بسم اللہ الرحمن الرحیم،الحمد للہ والصلوٰۃ والسلام علی من لا نبی بعدہ 

الخميس, 21 شباط/فبراير 2013 12:08

اُمّتِ محمّدیہ صلی اللہ علیہ وسلم کے فضائل ‘‘ مکمل خطبہ جمعہ ’’

مولف/مصنف/مقرر  امامِ حرم ڈاکٹرعبد المحسن القاسم ، اردو: شعیب اعظم مدنی ، مراجعہ: حافظ حماد چاؤلہ

بسم اللہ الرحمن الرحیم

ندائے حرم مسجدِ نبوی الشریف

مکمل ترجمہ خطبہ جمعہ ،بعنوان:

اُمّتِ محمّدیہﷺکےفضائل

امامِ حرم ڈاکٹرعبد المحسن القاسم حفظہ اللہ

مؤرخہ: ۲۷ربیع الاوّل۱۴۳۴ھ بمطابق: ۸ فروری ۲۰۱۳م

ترجمہ: شعیب مدنی (فاضل اسلامک یونیورسٹی مدینہ منوّرہ)

مراجعہ: حافظ حماد چاؤلہ (فاضل اسلامک یونیورسٹی مدینہ منوّرہ)

امامِ حرم ڈاکٹر الشیخ عبد المحسن بن محمد القاسم حفظہ اللہ نے جمعہ کا خطبہ اس موضوع پر دیا:

’’ اُمّتِ مسلمہ کے فضائل و مناقب‘‘

جس میں انہوں نے اس مبارک امت، اُمّتِ محمدﷺکے فضائل بیان کئے، جو قران کریم اور احادیثِ نبویہﷺ سے ثابت ہیں۔

پہلا خطبہ

بیشک ہر قسم کی تعریف اللہ کے لئے ہے۔ ہم سب اسی کی تعریف کرتے ہیں اور اسی سے مدد مانگتے ہیں اور اسی سے مغفرت مانگتے ہیں۔اور اپنے نفوس کی شرارت اور اپنے ہی برے اعمال سے پناہ مانگتے ہیں۔ جسے اللہ ہدایت دے اسے کوئی گمراہ نہیں کرسکتا اور جسے وہ گمراہ کردے اسے کوئی ہدایت نہیں دےسکتا۔اور میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود (برحق) نہیں ، وہ اکیلا ہے، اس کا کوئی شریک نہیں۔ اور میں گواہی دیتا ہوں کہ محمد ﷺ اس کے بندے اور اسی کے رسول ہیں، اللہ تعالی ان پر اور انکے آل پر اور ان کے صحابہ پر لاتعداد رحمتیں اور سلامتی نازل فرما۔

حمد و ثناء کے بعد:

اللہ کے بندو! اللہ سے ڈرو جس طرح ڈرنے کا حق ہے؛ اور اللہ کے پاس متقی لوگوں کے لئے مزید نعمتیں ہیں، اور قیامت کے دن ان کی نجات کی گارنٹی ہے۔

فضائل کی تقسیم

اے مسلمانو!

اللہ نے مخلوق کو پیدا فرمایا اور ان کے درمیان فضیلتوں کو تقسیم کردیا؛ آدم علیہ السلام کو اپنے ہاتھوں سے بنایا اور انکے احترام کے لئے فرشتوں کو سجدہ کرنے کا حکم دیا ۔ پھر انہیں اور انکی بیوی کو زمین میں اتاردیا، اور انکی اولاد شہروں میں پھیل گئی اور طویل عرصہ تک یہ سلسلہ جاری رہا۔اللہ نے انہیں زمین میں ایک دوسرے پر فضیلتیں عطا کیں،

اللہ سبحانہ وتعالی نے فرمایا:

(وَهُوَ الَّذِي جَعَلَكُمْ خَلَائِفَ الْأَرْضِ وَرَفَعَ بَعْضَكُمْ فَوْقَ بَعْضٍ دَرَجَاتٍ) [الأنعام: 165].

ترجمہ: اور وہی (اللہ) ہی ہے جس نے تم کو زمین کا خلیفہ بنایا اور تم میں سے بعض کو بعض پر درجات میں بلند کیا۔

اُمّتِ محمدیہ ﷺ کی فضیلت

اور دیگر امتوں کی بہ نسبت اس امت کو اللہ تعالی نے خاص فضیلت و عزت سے نوازا ہے۔

اللہ تعالی کا فرمان ہے:

(هُوَ اجْتَبَاكُمْ) [الحج: 78].

ترجمہ: اسی نے تمہیں برگزیدہ بنایا ہے۔

جامع ترمذی کی حدیث ہے:

«أنتم تُتِمُّون سبعين أمَّةً أنتم خيرُها وأكرمُها على الله»؛ رواه الترمذي.

ترجمہ: آپ پر ستّر امتیں مکمل ہوچکی ہیں اورآپ لوگ اللہ کے نزدیک سب سے بہترین اور عزت دار ہیں۔

اور قرآن میں بھی اس (امت) کی مدح و تعریف آئی ہے،

اللہ جل جلالہ نے فرمایا:

(لَقَدْ أَنْزَلْنَا إِلَيْكُمْ كِتَابًا فِيهِ ذِكْرُكُمْ أَفَلَا تَعْقِلُونَ) [الأنبياء: 10].

ترجمہ: ہم نے تمہاری طرف ایسی کتاب نازل کی ہے جس میں تمہارا تذکرہ ہے کیا تم نہیں سمجھتے؟

ابن عباس رضی اللہ عنھما نے (اس آیت کی تفسیر میں) فرمایا: تذکرہ کا مطلب ہے تمہارا شرف ( یعنی تمہارا شرف بیان فرمایا ہے)۔

اور اس امت کو بھلائی میں اس لئے دوسری امتوں پرفوقیت حاصل ہے کیونکہ یہ امت دین کی بنیادوں پر قائم ہے۔

بہترین امت کا اعزاز

(كُنْتُمْ خَيْرَ أُمَّةٍ أُخْرِجَتْ لِلنَّاسِ تَأْمُرُونَ بِالْمَعْرُوفِ وَتَنْهَوْنَ عَنِ الْمُنْكَرِ وَتُؤْمِنُونَ بِاللَّهِ) [آل عمران: 110].

ترجمہ: (مومنو!) جتنی امتیں (یعنی قومیں) لوگوں میں پیدا ہوئیں تم ان سب سے بہتر ہو کہ نیک کام کرنے کو کہتے ہو اور برے کاموں سے منع کرتے ہو اوراللہ پر ایمان رکھتے ہو۔

امام قرطبی رحمہ اللہ نے فرمایا:

یہ اعزاز اس امت کے پاس اس وقت تک برقرار رہے گا جب تک جب تک وہ اسے (دین کو) قائم رکھیں گے اور نیکی کا حکم دینے اور برائی سے روکنے والی صفت ان میں باقی رہے گی۔اور اگر انہوں نے منکر کو بدلنے کی بجائے خود اپنا لیا تو یہ اعزاز ان سے خود بخود چھن جائے گا اور بہترین امت کی جگہ بُری امت کا لقب دیا جائے گا اور یہی ان کی ہلاکت کا سبب بنے گا۔

اسی امت کے مکمل دین اور افضلیت کی وجہ سے اللہ تعالی نے تمام ادیان کومنسوخ کردیا ہے،

فرمان الٰہی ہے:

(إِنَّ الدِّينَ عِنْدَ اللَّهِ الْإِسْلَامُ) [آل عمران: 19].

ترجمہ: بیشک دین (حق) اللہ کے نزدیک صرف اسلام ہی ہے۔

اور اللہ اس (دین اسلام) کی جگہ کوئی دوسرا قبول نہیں کرے گا۔

اللہ تعالی کا فرمان ہے:

(وَمَنْ يَبْتَغِ غَيْرَ الْإِسْلَامِ دِينًا فَلَنْ يُقْبَلَ مِنْهُ) [آل عمران: 85].

ترجمہ: جو شخص اسلام کے سوا اور دین تلاش کرے، اس کا دین قبول نہ کیا جائے گا ۔

دوسری امتیں بھی دینِ اسلام کی پابند ہیں

اور تمام لوگوں کو اس (دین) پر چلنے کا حکم دیا ہے،

اللہ کے رسول ﷺ نے فرمایا:

«والذي نفسُ محمدٍ بيده؛ لا يسمعُ بي أحدٌ من هذه الأمةِ يهوديٌّ ولا نصرانيٌّ ثم يموتُ ولم يُؤمنْ بالذي أُرسِلتُ به إلا كان من أصحابِ النار»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: اس ذات کی قسم جس کے ہاتھ میں(مجھ) محمد ﷺ کی جان ہے؛ اس امت کا کوئی بھی یہودی یا نصرانی میری نبوت کا سن کرمیرے دین پر ایمان لائے بغیر مر جائےگا تو وہ (جہنم کی ) آگ والوں میں سے ہوگا۔

اور اللہ نے نبیوں سے یہ وعدہ لیا تھا کہ اگر وہ (محمدﷺ) ان کی زندگی میں آگئے تو وہ سب انکی ہی پیروی کریں گے۔

پیارے نبی ﷺ نے فرمایا:

«لو أن موسَى كان حيًّا ما وسِعَه إلا أن يتَّبِعَني»؛ رواه أحمد.

ترجمہ:اگر موسی علیہ السلام زندہ ہوتے تووہ میری ہی پیروی کرتے۔

اسلام پھیلنے کی خوشخبریاں

اور نبی علیہ السلام نے خبر دی ہے کہ اسلام کونے کونے میں پھیل جائے گا۔

اور فرمایا:

«إن اللهَ زوَى ليَ الأرضَ فرأيتُ مشارِقَها ومغارِبَها، وإن أمَّتي سيبلُغُ مُلكُها ما زُوِيَ لي منها»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: بیشک اللہ نے میرے لئے زمین کو سمیٹ دیا تو میں نے مشرق و مغرب کو دیکھا، اور میری امت کی بادشاہت وہاں تک پہنچے گی جہاں تک زمین میرے لئے سمیٹ دی گئی(یعنی جہاں تک میں نے زمین کو دیکھا ہے)۔

اور اللہ نے روئے زمین پر دین کے پھیلانے کا وعدہ کیا ہے۔

مسند احمد کی حدیث ہے:

«ليبلُغنَّ هذا الأمرُ - أي: الدين - ما بلَغَ الليلُ والنهارُ، ولا يترُكُ اللهُ بيتَ مَدَرٍ ولا وبَرٍ إلا أدخلَه الله هذا الدين، بعزِّ عزيزٍ أو بذُلِّ ذليلٍ»؛ رواه أحمد.

ترجمہ: یہ دین ضرور پھیلے گا جہاں تک رات و دن پہنچتے ہیں، اور اللہ تعالی ہر گاؤں اور ہر شہر کے ہر گھر میں اس دین کو داخل فرمائے گا، عزت دار آدمی عزت سے حاصل کرے گا اور رسوا شخص رسوائی سے(یعنی دین کا چاہنے والا عزت اور خوشی سے دین کو اپنائے گا اور دین سے نفرت کرنے والا دین کو قبول کرنے پر مجبور ہوجائے گا)۔

اور اللہ نے اس امت کے دین کی حفاظت فرمائی اور اس کے غالب کرنے کا بھی وعدہ کیا۔

 

 

 

 

امت محمدﷺ کا دین تمام ادیان پر غالب

اللہ جل جلالہ نے فرمایا:

(هُوَ الَّذِي أَرْسَلَ رَسُولَهُ بِالْهُدَى وَدِينِ الْحَقِّ لِيُظْهِرَهُ عَلَى الدِّينِ كُلِّهِ وَلَوْ كَرِهَ الْمُشْرِكُونَ) [التوبة: 33].

ترجمہ: اسی نے اپنے رسول کو ہدایت اور سچے دین کے ساتھ بھیجا ہے کہ اسے اور تمام مذہبوں پر غالب کر دےاگرچہ مشرک بُرا مانیں۔

اس امت کی کتاب قیامت تک قائم رہے گی

اور اس (امت) کی کتاب نور، ہدایت اور نصیحت ہے، جو تمام پچھلی کتابوں کی حفاظت بھی کرتی ہے اور ان پر اَمین بھی ہے۔

(وَأَنْزَلْنَا إِلَيْكَ الْكِتَابَ بِالْحَقِّ مُصَدِّقًا لِمَا بَيْنَ يَدَيْهِ مِنَ الْكِتَابِ وَمُهَيْمِنًا عَلَيْهِ) [المائدة: 48].

ترجمہ: اور ہم نے آپ کی طرف حق کے ساتھ یہ کتاب نازل فرمائی ہے جو اپنے سے اگلی کتابوں کی تصدیق کرنے والی ہے اور ان کی محافظ ہے۔

امت محمدﷺکے دین کی حفاظت

اور یقینا اللہ نے اس دین کو تبدیلی، تحریف اور کمی بیشی سے محفوظ کیا ہوا ہے۔

(إِنَّا نَحْنُ نَزَّلْنَا الذِّكْرَ وَإِنَّا لَهُ لَحَافِظُونَ) [الحجر: 9].

ترجمہ: ہم نے ہی اس قرآن کو نازل فرمایا ہے اور ہم ہی اس کے محافظ ہیں ۔

اور سنت بھی قرآن کی طرح ایک وحی ہے جس کی سند اور روایت کی حفاظت قرآن کی حفاظت میں سے ہے۔

ابو حاتم رازی رحمہ اللہ نے فرمایا:

"لم يكن في أمةٍ من الأُمم منذ خلقَ الله آدمَ أمَّةً يحفَظون آثارَ نبيِّهم وأنسابَ سلَفهم مثلُ هذه الأمة".

ترجمہ: جب سے اللہ نے آدم علیہ السلام کو پیدا فرمایا ہے اس وقت سے اب تک کوئی امت ایسی نہیں ہے جو اس امت کی طرح اپنے نبی ﷺ کے اقوال کو یاد کیا اور اپنے سلف (پچھلے لوگ) کے نسب محفوظ کئے۔

روزِ قیامت امت محمدیہ کے فضائل

نبی علیہ السلام نے فرمایا:

«أنا سيدُ ولد آدم يوم القيامة»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: میں قیامت کے دن اولادِ آدم کا سردار ہوں گا۔

اس امت کے نبیﷺ کا مقام

اور معراج کی رات تمام نبیوں نے ہمارے پیارے نبی علیہ السلام کے پیچھے بیت المقدس میں نمازش پڑھی، اور انہیں جوامع الکلم ( ایسے جامع اصول جن میں کئی اہم ترین احکامات شامل ہوں)عطا کئے گئے، اور اللہ نے انہیں تمام لوگوں کی طرف رسول بنا کر بھیجا۔

اللہ کا فرمان ہے:

(وَمَا أَرْسَلْنَاكَ إِلَّا كَافَّةً لِلنَّاسِ) [سبأ: 28].

ترجمہ: ہم نے آپ کو تمام لوگوں کے لئے( خوشخبریاں سنانے والا اور ڈرانے والا بنا کر )بھیجا ہے۔

امت محمدﷺ پر نبوت ختم

اور ان پر نبوت ختم ہوگئی،

ابن کثیر رحمہ اللہ نے فرمایا:

"وإنما حازَت هذه الأمةُ قَصب السَّبق إلى الخيراتِ بنبيِّها محمدٍ - صلى الله عليه وسلم -؛ فإنه أشرفُ خلق الله، أكرمُ الرُّسُل على الله، وبعثَه الله بشرعٍ كاملٍ عظيمٍ لم يُعطِه نبيًّا قبلَه ولا رسولاً من الرُّسُل، فالعملُ على منهاجِه وسبيلِه يقومُ القليلُ منه ما لا يقومُ العملُ الكثيرُ من أعمال غيرهم مقامَه".

ترجمہ: اور اس امت کی برتری اور فضیلت کا سب سے بڑا سبب یہ ہے کہ یہ امت اپنے نبی محمد ﷺ کی متبع ہے؛ کیونکہ وہ اللہ کی سب سے بہترین مخلوق ہیں، اللہ کے سب سے محبوب رسول ہیں،اور اللہ نے انہیں ایسی مکمل اور عظیم شریعت کے ساتھ بھیجا ہے جو کسی نبی اور رسول کو نہیں دی گئی، اور ان کے طریقے اور راستے پر (کیا ہوا ) تھوڑا عمل بھی دیگر امتوں کے بہت سے اعمال سے افضل ہے۔

اور ہمارے نبی ﷺ کے صحابہ کا مقام نبیوں کے بعد سب سے اعلی ہے،

نبی علیہ السلام نے فرمایا:

«خيرُ الناس قَرْني»؛ رواه البخاري.

ترجمہ: سب سے بہتر زمانہ میرا ہے۔

دین کے ساتھ حاملینِ دین کی حفاظت

جس طرح اللہ نے اپنے دین کی حفاظت فرمائی اسی طرح ان لوگوں کی بھی حفاظت فرمائی جو ہمیشہ سے جگہ جگہ اس دین کو قائم کرتے رہے۔

صحیح مسلم کی حدیث ہے:

«لا تَزالُ طائفةٌ من أمتي ظاهِرين على الحقِّ، لا يضرُّهم من خذَلَهم حتى يأتي أمرُ الله وهم كذلكِ»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: میری امت کی ایک جماعت حق پر قائم رہے گے، اور اگر وہ اسی حالت پر قائم ہوں تو ان کی مخالفت کرنے والا بھی انہیں نقصان نہیں پہنچاسکے گا یہاں تک کہ اللہ کا حکم آجائے ۔

نبیوں کے بعد علماء کی ذمہ داری

اور اس امت کے علماء انبیاء کے وارث ہیں جو گمراہی پر کبھی اتفاق نہیں کرسکتے، اور ہر ایک صدی میں اللہ ایسے شخص کو بھیجے گا جو دین کو دوبارہ سے زندہ کرے گا۔

نبی علیہ السلام کی حدیث ہے:

«إن اللهَ يبعثُ لهذه الأمةِ على رأسِ كلِّ مائةِ سنةٍ من يُجدِّدُ لها دينَها»؛ رواه أبو داود.

ترجمہ: بیشک اللہ اس امت کے لئے ہر سو سال کے بعد ایک ایسے شخص کو پیدا فرمائے گا جو اس دین کو دوبارہ عام کرے گا۔

امت ِمحمدﷺکی خصوصیات

۱ـ گواہی:

اور یہ امت دوسری امتوں پر گواہ ہے کہ ان کے رسولوں نے انہیں ڈرایا،

اللہ تعالی کا فرمان ہے:

(لِتَكُونُوا شُهَدَاءَ عَلَى النَّاسِ) [البقرة: 143].

ترجمہ: تاکہ تم لوگوں پر گواہ ہو جاؤ۔

۲ـ اعتدال:

اور یہ امت سب سے بہترین اور معتدل امت ہے۔

قرآن مجید میں ہے:

(وَكَذَلِكَ جَعَلْنَاكُمْ أُمَّةً وَسَطًا) [البقرة: 143].

ترجمہ: اور اسی طرح ہم نے تمہیں ایک توسط (و اعتدال) والی امت بنایا۔

۳ـ مکمل ترین اصول:

اور اس کے قوانین بھی کامل و مکمل اور عین فطرت کے مطابق ہیں، اور اس کے احکام بھی آسانی فراہم کرنے کی بنیاد پر ہیں،

امت محمد ﷺ کو آسانیاں فراہم کرکے عزت بخشی

فرمان الٰہی ہے:

(يُرِيدُ اللَّهُ بِكُمُ الْيُسْرَ) [البقرة: 185].

ترجمہ: اللہ تمہارے ساتھ نرمی کرنا چاہتا ہے۔

اور پچھلی امتوں کے احکامات میں کافی سختی تھی جبکہ اس امت کے احکامات کا اللہ نےوسیع و آسان کردیا ہے؛

1) کہیں بھی نماز ادا کرلیں:

جیسا کہ پوری زمین مسجد ہے (یعنی جہاں بھی نماز پڑھ لیں ) اور اسکی مٹی خود بھی پاکیزہ ہے اور پاکیزگی کے لئے بھی استعمال ہوتی ہے،

«فأيُّما رجلٍ أدركَتْه الصلاةُ فعنده مسجدُه وطَهورُه».

ترجمہ: جہاں کہیں بھی نماز کا ٹائم ہوجائے وہی جگہ اس کے لئے مسجد ہے اور وہیں اس کی طہارت (مٹی سے تیمم کرنا ) ہے۔

اوراس امت کی آسانی کے لئے ہی تیمم اور موزوں پر مسح کی سہولت دی گئی ہے، اور اس کی عبادات بھی پچھلی امتوں کی عبادات سے افضل ہیں، اور نمازوں کی تعداد تو پانچ ہے لیکن اجر پچاس نمازوں کا ملتا ہے، اور انکی صفوں کو فرشتوں کی صفوں سے تشبیہ دی گئی ہے کہ وہ (فرشتے) اپنے رب کے سامنے پہلی صفوں کو مکمل کرتے ہیں اور بہت پختگی سے صفوں کو درست رکھتے ہیں،

2) صفوں کی فضیلت اور تیمم جیسی نعمت:

صحیح مسلم کی حدیث ہے:

«فُضِّلنا على الناسِ بثلاثٍ: جُعِلَت صُفُوفُنا كصُفُوف الملائِكة، وجُعِلَت لنا الأرضُ كلُّها مسجِدًا، وجُعِلَت تُربتُها لنا طهورًا إذا لم نجِد الماء»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: ہمیں لوگوں پر تین چیزوں کی وجہ سے فضیلت ملی: فرشتوں کی صفوں کی طرح ہمیں صفیں بنانے کا حکم ملا،اور پوری زمین ہمارے لئے مسجد بنادی گئی۔اور اس کی مٹی کو ہمارے لئے پاکیزگی حاصل کرنے کا ذریعہ بنادیا اگر پانی نہ ملے تو(مٹی سے تیمم کر لیتے ہیں)۔

3) کھانے پینے کی چیزیں:

کھانے پینے کی چیزوں میں اللہ نے اس امت کے لئے بہت سی پاکیزہ چیزیں حلال کی ہیں تاکہ اللہ کی اطاعت کرنے میں مدد مل سکے، اور پچھلے لوگوں نے ظلم کیا تھا جس وجہ سے اللہ نے سزا کے طور پر انکی جائز چیزوں کو بھی حرام کردیا تھا،

اللہ سبحانہ وتعالی نے فرمایا:

Description: start-iconفَبِظُلْمٍ مِنَ الَّذِينَ هَادُوا حَرَّمْنَا عَلَيْهِمْ طَيِّبَاتٍ أُحِلَّتْ لَهُمْDescription: end-icon [النساء: 160].

ترجمہ: سو یہود کے گناہوں کی وجہ سے ہم نے حرام کیں ان پر بہت سی پاک چیزیں جو ان پر حلال تھیں۔

4) بوجھ ختم کردیا:

اور اس امت سے اس بوجھ اور طوق کو بھی ہٹادیا جو سابقہ امتوں پر تھا،

اللہ کا فرمان ہے:

Description: start-iconوَيَضَعُ عَنْهُمْ إِصْرَهُمْ وَالْأَغْلَالَ الَّتِي كَانَتْ عَلَيْهِمْDescription: end-icon [الأعراف: 157]،

ترجمہ: اور ان لوگوں پر جو بوجھ اور طوق تھے ان کو دور کرتے ہیں۔

5) توبہ آسان کردی:

اور سابقہ امت کی توبہ یہ تھی کہ انہوں نے اپنے آپ کو قتل کیا:

اللہ تعالی نے حکم دیا:

Description: start-iconفَتُوبُوا إِلَى بَارِئِكُمْ فَاقْتُلُوا أَنْفُسَكُمْ ذَلِكُمْ خَيْرٌ لَكُمْ عِنْدَ بَارِئِكُمْ فَتَابَ عَلَيْكُمْDescription: end-icon [البقرة: 54]،

ترجمہ: اب تم اپنے پیدا کرنے والے کی طرف رجوع کرو، اپنے آپ کو آپس میں قتل کرو، تمہاری بہتری اللہ تعالٰی کے نزدیک اسی میں ہے، تو اس نے تمہاری توبہ قبول کی، وہ توبہ قبول کرنے والا اور رحم و کرم کرنے والا ہے۔

اور اس امت کی توبہ تو صرف اتنی ہے کہ گناہوں پر شرمندہ ہوکر چھوڑ دینا اور دوبارہ نہ کرنے کا عزم کرنا۔

6) ظلم کا بدلہ لینے میں اختیار:

اوریہودیوں کے دین میں قتل اور زخم کا بدلہ لینا تورات میں حتمی طور پر تھا اور دیت کا کوئی تصور نہیں تھا۔ اور نصاری کے دین میں دیت تھی قصاص نہ تھا۔لیکن اس امت کو اللہ تعالی نے قصاص (بدلہ)، معافی اور دیت میں (کسی ایک کا) اختیار دیا ہے۔ اور فرمایا:

Description: start-iconذَلِكَ تَخْفِيفٌ مِنْ رَبِّكُمْ وَرَحْمَةٌDescription: end-icon [البقرة: 178].

ترجمہ: یہ پروردگار کی طرف سے (تمہارے لئے) آسانی اور مہربانی ہے۔

7) مال غنیمت جائز کردیا:

اور مال غنیمت بھی اسی امت کے لئے جائز قرار دیا گیا جو کہ پچھلی امتوں کے لئے حرام تھا۔

ارشاد باری تعالی ہے:

Description: start-iconفَكُلُوا مِمَّا غَنِمْتُمْ حَلَالًا طَيِّبًاDescription: end-icon [الأنفال: 69].

ترجمہ: پس جو کچھ حلال اور پاکیزہ غنیمت تم نے حاصل کی ہے، خوب کھاؤ پیو اور اللہ سے ڈرتے رہو، یقیناً اللہ غفور و رحیم ہے۔

اور اس امت کے لئے خطا، بھول اور وہ گناہ جو انتہائی مجبوری میں ہوگیا ہو،سب معاف ہیں اور دلوں کے وسوسہ پر اس وقت تک کوئی گناہ نہیں جب تک کہ وہ اس وسوسہ کے مطابق کوئی گناہ نہ کرے یا اس کی بات نہ کرے۔

8) بیماری بھی فضیلت کا ذریعہ:

اور اللہ نے پچھلی امتوں پر عذاب اور آزمائش کے لئے بیماریاں دیں جبکہ اس امت کا کوئی فردِ مومن اگر بیماری کی وجہ سے فوت ہوجائے تو وہ شہید ہے۔

بخاری و مسلم کی حدیث ہے:

«الطاعونُ شهادةٌ لكل مُسلمٍ»؛ متفق عليه.

ترجمہ: طاعون ہر مسلمان کی شہادت ہے۔

9) دوسری امتوں پر رعب:

اگر امت مسلمہ دین کو مضبوطی سے تھام لے تودوسری امتوں پر اس کا ایک رعب بٹھا دیا گیا ہے، جیساکہ نبی علیہ السلام نے فرمایا:

«نُصِرتُ بالرُّعبِ مسيرة شهرٍ».

ترجمہ: مجھے ایک مہینہ کی مسافت کا رعب عطا کیا گیا۔

امت محمدﷺکو خصوصی ہدایات

اور اس امت کی عزت اور مکمل دین کی وجہ سے عقیدے میں کافروں کی مشابہت سے ممانعت آئی ہے؛ اور قبروں پر عمارت بنانے یا سجدہ گاہ بنانے سے منع کیا گیا ہے۔

صحیح مسلم کی حدیث ہے:

«ألا وإن من كان قبلَكم كانوا يتَّخِذون قبورَ أنبيائهم وصالحِيهم مساجد، ألا فلا تتَّخِذوا القبورَ مساجد، إني أنهاكُم عن ذلك»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: خبردار! تم سے پہلے لوگ اپنے انبیاء اور نیک شخصیات کی قبروں کو مسجد بنادیا کرتے تھے، خبردار! تم قبروں کو مسجد نہ بنانا، بیشک میں تمہیں اس سے منع کررہا ہوں۔

اور تصویریں بھی منع ہوگئیں۔ جب ام سلمہ رضی اللہ عنھا نے ایک کنیسہ (نصاری کی عبادت کی جگہ)دیکھا جس میں تصویریں تھیں تو نبی علیہ السلام نے فرمایا:

«أولئكِ إذا ماتَ فيهم العبدُ الصالحُ - أو الرجلُ الصالحُ - بنَوا على قبره مسجدًا وصوَّروا فيه تلك الصُّوَر، أولئكِ شِرار الخلقِ عند الله»؛ رواه البخاري.

ترجمہ: یہ وہ لوگ ہیں کہ جب ان کا کوئی نیک آدمی فوت ہوجاتا تو اس کی قبر پر مسجد بناتے اور اس میں (نیک لوگوں کی) تصویریں بناتے، یہ اللہ کے نزدیک بدترین لوگ تھے۔

اور ظاہری حالت میں بھی دوسری (غیر مسلم) امتوں کی مشابہت سے منع کیا گیا ہے؛ اسی لئے داڑھی کو بڑھانے (لمبا کرنے)کا حکم ہےاور مونچھوں کو مونڈھنے کا، اور انکی عبادت میں بھی مشابہت سے بچنا ہے؛ جیسا کہ اہل کتاب کی مخالفت میں سحری کھانی ہے(اہل کتاب سحری نہیں کرتے تھے)، یہاں تک کہ دیہات اور جانوروں کے معاملے میں بھی انکی مشابہت کرنا منع ہے۔اور اس امت کو صرف دو عیدیں دی گئی ہیں تیسری کوئی عید نہیں۔

امت محمدﷺکے اعزازات

۱ـ عمر کم اور ثواب زیادہ:

اور امت محمدﷺ کا اس دنیا میں وقت بہت کم ہے، نبی ﷺ نے فرمایا:

«إنما بقاؤُكم فيما سَلَفَ قبلَكم من الأُمم كما بين صلاة العصر إلى غروب الشمس»؛ رواه البخاري.

ترجمہ: پچھلی امتوں کے مقابلے میں تمہاری دنیاوی زندگی عصر اور مغرب کے درمیانی وقت کی طرح (بہت کم ) ہے۔

اور اس امت کے افراد کی زندگی ساٹھ سے ستر سال کے درمیان ہے لیکن بہت بابرکت ہے جس کی مثال نبی علیہ السلام نے بارش سے دی ہے اور فرمایا:

«مثَلُ أمتي مثَلُ المطَر»؛ رواه الترمذي.

ترجمہ: میری امت کی مثال بارش کی طرح ہے۔(یعنی: بارش کاپانی ہر جگہ پہنچ جاتا ہے اور اس سے فصلیں مکمل طور پرترو تازہ ہوجاتی ہیں اور یہ بابرکت پانی ہے)۔

ثواب میں اضافہ کی مثالیں

۱ـ وہ فضائل جن کا تعلق اوقات سے ہے:

اور صبح سویرے کے کاموں میں برکت رکھی گئی ہے، اور اللہ نے اس امت کے رات اور دن میں بھی برکت رکھی ہے، اور ایک دن یا رات کے نیک اعمال کا ثواب مہینوں اور سالوں کی عبادت سے افضل کردیا ہے؛ جیسا کہ لیلۃ القدر (صرف ایک رات) کی عبادت ہزار مہینوں کی عبادت سے بہتر ہے۔ عرفہ کا روزہ پچھلے اور اگلے ایک سال کے گناہ معاف کرنے کا سبب بنتا ہے۔اور عاشوراء (دس محرم) کے روزے سے پچھلے ایک سال کے گناہ معاف ہوجاتے ہیں۔ اور ہر مہینے کے تین روزے (۱۳۔۱۴۔۱۵) پورے سال کے روزوں کے برابر ہیں۔

۲ـ وہ فضائل جن کا تعلق جگہ سے ہے:

اور اللہ نے اس امت کو بہت مبارک اور فضیلت والے مقامات عطا کر کے بھی عزت بخشی ہیں؛ جیسا کہ مسجد حرام میں ایک نماز کا ثواب ایک لاکھ کے برابر ہےاور مسجد نبوی میں ایک نماز کا ثواب دوسری مساجد کے مقابلے میں ایک ہزار نمازوں کا برابر ہے۔اور مسجد اقصی میں ایک نماز پانچ سو نمازوں کے برابر ہے۔

۳ـ نماز باجماعت اور تلاوت قرآن کی فضیلت:

اور چھوٹے چھوٹے اعمال کا ثواب بھی اللہ کے نزدیک بہت زیادہ ہے؛ جیساکہ اگر کوئی شخص عشاء کی نماز باجماعت پڑھتا ہے تو اس کا ثواب آدھی رات کے قیام کے برابر ہےاور اگر اس کے ساتھ فجر بھی باجماعت ادا کرتا ہے تا اس کی فضیلت پوری رات کے قیام کی طرح ہے۔اور جو قرآن کا ایک حرف پڑھتا ہے اسے ہر حرف ہر نیکی ملتی ہے۔

۴ـ زبانی عبادت کے فضائل:

و«من قال: سبحان الله وبحمده مائةَ مرَّة؛ حُطَّت عنه خطاياه وإن كانت مثلَ زبَد البحر»، و«من قال: سبحان الله العظيم وبحمده غُرِسَت له نخلةٌ في الجنة»،

اور جو شخص ’سبحان الله وبحمده‘ سو مرتبہ کہے تواس کے گناہ معاف کردیئے جاتے ہیں اگرچی سمندر کی جھاگ کے برابر ہوں۔

اور جو شخص یہ کہتا ہے :

سبحان الله العظيم وبحمده

تو اس کے لئے جنت میں کھجور کا درخت لگادیا جاتا ہے۔

و«من قال: سبحان الله مائةَ مرَّة كُتِبَت له ألفُ حسنةٍ، أو حُطَّت عنه ألفُ خطيئةٍ»، و«من صلَّى اثنتَي عشرة ركعة في يومٍ وليلةٍ بنَى الله له بهنَّ بيتًا في الجنة».

اور جو شخص سو مرتبہ سبحان اللہ کہے: اس کے لئے ایک ہزار نیکیاں لکھ دی جاتی ہیں یا ایک ہزار گناہ معاف کردیئے جاتے ہیں۔اور جو شخص ایک دن اور رات میں بارہ رکعت (سنت) پڑھتا ہے اس کے لئےجنت میں ایک گھر بنادیا جاتا ہے۔

مزید انعامات

۱ـ جمعہ کا دن:

اس امت کو بھلائی کے بہت زیادہ مواقع فراہم کئے گئے ہیں؛ سب سے افضل ترین دن اسی امت کو عطا کیا گیا، نبی ﷺ نے فرمایا:

«هُدِينا إلى الجُمعة وأضلَّ الله عنها من كان قبلَنا»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: ہمیں جمعہ کا دن عطا کیا گیا اور اللہ نے پچھلی امتوں کو اس دن کے حاصل کرنے کا شرف نہیں بخشا۔

۲،۳ـ سلام اور اٰمین:

اور سلالم کا لفظ بھی اجرِ عظیم کے ساتھ اسی امت کو عطا کیا گیاجبکہ دوسری امتیں اس سے محروم رہیں۔اللہ کے نبی ﷺ نے فرمایا:

«ما حسَدَتكم اليهودُ على شيءٍ ما حسَدَتكم على السلام والتأمين».

ترجمہ: یہودیوں کو تم سے کسی چیز پر اتنا حسد نہیں ہوتا جتنا سلام اور آمین پر ہوتا ہے۔

۴ـ دُگنا اجر:

اور اس امت کے اجر کو بھی ڈبل (دُہرا) کردیا گیا۔

اللہ تعالی نے فرمایا:

* يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ وَآمِنُوا بِرَسُولِهِ يُؤْتِكُمْ كِفْلَيْنِ مِنْ رَحْمَتِهِ) [الحديد: 28].

ترجمہ: اے لوگوں جو ایمان لائے ہو! اللہ سے ڈرتے رہا کرو اور اس کے رسول پر ایمان لاؤ اللہ تمہیں اپنی رحمت کا دوہرا حصہ دے گا۔

نبی علیہ السلام نے فرمایا:

«لكمُ الأجرُ مرتين. فغضِبَت اليهودُ والنصارى، فقالوا: نحن أكثرُ عملاً وأقلُّ عطاءً! قال الله: هل ظلمتُكم من حقِّكم شيئًا؟. قالوا: لا، قال: فإنه فضلِي، أُعطِيه من شِئتُ»؛ رواه البخاري.

ترجمہ: تمہارے لئے دُگنا اجر ہے تو یہود و نصاری غصہ ہوگئے، اور کہنے لگے: ہمارا عمل زیادہ ہے اور ثواب کم! اللہ نے فرمایا: کیا تمہارے حق میں کوئی کمی کی گئی ہے؟ کہنے لگے: نہیں ، اللہ نے فرمایا: یہ میرا فضل ہے میں جسے چاہوں عطا کروں۔

۵ـ پچاس صحابہ کا اجر:

اور آخری زمانے میں اس دین پر چلنے والے کا ثواب پچاس صحابہ کے اجر کے برابر ہے، اور صحابہ کا اجر تو اس سے کہیں زیادہ ہے۔اور فتنہ کے دور میں عبادت کا ثواب نبی ﷺ کی ہجرت کے برابر ہے۔

۶ـ دوسری امتوں پر برتری:

اور ہماری امت کے فضائل دوسری امتوں کے درمیان اس طرح بھی واضح ہوتے ہیں کہ امت محمدیہﷺ دوسری امتوں کو اپنے بہترین دین کی دعوت دیتی ہے۔

اللہ کے نبی ﷺ کا فرمان ہے :

«فمن آمنَ كان له أجرُه مرتين»،

ترجمہ: اب جو شخص ایمان لے آیا اس کے لئے دوگنا ثواب ہے۔

اللہ تعالی نے فرمایا:

(الَّذِينَ آتَيْنَاهُمُ الْكِتَابَ مِنْ قَبْلِهِ هُمْ بِهِ يُؤْمِنُونَ (52) وَإِذَا يُتْلَى عَلَيْهِمْ قَالُوا آمَنَّا بِهِ إِنَّهُ الْحَقُّ مِنْ رَبِّنَا إِنَّا كُنَّا مِنْ قَبْلِهِ مُسْلِمِينَ (53) أُولَئِكَ يُؤْتَوْنَ أَجْرَهُمْ مَرَّتَيْنِ) [القصص: 52- 54].

ترجمہ: جس کو ہم نے اس سے پہلے کتاب عنایت فرمائی وہ تو اس پر ایمان رکھتے ہیں۔ اور جب اس کی آیتیں ان کے پاس پڑھی جاتی ہیں تو وہ کہہ دیتے ہیں کہ اس کے ہمارے رب کی طرف سے حق ہونے پر ہمارا ایمان ہے ہم تو اس سے پہلے ہی مسلمان ہیں۔ یہ دوہرا اجر دیتے جائیں گے۔

اور جس طرح اللہ نے اس امت کو دین کے ذریعہ عزت دی ہے اسی طرح دنیا میں رزق کے بھی ایسے مواقع فراہم کئے جو دوسری امتوں کو عطا نہ کئے گئے۔

رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:

«وأُعطِيتُ الكَنزَيْن: الأحمر والأبيض - أي: الذهب والفِضة -»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: مجھے دو خزانے دیئے گئے: ایک لال اور دوسرا سفید۔ یعنی سونا اور چاندی۔

اور صحیح بخاری کی حدیث ہے:

«فبينما أنا نائمٌ أُوتِيتُ بمفاتيح خزائن الأرض فوُضِعَت في يدي»؛ رواه البخاري.

ترجمہ: میں سورہا تھا مجھے زمین کے خزانے عطا کئے گئے اور میرے ہاتھوں میں رکھے گئے۔

ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ نے فرمایا:

"وقد ذهبَ رسولُ الله - صلى الله عليه وسلم - وأنتم تمتثِلُونَها"؛ أي: تستخرِجون ما فيها من الخيرات والكُنوز.

ترجمہ: اللہ کے رسولﷺ تو دنیا سے رخصت ہوگئے اور تم ان خزانوں کونکال کو استعمال کررہے ہو۔

۷ـ بیک وقت پوری امت پر عذاب نہیں آئے گا:

اور اللہ نے اپنے فضل سے ہی اس اکٹھی امت کو(ایک ساتھ) بہت سی ہلاکتوں سے بچایا ہے جن کی وجہ سے دوسری امتیں ہلاک ہوگئیں؛ بھوک کی وجہ سے، غرق ہونے کی وجہ سے، تیز ہوا کی آندھی کی وجہ سے، زمین میں دھنس جانے کی وجہ سے اور چیخ (وغیرہ) کی وجہ سے ۔(مطلب یہ ہے کہ اس امت پر ایک وقت میں ایسا عذاب نہیں آتا جو پوری امت کو تباہ کردے۔

دو خوشخبریاں اور ایک غم

فرمان نبوی ہے:

«سألتُ ربي ثلاثًا فأعطاني ثِنتَيْن ومنَعَني واحدةً؛ سألتُ ربي ألا يُهلِكَ أمتي بالسَّنَة - أي: بالجُوع - قأعطانِيها، وسألتُه ألا يُهلِكَ أمتي بالغرَق فأعطانِيها، وسألتُه ألا يجعلَ بأسَهم بينهم فمنَعنيها»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: میں نے اپنے رب سے تین چیزیں مانگٰیں تو اس نے مجھے دو تو دیدیں لیکن تیسری سے انکار کردیا؛ ایک دعا میں نے یہ مانگی کہ میری امت کو بھوک سے ہلاک نہ کرنا تو یہ قبول ہوگئی۔ اور دوسری دعا یہ مانگی کہ میری امت کو غرق کرکے ہلاک نہ کرے تو یہ بھی قبول ہوگئی۔ اور تیسری دعا جو قبول نہ ہوئی وہ یہ تھی کہ امت کے افراد کے درمیان لڑائی جھگڑے ہوں۔

مزید سہولتیں

اور اللہ نے اپنے نبیﷺ کو یہ سہولت دی کہ ان پران کے علاوہ دشمنوں کو مسلط نہیں کرے گا اگرچہ وہ پوری دنیا سے اکٹھے ہوکر آجائیں۔اور اللہ نے امت محمدﷺ کو عذاب سے بچنے کے دو اَمان(حفاظت کا ذریعہ) دیں؛ ایک اَمان نبیﷺ کی حیات طیبہ ہے لیکن یہ امان نبی ﷺ کی وفات کی وجہ سے ختم ہوگئی۔ اور دوسری امان اللہ تعالی سے استغفار(بخشش کی دعا) ہے،

اللہ تعالی کا فرمان ہے:

(وَمَا كَانَ اللَّهُ لِيُعَذِّبَهُمْ وَأَنْتَ فِيهِمْ وَمَا كَانَ اللَّهُ مُعَذِّبَهُمْ وَهُمْ يَسْتَغْفِرُونَ) [الأنفال: 33].

ترجمہ: اور اللہ تعالٰی ایسا نہ کرے گا کہ ان میں آپ کے ہوتے ہوئے ان کو عذاب دے اور اللہ ان کو عذاب نہ دے گا اس حالت میں کہ وہ استغفار بھی کرتے ہوں ۔

فوت ہونے کے بعد بھی فضیلت

اور اس امت کو زندگی میں عزت حاصل ہونے کے ساتھ ساتھ فوت ہونے کے بعد بھی عزت ملی؛ اسی لئے ہمارے لئے لحد ہے اور دوسروں کے لئے گڑھا۔

قیامت کے دن امت محمدﷺ پر انتہائی قیمتی انعامات

۱ـ اور قیامت میں سب سے پہلے ہمارے نبی ﷺ ہی قبر سے نکلیں گے۔

۲ـ اور وہی پہلی شفاعت والے ہیں اور سب سے پہلے انہی کی شفاعت قبول کی جائے گی۔

۳ـ اور قیامت کے میدان میں تمام امتوں کے درمیان ہی اس امت کو پہچان لیا جائے گاکیونکہ اس کے وضوء کے اعضاء چمک رہے ہوں گے۔

نبی علیہ السلام کا فرمان ہے:

«إن أمتي يُدعَون يوم القيامة غُرًّا مُحجَّلين من آثار الوضوء»؛ رواه البخاري.

ترجمہ: بیشک میری امت کو قیامت کے دن اس حال میں بلایا جائے گا کہ ان کے پانچ اعضاء (چہرہ، دونوں ہاتھ اور دونوں پاؤں) وضوء کی وجہ سے چمک رہے ہوں گے۔

۴ـ اور ہر نبی کو ایک دعا کا موقع دیا گیا کہ جو مانگیں گے قبول ہوگا، ہمارے نبی ﷺ نے اپنی دعا کو قیامت کے دن اپنی امت کے لئے بچاکر رکھا ہے؛

صحیح بخاری و مسلم کی حدیث ہے:

«لكل نبيٍّ دعوةٌ مُستجابةٌ، فتعجَّل كلُّ نبيٍّ دعوتَه، وإني اختبأتُ دعوتي شفاعةً لأُمَّتي يوم القيامة، فهي نائلةٌ - إن شاء الله - من مات لا يُشرِكُ بالله شيئًا»؛ متفق عليه.

ترجمہ: ہر نبی کو ایک قبول ہونے والی دعا کااختیار دیا گیا، اور ہر نبی نے وہ دعا دنیا میں ہی مانگ لی، لیکن میں نے اپنی دعا کوقیامت والے دن اپنی امت کی شفاعت کے لئے بچاکر رکھا ہے، اور یہ إن شاء اللہ ہر اس شخص کو حاصل ہوگی جو اس حالت میں فوت ہو کہ وہ اللہ کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرتا ہو۔

۵ـ اور سب سے پہلے امت محمدﷺ ہی پل صراط سے گزرے گی،

اللہ کے رسول ﷺ کا فرمان ہے:

«ويُضربُ الصِّراطُ بين ظهرَي جهنَّم، فأكونُ أنا وأمتي أولَ من يُجيزُ»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: اور پُل صراط کو جہنم کے اوپر درمیان میں رکھا جائے گا، اور میں اور میری امت سب سے پہلے اس کو پار کریں گے۔

۶ـ ہم اخری امت ہونے کے باوجود قیامت میں سب سے آگے ہوں گے۔

۷ـ اور ہمارے نبی ﷺ ہی سب سے پہلے جنت دروازہ کھلوائیں گے۔

صحیح مسلم میں ہے:

«آتِي بابَ الجنة يوم القيامة فأستفتِحُ - أي: أطلبُ فتحَه -، فيقول الخازِنُ: من أنت؟ فأقول: محمد. فيقول: بك أُمِرتُ، لا أفتحُ لأحدٍ قبلَكَ»؛ رواه مسلم.

ترجمہ: قیامت کے دن میں جنت کے دروازے پر آکر کھلواؤں گا ـ یعنی اس کو کھولنے کا کہوں گا ـ توخازن (جنت کے دروازے کا پہرہ دار) کہےگا ۔کہ آپ کون ہیں؟ میں کہوں گا: محمدﷺ۔ تو وہ کہے گا کہ آپ کےلئے ہی مجھے (سب سے پہلےدروازہ کھولنےکا) حکم دیا گیا ہے، اور آپ سے پہلے سب کے لئےمنع ہے۔

۸ـ اور سب سے پہلے امت محمدﷺ ہی جنت میں جائے گی،

۹ـ اور وہی سب سے زیادہ جنتی ہوں گے، ان کی اسّی (۸۰) صفیں ہوں گی، اور دیگر تمام امتوں کی کل چالیس صفیں ہوں گی۔

حدیث میں آتا ہے:

«أهلُ الجنة عشرُون ومائةُ صفٍّ، وهذه الأمةُ من ذلك ثمانُون صفًّا»؛ رواه أحمد.

وفيهم «سَبعون ألفًا يدخُلون الجنةَ بغير حسابٍ ولا عذابٍ»؛ متفق عليه. قال - عليه الصلاة والسلام -: «فاستزَدتُّ ربي - عز وجل - فزادَني مع كلِّ واحدٍ سبعين ألفًا»؛ رواه أحمد.

ترجمہ: اہل جنت کی ایک سو بیس (120) صفیں ہوں گی، جن میں سے اَسّی (80) صفیں اس امت کی ہوں گی(مسنداحمد)۔

۱۰ـ اور ان میں ستر ہزار افراد ایسے ہوں گے جو بغیر حساب و عذاب کے جنت میں جائیں گے(بخاری و مسلم)۔نبی علیہ السلام نے فرمایا: میں نے اپنے رب سے اور زیادہ کی دعا کی تو اس نے میرے لئے ہر ایک کے ساتھ ستر ہزار افراد کا اضافہ فرمادیا(مسند احمد)۔

اے مسلمانو!

اس امت کے مومن کی بڑی فضیلت، عزت اور شرف ہے اور اس کے ساتھ اللہ کی مدد ہے۔اسی کے لئے لائق ہے کہ وہ اپنے دین پر فخر کرے، اور اسے مضبوطی سے تھامے، اور دوسروں کو بھی اس کی دعوت دے، اور اہل باطل کی مشابہت سے بچے، اور اس امت کا فرد ہونے پر اللہ کا شکر کرے، اور مزید نیکیاں کرتا رہے۔

أعوذ بالله من الشيطان الرجيم:

میں شیطان مردود سے اللہ کی پناہ مانگتا ہوں:

(قُلْ إِنَّنِي هَدَانِي رَبِّي إِلَى صِرَاطٍ مُسْتَقِيمٍ دِينًا قِيَمًا مِلَّةَ إِبْرَاهِيمَ حَنِيفًا وَمَا كَانَ مِنَ الْمُشْرِكِينَ) [الأنعام: 161].

ترجمہ: آپ کہ دیجئے کہ مجھ کو میرے رب نے ایک سیدھا راستہ بتایا ہے کہ وہ دین مستحکم ہے جو طریقہ ابراہیم (علیہ السلام) کا جو اللہ کی طرف یکسو تھے اور وہ شرک کرنے والوں میں سے نہ تھے۔

اللہ مجھے اور آپ کو قرآن عظیم میں برکت عطا فرمائے، اور اس کی آیات اور حکمت والی نصیحتوں سے ہم سب کو فائدہ پہنچائے۔ میں اپنی بات یہاں ختم کرتا ہوں اور اللہ سے اپنے اور تمام مسلمانوں کے لئے ہر گناہ کی مغفرت مانگتا ہوں، آپ سب بھی مغفرت کی دعا کریں۔

دوسرا خطبہ

ہر قسم کی تعریف اللہ کے لئے خاص ہے اس کی بھلائیوں پر، اور اسی کا شکر ہے اسکی توفیق اور احسانات پر، اور میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی عبادت کے لائق نہیں، وہ اکیلا ہے اس کا کوئی شریک نہیں،اسی کی شان کی عظمت بیان کرتا ہوں،اور گواہی دیتا ہوں کہ محمد ﷺ اس کے بندے اور رسول ہیں، اللہ ان پر اور ان کے آل پر اور ان کے صحابہ پر بے شمار رحمتیں اور درود بھیجے۔

اے مسلمانو!

اس امت کا کوئی بھی فرد اس وقت تک عظمتوں کو حاصل نہیں کرسکتا جب تک کہ دین کے اصولوں اوراحکامات کو نہ اپنائے؛ اللہ کی توحید، محمدﷺ کے رسول ہونے کی گواہی کاعملی ثبوت، صحیح عبادت اور مخلوق کے ساتھ نیکی (وغیرہ)۔ اور جو ان بھلائیوں کو حاصل نہیں کرسکا اُسکا اس امت میں شمار ہونے کا کوئی فائدہ نہیں۔

اللہ تعالی نے فرمایا:

(وَمَا أَمْوَالُكُمْ وَلَا أَوْلَادُكُمْ بِالَّتِي تُقَرِّبُكُمْ عِنْدَنَا زُلْفَى إِلَّا مَنْ آمَنَ وَعَمِلَ صَالِحًا) [سبأ: 37].

ترجمہ: اور تمہارا مال اور اولاد ایسی چیز نہیں کہ تم کو ہمارا مقرب بنادیں ہاں (ہمارا مقرب وہ ہے) جو ایمان لایا اور عمل نیک کرتا رہا (ایسے ہی لوگوں کو ان کے اعمال کے سبب دگنا بدلا ملے گا اور وہ خاطر جمع سے بالا خانوں میں بیٹھے ہوں گے)۔

اور کچھ لوگوں نے نبی ﷺ کو دیکھا تھا لیکن پھر بھی ایمان نہیں لائے، تو صرف انہیں دیکھنا بھی کسی کام نہ آیا، اور جسے اللہ رسوا کردے اسے کوئی عزت نہیں دے سکتا، اور فضیلت اور عزت تو ایمان، اتباع ، نیکی کے کاموں میں آگے بڑھنے اور فضائل کو حاصل کرنے سے ہی ملتی ہے۔

نبی علیہ السلام پر درود و سلام

پھر جان لو کہ اللہ تعالی نے تمہیں اپنے نبی ﷺ پر درود و سلام بھیجنے کا حکم دیتے ہوئے قرآن مجید میں ارشاد فرمایا:

Description: start-iconإِنَّ اللهَ وَمَلَائِكَتَهُ يُصَلُّونَ عَلَى النَّبِيِّ يَا أَيُّهَا الذِيْنَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَيْهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِيْمًاDescription: end-icon [الأحزاب: 56].

ترجمہ: اللہ تعالٰی اور اس کے فرشتے اس نبی پر رحمت بھیجتے ہیں۔ اے ایمان والو! تم (بھی) ان پر درود بھیجو اور خوب سلام (بھی) بھیجتے رہا کرو ۔

خلفائے راشدین اور تمام صحابہ کے لئے دعائیں

یا اللہ! اپنے نبی محمدﷺ پر رحمتیں اور درود نازل فرما، یا اللہ ! ہدایت یافتہ خلفاء ـ ابوبکر، عمر، علی عثمان رغی اللہ عنھم ـ سے بھی راضی ہوجا جنہوں نےحق کے ساتھ فیصلے کئے اور اسی کے ساتھ عدل کیا کرتے تھے، اور تمام صحابہ سے بھی راضی ہوجا، اور اپنے جود و کرم سے ان کے ساتھ ساتھ ہم سے بھی راضی ہوجا، اے سب سے زیادہ کرم کرنے والے۔

تمام مسلمانوں کے لئے دعائیں

یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو عزت عطا فرما۔ اور شرک اور مشرکو ں کو رسوا کردے، اور دین کے دشمنوں کو رسوا کردے،

یا اللہ! اس ملک اور تمام مسلم ممالک کو امن و سکون اور کا گہوارہ بنادے۔

ترجمہ: یا اللہ! بیشک ہم قول و عمل میں تجھ سے اخلاص کی دعا کرتے ہیں۔ یا اللہ! ہر جگہ کے کمزور مسلمانوں کی مدد فرما۔

یا اللہ! ان کا حامی و ناصر اور مددگارع معاون بن جا۔ یا اللہ! اے طاقتور! اے غالب ہونے والی ذات! جلد ہی ان کی مدد اور آسانی فرما۔ یا اللہ! اپنے اور مسلمانوں کے دشمنوں کو پریشانیوں اور مصیبتوں میں مبتلاء فرمائے۔

یا اللہ! اے تمام جہانوں کے رب! مسلمانوں کی بات حق پر جمع فرمادے۔

یا اللہ! یا رب العالمین ! ہمارے امام (امیر) کو ہدایت کی توفیق عطا فرما، اور انہیں اپنی رضا کے کام کرنے کی توفیق عطا فرما، اور انہیں عافیت اور شفا عطا فرما، اور تمام مسلمانوں کے امیروں کواپنی کتاب پر عمل کرنے اور شریعت کو نافذ کرنے کی توفیق عطا فرما۔

آخر میں چند نصیحتیں

اللہ کے بندو!

)إِنَّ اللَّهَ يَأْمُرُ بِالْعَدْلِ وَالْإِحْسَانِ وَإِيتَاءِ ذِي الْقُرْبَى وَيَنْهَى عَنِ الْفَحْشَاءِ وَالْمُنْكَرِ وَالْبَغْيِ يَعِظُكُمْ لَعَلَّكُمْ تَذَكَّرُونَ( [النحل: 90].

ترجمہ: اللہ تعالٰی عدل کا، بھلائی کا اور قرابت داروں کے ساتھ سلوک کرنے کا حکم دیتا ہے اور بےحیائی کے کاموں، ناشائستہ حرکتوں اور ظلم و زیادتی سے روکتا ہے، وہ خود تمہیں نصیحتیں کر رہا ہے کہ تم نصیحت حاصل کرو۔

اللہ کا ذکر کریں جو عظیم و جلیل ہے وہ تمہارا ذکر کرے گا، اور اسکے احسانات اور نعمتوں پر شکر ادا کرو وہ تمہیں مزید دے گا، اور اللہ کا ذکر ہی سب سے بڑا ہے، اور اللہ جانتا ہے جو تم کرتے ہو۔

***

 

 

ملاحظہ کیا گیا 5031 بار آخری تعدیل الثلاثاء, 01 تشرين1/أكتوير 2013 14:57

جدید خطبات

خطبات

  • نیکیوں کا تحفظ اور میڈیا کے لیے ہدایات
    نیکیوں کا تحفظ اور میڈیا کے لیے ہدایات
    ﷽ فضیلۃ  الشیخ ڈاکٹر جسٹس حسین بن عبد العزیز آل شیخ حفظہ اللہ نے 07-رمضان- 1438 کا خطبہ جمعہ مسجد نبوی میں بعنوان " نیکیوں کا تحفظ اور میڈیا کے لیے ہدایات" ارشاد فرمایا ، جس میں انہوں نے کہا کہ تھوڑے وقت میں زیادہ  نیکیاں سمیٹنا بہت اعلی ہدف  ہے اور ماہِ رمضان اس ہدف کی تکمیل کیلیے معاون ترین مہینہ ہے چنانچہ اس مہینے میں قیام اور صیام  کا اہتمام کر کے ہم اپنے سابقہ گناہ معاف کروا سکتے ہیں  اور دیگر نیکیاں بجا لا کر اپنے نامہ اعمال کو نیکیوں سے پر کر سکتے ہیں، انہوں نے یہ بھی کہا کہ نیکیاں کرنے کے بعد انہیں تحفظ دینا بھی انتہائی اہم کام ہے، بہت سے لوگ اس جانب توجہ نہیں دیتے اور اپنی محنت پر پانی پھیر دیتے ہیں، حقیقت یہ ہے کہ اپنی محنت دوسروں کے کھاتے میں ڈالنے والے ہی مفلس ہوتے ہیں جو کہ قیامت کے دن حقوق العباد کی پامالی کے صلے میں اپنی نیکیاں دوسروں میں تقسیم کروا بیٹھیں گے، لہذا اگر کسی سے کوئی غلطی ہو بھی جائے تو فوری معافی مانگ لیا کرے اسی میں نجات ہے۔ پھر انہوں نے کہا کہ روزے رکھتے ہوئے اصل ہدف یعنی حصول تقوی…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • عبادات کا مہینہ ماہ رمضان
    عبادات کا مہینہ ماہ رمضان
    بسم الله الرحمن الرحيم فضیلۃ الشیخ پروفیسر ڈاکٹر علی بن عبد الرحمن الحذیفی حفظہ اللہ نے 30 -شعبان-1438  کا خطبہ جمعہ  بعنوان " عبادات کا مہینہ ماہ رمضان" ارشاد فرمایا جس میں انہوں نے  کہا کہ انسان نیکی کرے یا بدی اس کا نفع یا نقصان صرف انسان کو ہی ہوتا ہے وہ اپنی بدی سے کسی اور کو نقصان نہیں پہنچاتا، چنانچہ ماہ رمضان کو اللہ تعالی نے خصوصی فضیلت بخشی  اور اس ماہ میں تمام تر عبادات یکجا فرما دیں ، اس مہینے میں نماز، روزہ، عمرے کی صورت میں حج اصغر، زکاۃ ، صدقات و خیرات اور دیگر نیکی کے کام سر انجام دئیے جاتے ہیں، روزے داروں کیلیے جنت میں خصوصی دروازہ ہے اور ہر نیکی کا بدلہ اس کی نوعیت کے مطابق دیا جائے گا بالکل اسی طرح گناہ کا بدلہ بھی اسی کے مطابق ہو گا، پھر انہوں نے کہا کہ: آپ ﷺ شعبان کے آخر میں رمضان کی خوشخبری دیتے تھے، نیز رمضان سے پہلے تمام گناہوں سے توبہ   اور حقوق العباد کی ادائیگی استقبالِ رمضان میں شامل ہے، نیز روزے کے دوران جس قدر مختلف نیکیاں قیام، صیام، صدقہ، خیرات، غریبوں کی مدد، کسی کا ہاتھ بٹانا وغیرہ کی جائیں تو ان…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • نعمتوں کو دوام بخشنے کا راز
    نعمتوں کو دوام بخشنے کا راز
    بسم الله الرحمن الرحيم فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر جسٹس صلاح  بن محمد البدیر حفظہ اللہ نے 16-شعبان- 1438  کا مسجد نبوی میں خطبہ جمعہ بعنوان "شکر،،، نعمتوں کو دوام بخشنے کا راز" ارشاد فرمایا، جس میں انہوں نے  کہا کہ شکر گزاری سے نعمتوں میں اضافہ اور دوام حاصل ہوتا ہے، کیونکہ اللہ تعالی اپنے وعدے کے مطابق شکر گزاروں کو مزید نعمتوں سے نوازتا ہے، انہوں نے کہا کہ نعمتوں کا صحیح استعمال  اور گناہوں سے دوری  دونوں کا نام شکر ہے، اگر اللہ کی نعمتوں پر تکبر اور گھمنڈ کیا جائے تو یہ صریح ناشکری ہے اور نعمتوں کے زائل ہونے کا پیش خیمہ ہے، کسی فاسق و فاجر کو نعمتیں حاصل ہوں تو یہ اللہ تعالی کی طرف سے ڈھیل ہوتی ہے اور اللہ تعالی ڈھیل کو اچانک ختم   فرماتا ہے، انہوں نے یہ بھی کہا کہ شرعی احکامات سے بچنے کیلیے حیلے بہانے تلاش کرنا فاسق لوگوں کا وتیرہ ہے، جبکہ مومن  کا اخلاق اس سے کہیں بلند ہوتا ہے، انہوں نے یہ بھی کہا کہ قناعت پسندی شکر گزاری کا سبب بنتا ہے، اور اگر کوئی شخص اللہ تعالی کی تقسیم پر راضی نہ ہو تو وہ ہمیشہ ذہنی تناؤ کا شکار رہتا ہے،  آخر میں …
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • ماہِ رجب کی حرمت اور بداعمالیاں
    ماہِ رجب کی حرمت اور بداعمالیاں
    ﷽ پہلا خطبہ تمام تعریفیں اللہ تعالی کیلیے ہیں وہی دنوں اور مہینوں  کا دائرہ چلانے والا ہے، وہ سالوں اور برسوں کو قصہ پارینہ بنانے والا ہے، وہ تمام مخلوقات کو جمع فرمائے گا، جب تک دن، مہینے اور سال یکے بعد دیگرے آتے رہیں گے نیز باد صبا اور پچھمی ہوائیں چلتی رہیں  گی میں تمام معاملات پر اسی کا حمد خواں رہوں گا، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبودِ بر حق نہیں، اس کا کوئی شریک نہیں، اس نے ہمارے لیے دین مکمل کیا اور نعمتیں پوری فرمائیں اور ہمارے لیے دین اسلام پسند کیا، مبنی بر یقین یہ سچی گواہی   دلوں کو ٹھنڈ پہنچاتی ہے اور قبر میں بھی فائدہ دے گی، نیز جس دن صور پھونکا جائے گا تب ہمیں با وقار بنا دے گی، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ محمد ﷺ اس کے بندے اور رسول ہیں، آپ نے پیغام رسالت پہنچا دیا اور امانت ادا کر دی ،امت کی خیر خواہی فرمائی، اور موت تک راہِ الہی میں جہاد کرنے کا حق ادا کر دیا ۔ اللہ تعالی آپ پر ، آپ کی آل، صحابہ کرام اور ان کے نقشِ قدم پر چلنے والے تمام لوگوں…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم
  • با اثر شخصیت کیسے بنیں؟
    با اثر شخصیت کیسے بنیں؟
    بسم الله الرحمن الرحيم   پہلا خطبہ: تمام تعریفیں اللہ تعالی کیلیے ہیں جس نے انسان کو بہترین انداز سے پیدا فرمایا، اسے قوت سماعت و بصارت سے نوازا، میں اسی کا شکر ادا کرتا ہوں اور اسی کی حمد خوانی کرتا ہوں کہ اس نے سورج کو ذاتی روشنی دی اور چاند سے روشنی پھیلائی، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبودِ بر حق نہیں وہ اکیلا ہے، اس کا کوئی شریک نہیں ، اسی نے مومنوں کو جنت میں جگہ دی اور کافروں کا ٹھکانا جہنم بنایا، میں یہ بھی  گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی سیدنا محمد اس کے بندے  اور رسول  ہیں، آپ نے متبعین سنت کو نہروں والی جنتوں کی راہ دکھائی، اللہ تعالی آپ پر ، آپ کی آل اور ان صحابہ کرام  پر رحمتیں  نازل فرمائے     ، جنہوں نے مؤثر ترین شخصیات بن کر دکھایا۔ حمد و صلاۃ کے بعد: میں اپنے آپ اور تمام سامعین کو تقوی الہی کی نصیحت کرتا ہوں، فرمانِ باری تعالی ہے: {يَاأَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ حَقَّ تُقَاتِهِ وَلَا تَمُوتُنَّ إِلَّا وَأَنْتُمْ مُسْلِمُونَ} اے ایمان والو! اللہ تعالی سے کما حقُّہ ڈرو اور تمہیں موت آئے تو صرف اسلام کی حالت میں۔[آل عمران: 102]…
    في خطبات: مسجد النبوی صلی اللہ علیہ وسلم