گی، اور نعمتِ اولاد سے محروم رہے گی، یہ حقیقت میں عورت پر زیادتی ہے، بسا اوقات اپنے ولی کے خلاف وہ بد دعا بھی کر سکتی ہے، جس کی وجہ سے ولی کو ناکامی کا سامنا کرنے پڑ سکتا ہے، اور یہ مال اسے قبر میں کوئی فائدہ بھی نہیں دے گا۔

لڑکی اور لڑکے کیلئے نکاح سے قبل استخارہ کرنا بھی شرعی عمل ہے، اس میں استخارے کی مخصوص دعا مانگی جائے گی۔

اسی طرح حق مہر کے تعین کیلئے میانہ روی اختیار کرنا شریعت کا تقاضا ہے، تا کہ بیوی کو فائدہ بھی ہو ، اور خاوند پر زیادتی بھی نہ ہو، کیونکہ آپ ﷺ کا فرمان ہے: (بہترین حق مہر وہ ہے جو آسان ترین ہو) اسے ابو داود، اور حاکم نے عقبہ بن عامر رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے۔

ابن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ: جب علی رضی اللہ عنہ کی شادی فاطمہ رضی اللہ عنہا سے ہوئی تو آپ ﷺ نے انہیں فرمایا: (فاطمہ کو کچھ دو) تو علی رضی اللہ عنہ نے کہا: "میرے پاس دینے کیلئے کچھ نہیں ہے"، تو آپ ﷺ نے فرمایا: (تمہاری حطمی ذرہ کہاں ہے؟) ابو داود اور نسائی نے روایت کیا ہے، اور حاکم نے اسے صحیح کہا ہے۔

اور ذرہ کی قیمت بہت تھوڑی ہوتی ہے، جو کہ چند درہموں سے زیادہ نہیں ہوتی، حالانکہ فاطمہ رضی اللہ عنہا دونوں جہانوں کی خواتین کی سردار ہیں۔

شادی میں آسانی کیلئے سلف صالحین کے واقعات بہت زیادہ ہیں ۔

شادی کے بعد اللہ تعالی میاں بیوی کو بہت سی نعمتوں سے نوازتا ہے، چنانچہ حدیث میں ہے کہ: (جو شخص شادی کر لے تو اسکا آدھا دین مکمل ہو گیا، اور باقی نصف میں اللہ سے ڈرے) طبرانی نے اسے انس رضی اللہ عنہ سے "اوسط" میں ذکر کیا ہے۔

میاں بیوی کو ازدواجی بندھن قائم رکھنے کی بھر پور کوشش کرنی چاہیے، کہ کہیں یہ ٹوٹنے نہ پائے، کیونکہ یہ ایک عظیم رشتہ ہے۔

خاوند کی ذمہ داری ہے کہ اپنی بیوی کے حقوق ادا کرے، چنانچہ بیوی کے مقام و مرتبہ کے لحاظ سے رہائش، اور نان و نفقہ کا انتظام کرے، اور اسے اپنی جمع پونجی خرچ نہ کرنے دے، چاہے وہ مالدار یا ملازمت پیشہ ہی کیوں نہ ہو، ہاں اگر اپنی خوشی سے کرے تو یہ اس کی مرضی ہے، لہذا اگر کوئی خاتون خرچے کے معاملے میں اپنے خاوند کا ہاتھ بٹاتی ہے ، تو اس پر اسے اجر ضرور ملے گا۔

خاوند بیوی کیساتھ کامل حسن معاشرت سے پیش آئے، اچھا سلوک کرے، اور قولی ہو یا فعلی کوئی بھی بد سلوکی مت کرے نبی ﷺ کا فرمان ہے: (تم میں سے بہتر وہ ہے جو اپنے اہل خانہ کیلئے بہتر ہے، اور میں اپنے اہل خانہ کیلئے تم سے بہتر ہوں) اس روایت کو ابن ماجہ اور حاکم نے ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت کیا ہے۔

بیوی کو چاہیے کہ خاوند کے حقوق ادا کرے، اس کے ساتھ حسن معاشرت سے پیش آئے، نیکی کے کاموں میں اس کی اطاعت کرے، اسے تنگ نہ کرے، اس کے بچوں، والدین، اور رشتہ داروں کا خیال کرے، خاوند کے مال اور عدم موجودگی [میں گھر ]کی حفاظت کرے۔

عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا: (اللہ تعالی ایسی خاتون کی طرف نہیں دیکھے گا جو اپنے خاوند کا شکریہ ادا نہیں کرتی، حالانکہ اسے خاوند کے بغیر کوئی چارہ بھی نہیں) اسے حاکم نے روایت کیا ہے، اور اسے صحیح الاسناد قرار دیا ہے۔

میاں بیوی کو اختلافات شروع ہوتے ہی ختم کر دینے چاہییں، تا کہ یہ لڑائی اور شر کا باعث نہ بنیں، اور طلاق کی نوبت ہی نہ آئے، کیونکہ شیطان طلاق سے بہت زیادہ خوش ہوتا ہے، اور نتیجۃ خاندان اجڑ جاتا ہے، اولاد منحرف اور بکھر جاتی ہے۔

میاں بیوی کو چاہیے کہ ایک دوسری کی کمی کوتاہی پر صبر کریں، کیونکہ معاملات سدھارنے کیلئے صبر جیسا کوئی اکسیر نہیں، اس لئے کہ صبر کے نتائج قابل ستائش ہوتے ہیں، اللہ تعالی کا فرمان ہے: {وَعَاشِرُوهُنَّ بِالْمَعْرُوفِ فَإِنْ كَرِهْتُمُوهُنَّ فَعَسَى أَنْ تَكْرَهُوا شَيْئًا وَيَجْعَلَ اللَّهُ فِيهِ خَيْرًا كَثِيرًا} اور ان کے ساتھ اچھے طریقے سے رہن سہن رکھو، اگر تم انہیں ناپسند کرو؛ تو بہت ممکن ہے کہ تم کسی چیز کو برا جانو اور اللہ تعالیٰ اس میں بہت بھلائی پیدا کر دے [النساء : 19]

اور ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (کوئی مؤمن مرد کسی مؤمن عورت سے بغض نہ رکھے، اگر اس کی کوئی ایک بات ناگوار گزرے تو دیگر خوبیوں سے راضی ہو جائے) مسلم

ایک حدیث میں ہے کہ:(شیطان اپنے لشکروں کو کہتا ہے کہ: "آج تم میں سے کس نے مسلمان کو گمراہ کیا ہے؟ میں اسے قریب کر کے تاج پہناؤں گا! تو ایک آ کر کہتا ہے کہ: "میں نے فلاں کو اتنا ورغلایا کہ اس نے اپنے والدین کی نافرمانی کر لی" تو شیطان کہتا ہے: "ہو سکتا وہ صلح کر لے" دوسرا آ کر کہتا ہے کہ: "میں نے فلاں کو اتنا ورغلایا کہ اس نے چوری کر لی" تو شیطان کہتا ہے: "ممکن ہے وہ بھی توبہ کر لے" تیسرا آ کر کہتا ہے کہ: "میں نے فلاں کو اتنا ورغلایا کہ وہ زنا کر بیٹھا" تو شیطان کہتا ہے: "ہو سکتا ہے یہ بھی توبہ کر لے" ایک اور آ کر کہتا ہے کہ: "میں نے فلاں کو اتنا ورغلایا کہ اس نے اپنی بیوی کو طلاق ہی دے دی" تو اب کی بار ابلیس کہتا ہے کہ : "توں ہے تا ج کا مستحق!!" تو اسے اپنے قریب کر کے تاج پہناتا ہے)مسلم

یہ صرف اس لیے ہے کہ طلاق کے نتائج بہت ہی بھیانک اور اس پر مرتب ہونے والے اثرات انتہائی سنگین ہوتے ہیں، طلاق کی وجہ سے میاں ، بیوی سمیت بچے بھی بہت نقصان اٹھاتے ہیں، اللہ تعالی سے دعا ہے کہ اللہ تعالی ہم سب کو شیطانی چالوں اور اس کی مکاریوں سے محفوظ فرمائے۔

اور جس کیلئے ابتدائی طور پر شادی کرنا مشکل ہو تو عفت و صبر کا دامن مت چھوڑے، اور اپنے آپ کو خود لذتی ، زنا، منشیات اور غیر فطری عمل سے بچائے، حتی کہ اللہ تعالی شادی کیلئے آسانی فرما دے، اللہ تعالی کا فرمان ہے: {وَلْيَسْتَعْفِفِ الَّذِينَ لَا يَجِدُونَ نِكَاحًا حَتَّى يُغْنِيَهُمُ اللَّهُ مِنْ فَضْلِهِ } اور جو نکاح کرنے کے وسائل نہ پائیں انہیں چاہیے کہ پاک دامنی اختیار کریں یہاں تک کہ اللہ اپنے فضل سے ان کو غنی کر دے [النور : 33]

لوگوں کو دعوتِ ولیمہ میں فضول خرچی سے مکمل اجتناب کرنا چاہیے، اللہ تعالی کا فرمان ہے: { وَلَا تُبَذِّرْ تَبْذِيرًا [26] إِنَّ الْمُبَذِّرِينَ كَانُوا إِخْوَانَ الشَّيَاطِينِ} فضول خرچی بالکل مت کرو[26] کیونکہ فضول خرچی کرنے والے شیطانوں کے بھائی ہیں [الإسراء : 27-26]

اگر ولیمہ یا کسی بھی تقریب کے کھانے میں سے کچھ کھانا بچ جائے تو اسے پھینکنا جائز نہیں ہے، بلکہ ایسے لوگوں تک پہنچایا جائے جو اس سے مستفید ہوں اور اسے کھا لیں، ایسے لوگوں کی تعداد بہت زیادہ ہے۔

اللہ تعالی کا فرمان ہے: {وَاللَّهُ جَعَلَ لَكُمْ مِنْ أَنْفُسِكُمْ أَزْوَاجًا وَجَعَلَ لَكُمْ مِنْ أَزْوَاجِكُمْ بَنِينَ وَحَفَدَةً وَرَزَقَكُمْ مِنَ الطَّيِّبَاتِ أَفَبِالْبَاطِلِ يُؤْمِنُونَ وَبِنِعْمَتِ اللَّهِ هُمْ يَكْفُرُونَ} اللہ نے تمہارے لئے تمہی میں سے بیویاں بنائیں اور تمہاری بیویوں سے تمہارے لیے بیٹے اور پوتے بنائے اور تمہیں پاکیزہ چیزوں کا رزق عطا کیا، کیا پھر وہ باطل (معبودوں) پر یقین رکھتے اور اللہ کی نعمتوں کا انکار کرتے ہیں؟ [النحل : 72]

اللہ تعالی میرے اور آپ سب کیلئے قرآن کریم کو خیر و برکت والا بنائے، مجھے اور آپ سب کو اسکی آیات سے مستفید ہونے کی توفیق دے، اور ہمیں سید المرسلین ﷺ کی سیرت و ٹھوس احکامات پر چلنے کی توفیق دے، میں اپنی بات کو اسی پر ختم کرتے ہوئے اللہ سے اپنے اور تمام مسلمانوں کے گناہوں کی بخشش چاہتا ہوں، تم بھی اسی سے گناہوں کی بخشش مانگو ۔

دوسرا خطبہ

تمام تعریفیں اللہ کیلئے ہیں جو غالب اور بخشنے والا ہے، وہی بردبار، اور قدر دان ہے، میں اپنے رب کی حمد اور شکر بجا لاتا ہوں، اسی کی طرف رجوع کرتا ہوں اور بخشش طلب کرتا ہوں، اور میں گواہی دیتا ہوں کہ اسکے علاوہ کوئی معبودِ بر حق نہیں وہ اکیلا اور یکتا ہے ، اسی کی شاہی ، اسی کی حمد ہے، اور وہی ہر چیز پر قادر ہے، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی اور سربراہ محمد اسکے بندے اور رسول ہیں، آپ خوش خبری دینے والے، اور ڈرانے والے ہیں، یا اللہ !اپنے بندے اور رسول محمد ، انکی آل ، اور نیکیوں کیلئے بڑھ چڑھ کر حصہ لینے والے صحابہ کرام پر اپنی رحمت ، سلامتی اور برکتیں نازل فرما۔

حمد و صلاۃ کے بعد:

اطاعتِ الہی بجا لاتے ہوئے تقوی الہی اختیار کرو، غضب و معصیتِ الہی سے بچو، کیونکہ کامیاب لوگ تقوی الہی کے ذریعے ہی کامیاب ہوتے ہیں، اور نقصان اٹھانے والے لوگ شریعتِ الہی سے رو گردانی کے باعث ہی ناکام ہوتے ہیں۔

اللہ کے بندو!

نیکیوں کے راستے بہت زیادہ، اور جنت کے راستے بہت کشادہ ہیں، کامیاب وہی ہے جو نیکی کے ہر دروازے پر دستک دے، اور محروم وہی ہے جو نیکیوں سے بے رغبت رہے اور گناہوں کا دلدادہ ہو۔

جو شخص اپنے لئے اور مسلمانوں کیلئے مالی طور پر احسان کرے تو اللہ تعالی اس کے مال میں برکت عطا فرماتا ہے اور خرچ شدہ سے بھی بہتر عطا فرماتا ہے، اللہ تعالی کا فرمان ہے: { وَمَا أَنْفَقْتُمْ مِنْ شَيْءٍ فَهُوَ يُخْلِفُهُ وَهُوَ خَيْرُ الرَّازِقِينَ} اور جو کچھ بھی تم خرچ کرو تو اللہ تمہیں واپس لوٹا دے گا، اور وہ بہترین رزق دینے والا ہے[سبأ : 39]

اسی طرح فرمایا: {يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا أَنْفِقُوا مِمَّا رَزَقْنَاكُمْ مِنْ قَبْلِ أَنْ يَأْتِيَ يَوْمٌ لَا بَيْعٌ فِيهِ وَلَا خُلَّةٌ وَلَا شَفَاعَةٌ وَالْكَافِرُونَ هُمُ الظَّالِمُونَ} اے ایمان والو! جو ہم نے تمہیں دیا ہے اس میں سے خرچ کرو، قبل از کہ ایسا دن آئے جس میں لین دین، دوستی، سفارش کچھ نہیں ہوگا، اور کافر ہی حقیقت میں ظالم ہیں۔ [البقرة : 254]

اور حدیث میں ہے کہ : (صدقہ مال میں کمی کا باعث نہیں بنتا، اور معاف کرنے سے اللہ تعالی انسان کی عزت ہی بڑھاتا ہے)

اور حدیث میں یہ بھی ہے کہ : (جس دن بھی سورج طلوع ہوتا ہے روزانہ دو فرشتے آسمان سے نازل ہوتے ہیں، ان میں سے ایک کہتا ہے کہ: یا اللہ! [تیری راہ میں ]خرچ کرنے والے کو بدلہ عطا فرما، اور دوسرا کہتا ہے کہ: یا اللہ! کنجوس کا مال تلف فرما دے)

نیکی کا دروازہ یہ بھی ہے کہ مالدار لوگ شادی کے خواہشمند افراد کا تعاون کریں، اس سلسلے میں قرض، عطیات فراہم کریں، اس کیلئے خصوصی فنڈ قائم کیا جائے، اس خیراتی کام کیلئے سرمایہ لگائیں، اور اس پر مکمل توجہ دیں، اور اس سے حاصل ہونے والے منافع کو مستحقین تک پہنچائیں، کیونکہ بہت سے نوجوانوں کی شادیاں مالی زبوں حالی کی وجہ سے ہی تاخیر کا شکار ہوتی ہیں، اللہ تعالی کا فرمان ہے: { وَأَحْسَنُوا وَاللَّهُ يُحِبُّ الْمُحْسِنِينَ} احسان کرو، اللہ تعالی احسان کرنے والوں سے محبت کرتا ہے۔[المائدة : 93]

صاحب استطاعت والد کیلئے اپنے بچوں کی شادی کرنا ضروری ہے، تا کہ بچوں کا حق ادا ہو سکے، اور بچوں کیلئے فتنوں سے تحفظ حاصل ہو۔

مسلمانو!

}إِنَّ اللَّهَ وَمَلَائِكَتَهُ يُصَلُّونَ عَلَى النَّبِيِّ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَيْهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِيمًا{ یقینا اللہ اور اسکے فرشتے نبی پر درود بھیجتے ہیں، اے ایمان والو! تم بھی ان پر درود و سلام پڑھو[الأحزاب: 56]، اور آپ ﷺ کا فرمان ہے کہ: (جو شخص مجھ پر ایک بار درود پڑھے گا اللہ تعالی اس پر دس رحمتیں نازل فرمائے گا)

اس لئے سید الاولین و الآخرین اور امام المرسلین پر کثرت کیساتھ درود پڑھو۔

اللهم صلِّ على محمدٍ وعلى آل محمدٍ، كما صلَّيتَ على إبراهيم وعلى آل إبراهيم، إنك حميدٌ مجيد، اللهم بارِك على محمدٍ وعلى آل محمدٍ، كما باركتَ على إبراهيم وعلى آل إبراهيم، إنك حميدٌ مجيد ۔

یا اللہ ! تمام صحابہ کرام سے راضی ہو جا،یا اللہ! حق و انصاف کیساتھ فیصلے کرنے والے اور ہدایت یافتہ خلفائے راشدین ابو بکر، عمر، عثمان، اور علی سے راضی ہوجا، تابعین کرام اور قیامت تک انکے نقشِ قدم پر چلنے والے تمام لوگوں سے راضی ہوجا، یا اللہ ! انکے ساتھ ساتھ اپنی رحمت، اورکرم کے صدقے ہم سے بھی راضی ہو جا، یا ارحم الراحمین!

یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غالب فرما، یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غالب فرما، یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غالب فرما، یا اللہ! شرک اور مشرکین کو ذلیل و رسوا فرما، یا اللہ! کفر ، کفار اور منافقین کو ذلیل کر دے ، یا اللہ! اپنے اور دین کے دشمنوں کو تباہ و برباد فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! ملحد لوگوں کو تباہ و برباد فرما، یا قوی ! یا عزیز!

یا اللہ! تمام مسلمانوں کے دلوں میں الفت پیدا فرما، باہمی اختلافات رکھنے والوں میں صلح فرما، انہیں سلامتی کا راستہ دکھا، اور انہیں گمراہی کے اندھیروں سے روشنی کا راستہ دکھا، اور انہیں تیرے اور اپنے دشمنوں پر غلبہ عطا فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! تمام مسلمان مرد و خواتین کے معاملات آسان فرما دے، یا ذو الجلال و الاکرام!

یا اللہ! ہمارے تمام معاملات درست فرما، اور ہمیں ایک لمحہ کیلئے بھی تنہا مت چھوڑنا، یا رب العالمین!

یا اللہ! ہمیں ہمارے نفسوں اور برے اعمال کے شر سمیت شیطانی وسوسوں اور مکاریوں سے محفوظ فرما، یا ربا العالمین!

یا اللہ! ہمیں ہر شریر کے شر سے محفوظ فرما، یا اللہ! ہمیں اور ہماری اولاد کو ابلیس، شیاطین ، شیطانی چیلوں اور شیطانی مکاریوں سے محفوظ فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! جادو گروں کو تباہ و برباد فرما، یا اللہ! جادو گروں کو تباہ و برباد فرما، یا اللہ! تمام مسلمانوں کو جادو گروں کے شر سے محفوظ فرما، یا اللہ! ہمیں اور ہماری اولاد سمت سب مسلمانوں کو جادو گروں کے شر سے محفوظ فرما، یا اللہ! ان کی تمام تر شرارتیں انہی کے خلاف فرما دے ، اور انہیں بالکل اپاہج کر دے، بیشک تو سب چیزو ں پر قادر ہے۔

یا اللہ! سب مسلمانوں کو ظاہری ، باطنی، اور تمام فتنوں سے محفوظ فرما، یا اکرم الاکرمین!

یا اللہ! ہم سب کے علاقوں کو پر امن بنا، اور ہمارے حکمرانوں کی اصلاح فرما، یا اللہ! ہم سب کے علاقوں کو پر امن بنا، اور ہمارے حکمرانوں کی اصلاح فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! تمام فتنوں کی سرکوبی فرما، یا اللہ امت محمدیہ سے تمام فتنوں کو ختم فرما دے، یا اللہ! یمن کے مسائل کو جلد از جلد حل فرما دے، یا رب العالمین! یا اللہ! یمن کا مسئلہ اسلام اور مسلمانوں کی سر بلندی اور ہماری فوج کی سلامتی کیساتھ حل فرما، یا رب العالمین! بیشک تو ہر چیز پر قادر ہے۔

یا اللہ! یمن کا مسئلہ حل فرما، اور اس مسئلے کو مسلمانوں کیلئے سلامتی اور امن والا بنا، یا اللہ! دائمی رسوائی ، تباہی اور ذلت منافقوں کا مقدر بنا دے، یا رب العالمین! یا اللہ! دائمی رسوائی ، تباہی اور ذلت بدعتیوں کا مقدر بنا دے، جنہوں نے اسلام میں بدعات ایجاد کی ، یا رب العالمین! بیشک تو ہر چیز پر قادر ہے۔

یا اللہ! سرحدوں پر ہماری افواج کی مدد فرما، یا اللہ! سرحدوں پر ہماری افواج کی مدد فرما، یا اللہ! ظلم و زیادتی کے سامنے ڈٹ جانے والے ہمارے فوجیوں کی مدد فرما، یا اللہ! ان فوجیوں کی زندگی، مال و جان، اہل وعیال، اور املاک کی حفاظت فرما، یا رب العالمین! یا اللہ! تمام فوجیوں کی حفاظت فرما، بیشک تو ہر چیز پر قادر ہے، یا اللہ! ان کیلئے صحیح سلامت واپسی کا انتظام فرما، یا اللہ! وہ اس انداز سے واپس ہوں کہ کوئی فتنہ باقی نہ رہے۔

یا اللہ! تمام فتنوں کو ختم فرما، یا اللہ! شام کے فتنے کو ختم فرما، یا اللہ! شام میں تمام مسلمانوں کی حفاظت فرما، یا اللہ! ان کی حالت درست فرما، اور انہیں اسلام دشمن پر غلبہ عطا فرما، یا اللہ! انہیں ظالموں پر غلبہ عطا فرما، یا اللہ! تباہی و بربادی شام میں مسلمانوں پر ظلم کرنے والوں کا مقدر بنا دے، یا رب العالمین!

یا اللہ! انہیں قیامت کی دیواروں تک ذلیل و رسوا فرما دے، یا ارحم الراحمین! یا رب العالمین!

یا اللہ! فلسطین میں مسلمانوں کی حفاظت فرما، یا اللہ! فلسطین میں مسلمانوں کی حفاظت فرما، یا اللہ! بیت المقدس کو تیری عبادت سے معمور فرما، یا اللہ! بیت المقدس کو اتنا معزز بنا دے کہ کسی ظالم یا کافر کے قدم اسے روند نہ سکیں، یا اللہ! بیت المقدس کو قیامت تک کیلئے اپنے مسلمان بندوں عبادت کی جگہ بنا دے، یا رب العالمین!

یا اللہ! عراق میں مسلمانوں کی حفاظت فرما، یا اللہ! پوری دنیا میں مسلمانوں کی حفاظت فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! ہم سب کی توبہ قبول فرما، یا اللہ! ہم سب کی توبہ قبول فرما، یا اللہ! امت محمدیہ پر رحم فرما۔

یا اللہ! اگر ہم سے کوئی بھول چوک یا غلطی ہو جائے تو اس پر ہمارا مؤاخذہ نہ فرما، یا اللہ! ہم پر ایسے بوجھ مت ڈالنا جیسے تو نے پہلے لوگوں پر ڈالا تھا، یا اللہ! ہمیں ہماری طاقت سے بڑھ کر ذمہ داری مت دینا، ہمیں معاف فرما، ہمیں بخش سے، ہم پر رحم فرما، تو ہی ہمارا مدد گار ہے، اور ہمیں کافروں پر غلبہ عطا فرما، یا رب العالمین!

یا اللہ! اپنی رحمت کے صدقے مسلمان مریضوں کو شفا یاب فرما، یا اللہ! اپنی رحمت کے صدقے مسلمان مریضوں کو شفا یاب فرما، یا اللہ! اپنی رحمت کے صدقے مسلمان مریضوں کو شفا یاب فرما۔

یا اللہ! خادم حرمین شریفین کو اپنے پسندیدہ کام کرنے کی توفیق عطا فرما، یا اللہ! ہر نیکی کے کام میں انکی مدد فرما، اُسکی تیری مرضی کے مطابق رہنمائی فرما، اور اسکے تمام اعمال اپنی رضا کیلئے قبول فرما، یا اللہ! اسے ہدایت یافتہ اور رہبر بنا، یا اللہ! انکے مشیروں کو تیرے پسندیدہ کام کرنے کی توفیق عطا فرما، یا اللہ! اسکے دونوں ولی عہد کو بھی تیرے پسندیدہ کام کرنے کی توفیق عطا فرما، اور انکی تیری مرضی کے مطابق رہنمائی فرما ، بیشک تو ہر چیز پر قادر ہے، اور انہیں اپنی رحمت کے صدقے اسلام اور مسلمانوں کے حق میں اچھے فیصلے کی توفیق عطا فرما، یا ارحم الراحمین!

یا اللہ! ہمیں حق بات اچھی طرح دکھا دے، اور پھر اتباعِ حق کی توفیق عطا فرما، اور ہمیں باطل بات اچھی طرح دکھا دے، اور پھر باطل سے بچنے کی توفیق عطا فرما، یا اللہ! اپنی رحمت کے صدقے ، ہمارے لئے باطل کے بارے میں ابہام مت رکھنا ، کہ کہیں گمراہ نہ ہوجائیں، یا ارحم الراحمین!

یا اللہ! ہمارے ملک کی ہر قسم کے شر و مکر سے حفاظت فرما، یا رب العالمین!

اللہ کے بندو!

}إِنَّ اللَّهَ يَأْمُرُ بِالْعَدْلِ وَالْإِحْسَانِ وَإِيتَاءِ ذِي الْقُرْبَى وَيَنْهَى عَنِ الْفَحْشَاءِ وَالْمُنْكَرِ وَالْبَغْيِ يَعِظُكُمْ لَعَلَّكُمْ تَذَكَّرُونَ (90) وَأَوْفُوا بِعَهْدِ اللَّهِ إِذَا عَاهَدْتُمْ وَلَا تَنْقُضُوا الْأَيْمَانَ بَعْدَ تَوْكِيدِهَا وَقَدْ جَعَلْتُمُ اللَّهَ عَلَيْكُمْ كَفِيلًا إِنَّ اللَّهَ يَعْلَمُ مَا تَفْعَلُونَ{ اللہ تعالی تمہیں عدل و احسان اور قریبی رشتہ داروں کو (مال) دینے کا حکم دیتا ہے، اور تمہیں فحاشی، برائی، اور سرکشی سے روکتا ہے ، اللہ تعالی تمہیں وعظ کرتا ہے تاکہ تم نصیحت پکڑو[90] اور اللہ تعالی سے کئے وعدوں کو پورا کرو، اور اللہ تعالی کو ضامن بنا کر اپنی قسموں کو مت توڑو، اللہ تعالی کو تمہارے اعمال کا بخوبی علم ہے [النحل: 90- 91]

اللہ کا تم ذکر کرو وہ تمہیں کبھی نہیں بھولے گا، اسکی نعمتوں پر شکر ادا کرو وہ تمہیں اور زیادہ عنائت کرے گا، اللہ کا ذکر بہت بڑی عبادت ہے، اور اللہ جانتا ہے جو تم کرتے ہو۔

ملاحظہ کیا گیا 699 بار آخری تعدیل السبت, 19 كانون1/ديسمبر 2015 11:39

جدید خطبات

خطبات

  • نیکی پر استقامت اور ان کی حفاظت
    نیکی پر استقامت اور ان کی حفاظت
    حمد و صلاۃ کے بعد: کتاب اللہ بہترین  کلام ہے، اور سیدنا محمد ﷺ  کا طریقہ سب سے بہترین طریقہ ہے، دین میں شامل کردہ خود ساختہ امور بد ترین امور ہیں، ہر بدعت گمراہی ہے اور ہر گمراہی جہنم میں لے جانے والی ۔ اللہ کے بندو میں اپنے آپ اور تمام سامعین کو تقوی الہی کی نصیحت کرتا ہوں، اللہ تعالی نے پہلے گزر جانے اور بعد میں آنے والے سب لوگوں کو  اسی کی نصیحت فرمائی ہے: {وَلَقَدْ وَصَّيْنَا الَّذِينَ أُوتُوا الْكِتَابَ مِنْ قَبْلِكُمْ وَإِيَّاكُمْ أَنِ اتَّقُوا اللَّهَ} اور یقیناً ہم نے تم سے پہلے کتاب دیئے جانے والے لوگوں کو اور تمہیں یہی نصیحت کی ہے کہ تقوی الہی اختیار کرو۔[النساء: 131] مسلم اقوام! وقت کا تیزی سے گزرنا عظیم نصیحت ہے، دنوں کا آ کر چلے جانا بہت بڑی تنبیہ ہے، {إِنَّ فِي اخْتِلَافِ اللَّيْلِ وَالنَّهَارِ وَمَا خَلَقَ اللَّهُ فِي السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ لَآيَاتٍ لِقَوْمٍ يَتَّقُونَ} بیشک رات اور دن کے آنے جانے  میں اور جو کچھ اللہ نے آسمانوں اور زمین میں پیدا کیا ہے ان سب میں متقی قوم کیلیے نشانیاں ہیں۔[يونس: 6] اللہ کے بندو! ہم نے چند دن پہلے  مبارک مہینے ،نیکیوں  اور برکتوں کی عظیم بہار کو الوداع کہا ہے،  یہ…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • نیکیوں کا تحفظ اور میڈیا کے لیے ہدایات
    نیکیوں کا تحفظ اور میڈیا کے لیے ہدایات
    ﷽ فضیلۃ  الشیخ ڈاکٹر جسٹس حسین بن عبد العزیز آل شیخ حفظہ اللہ نے 07-رمضان- 1438 کا خطبہ جمعہ مسجد نبوی میں بعنوان " نیکیوں کا تحفظ اور میڈیا کے لیے ہدایات" ارشاد فرمایا ، جس میں انہوں نے کہا کہ تھوڑے وقت میں زیادہ  نیکیاں سمیٹنا بہت اعلی ہدف  ہے اور ماہِ رمضان اس ہدف کی تکمیل کیلیے معاون ترین مہینہ ہے چنانچہ اس مہینے میں قیام اور صیام  کا اہتمام کر کے ہم اپنے سابقہ گناہ معاف کروا سکتے ہیں  اور دیگر نیکیاں بجا لا کر اپنے نامہ اعمال کو نیکیوں سے پر کر سکتے ہیں، انہوں نے یہ بھی کہا کہ نیکیاں کرنے کے بعد انہیں تحفظ دینا بھی انتہائی اہم کام ہے، بہت سے لوگ اس جانب توجہ نہیں دیتے اور اپنی محنت پر پانی پھیر دیتے ہیں، حقیقت یہ ہے کہ اپنی محنت دوسروں کے کھاتے میں ڈالنے والے ہی مفلس ہوتے ہیں جو کہ قیامت کے دن حقوق العباد کی پامالی کے صلے میں اپنی نیکیاں دوسروں میں تقسیم کروا بیٹھیں گے، لہذا اگر کسی سے کوئی غلطی ہو بھی جائے تو فوری معافی مانگ لیا کرے اسی میں نجات ہے۔ پھر انہوں نے کہا کہ روزے رکھتے ہوئے اصل ہدف یعنی حصول تقوی…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • عبادات کا مہینہ ماہ رمضان
    عبادات کا مہینہ ماہ رمضان
    بسم الله الرحمن الرحيم فضیلۃ الشیخ پروفیسر ڈاکٹر علی بن عبد الرحمن الحذیفی حفظہ اللہ نے 30 -شعبان-1438  کا خطبہ جمعہ  بعنوان " عبادات کا مہینہ ماہ رمضان" ارشاد فرمایا جس میں انہوں نے  کہا کہ انسان نیکی کرے یا بدی اس کا نفع یا نقصان صرف انسان کو ہی ہوتا ہے وہ اپنی بدی سے کسی اور کو نقصان نہیں پہنچاتا، چنانچہ ماہ رمضان کو اللہ تعالی نے خصوصی فضیلت بخشی  اور اس ماہ میں تمام تر عبادات یکجا فرما دیں ، اس مہینے میں نماز، روزہ، عمرے کی صورت میں حج اصغر، زکاۃ ، صدقات و خیرات اور دیگر نیکی کے کام سر انجام دئیے جاتے ہیں، روزے داروں کیلیے جنت میں خصوصی دروازہ ہے اور ہر نیکی کا بدلہ اس کی نوعیت کے مطابق دیا جائے گا بالکل اسی طرح گناہ کا بدلہ بھی اسی کے مطابق ہو گا، پھر انہوں نے کہا کہ: آپ ﷺ شعبان کے آخر میں رمضان کی خوشخبری دیتے تھے، نیز رمضان سے پہلے تمام گناہوں سے توبہ   اور حقوق العباد کی ادائیگی استقبالِ رمضان میں شامل ہے، نیز روزے کے دوران جس قدر مختلف نیکیاں قیام، صیام، صدقہ، خیرات، غریبوں کی مدد، کسی کا ہاتھ بٹانا وغیرہ کی جائیں تو ان…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • نعمتوں کو دوام بخشنے کا راز
    نعمتوں کو دوام بخشنے کا راز
    بسم الله الرحمن الرحيم فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر جسٹس صلاح  بن محمد البدیر حفظہ اللہ نے 16-شعبان- 1438  کا مسجد نبوی میں خطبہ جمعہ بعنوان "شکر،،، نعمتوں کو دوام بخشنے کا راز" ارشاد فرمایا، جس میں انہوں نے  کہا کہ شکر گزاری سے نعمتوں میں اضافہ اور دوام حاصل ہوتا ہے، کیونکہ اللہ تعالی اپنے وعدے کے مطابق شکر گزاروں کو مزید نعمتوں سے نوازتا ہے، انہوں نے کہا کہ نعمتوں کا صحیح استعمال  اور گناہوں سے دوری  دونوں کا نام شکر ہے، اگر اللہ کی نعمتوں پر تکبر اور گھمنڈ کیا جائے تو یہ صریح ناشکری ہے اور نعمتوں کے زائل ہونے کا پیش خیمہ ہے، کسی فاسق و فاجر کو نعمتیں حاصل ہوں تو یہ اللہ تعالی کی طرف سے ڈھیل ہوتی ہے اور اللہ تعالی ڈھیل کو اچانک ختم   فرماتا ہے، انہوں نے یہ بھی کہا کہ شرعی احکامات سے بچنے کیلیے حیلے بہانے تلاش کرنا فاسق لوگوں کا وتیرہ ہے، جبکہ مومن  کا اخلاق اس سے کہیں بلند ہوتا ہے، انہوں نے یہ بھی کہا کہ قناعت پسندی شکر گزاری کا سبب بنتا ہے، اور اگر کوئی شخص اللہ تعالی کی تقسیم پر راضی نہ ہو تو وہ ہمیشہ ذہنی تناؤ کا شکار رہتا ہے،  آخر میں …
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • ماہِ رجب کی حرمت اور بداعمالیاں
    ماہِ رجب کی حرمت اور بداعمالیاں
    ﷽ پہلا خطبہ تمام تعریفیں اللہ تعالی کیلیے ہیں وہی دنوں اور مہینوں  کا دائرہ چلانے والا ہے، وہ سالوں اور برسوں کو قصہ پارینہ بنانے والا ہے، وہ تمام مخلوقات کو جمع فرمائے گا، جب تک دن، مہینے اور سال یکے بعد دیگرے آتے رہیں گے نیز باد صبا اور پچھمی ہوائیں چلتی رہیں  گی میں تمام معاملات پر اسی کا حمد خواں رہوں گا، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبودِ بر حق نہیں، اس کا کوئی شریک نہیں، اس نے ہمارے لیے دین مکمل کیا اور نعمتیں پوری فرمائیں اور ہمارے لیے دین اسلام پسند کیا، مبنی بر یقین یہ سچی گواہی   دلوں کو ٹھنڈ پہنچاتی ہے اور قبر میں بھی فائدہ دے گی، نیز جس دن صور پھونکا جائے گا تب ہمیں با وقار بنا دے گی، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ محمد ﷺ اس کے بندے اور رسول ہیں، آپ نے پیغام رسالت پہنچا دیا اور امانت ادا کر دی ،امت کی خیر خواہی فرمائی، اور موت تک راہِ الہی میں جہاد کرنے کا حق ادا کر دیا ۔ اللہ تعالی آپ پر ، آپ کی آل، صحابہ کرام اور ان کے نقشِ قدم پر چلنے والے تمام لوگوں…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم