بسم اللہ الرحمن الرحیم،الحمد للہ والصلوٰۃ والسلام علی من لا نبی بعدہ 

الإثنين, 16 تشرين1/أكتوير 2017 12:49

اللہ تعالیٰ کے اسماء وصفات میں الحاد اور اس کی صورتیں

مولف/مصنف/مقرر 

’’الحاد کے معنیٰ ہیں : کسی ایک طرف مائل ہونا ۔ اسی سے لحد ہے جو اس قبر کو کہا جاتاہے جو قبر کے گھڑے کے اندر ایک طرف بنائی جاتی ہے ۔ دین میں الحاد اختیار کرنے کا مطلب کج روی اور گمراہی اختیار کرنا ہے‘‘ ۔ ( تفسیر احسن البیان ص ۳۹۰ مطبوعہ دار السلام لاہور)
اسماء ، اسم کی جمع ہے جس سے مراد :اللہ تعالیٰ کے وہ پیارے نام ہیں جو باری تعالیٰ نے خود اپنے لئے منتخب کئے ہیں اور اپنے رسول ﷺ اور کتابِ عظیم کے ذریعے کچھ ہمیں بھی بتلائے ہیں ۔
اسی طرح صفات صفت کی جمع ہے جس سے مراد : اللہ تعالیٰ کی وہ بلند وبرتر صفات ہیں جن میں اس کا کوئی شریک نہیں جیسا کہ فرمان باری تعالیٰ ہے :
لَيْسَ كَمِثْلِهِ شَيْءٌ وَهُوَ السَّمِيعُ الْبَصِيرُ (الشوریٰ :11)
’’ اس جیسی کوئی چیز نہیں وہ سننے والا اور دیکھنے والا ہے‘‘۔
اہل سنت والجماعت کا اللہ تعالیٰ کے اسماء وصفات کے باب میں یہ عقیدہ ہےکہ ’’ اللہ تعالیٰ کے تمام ناموں اور تمام صفات پر حقیقی معنیٰ میں بغیرتمثیل ‘بغیر تشبیہ ‘بغیر تکييف ‘بغیر تعطیل اور بغیر تحریف کئے ایمان لانا ‘ جونام اللہ نے خود ہمیں بتائے ہیں یا نبی کریم ﷺ نے بتائے ہیںجیسے استواء ‘ نزول ‘ ید وغیرہ۔قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں کہ
لَيْسَ كَمِثْلِهِ شَيْءٌ وَهُوَ السَّمِيعُ الْبَصِيرُ (الشوریٰ :11)
’’اس جیسی کوئی چیز نہیں ‘وہ سننے اور دیکھنے والا ہے‘‘یعنی کائنات میں اللہ جیسی کوئی چیز نہیں‘نہ ذات میں نہ صفات میں۔پس وہ اپنی نظیر آپ ہی ہے۔واحد اور بے نیازہے۔
اللہ تعالیٰ کے ناموں میں الحاد کی صورتیں ۔
اللہ تعالیٰ کے ناموں اور صفات میں الحاد ( کج روی ) کی جملہ صورتیں ذیل کے سطور میں بیان کی جاتی ہیں ۔
پہلی صورت : اللہ تعالیٰ کے ناموں میں سے کسی نام یا اس سے ثابت ہونے والی صفت کا انکار کرنا ۔ جیسا کہ اہلِ جاہلیت اللہ تعالیٰ کے نام مبارک ’’رحمٰن ‘‘ کا انکار کیا کرتے تھے ۔چنانچہ فرمان باری تعالیٰ ہے:
وَاِذَا قِيْلَ لَہُمُ اسْجُدُوْا لِلرَّحْمٰنِ قَالُوْا وَمَا الرَّحْمٰنُ اَنَسْجُدُ لِمَا تَاْمُرُنَا وَزَادَہُمْ نُفُوْرًا
’’ ان سے جب بھی کہا جاتا ہے کہ رحمان کو سجدہ کرو تو جواب دیتے ہیں رحمان ہے کیا ؟ کیا ہم اسے سجدہ کریں جس کا تو ہمیں حکم دے رہا ہے اور اس (تبلیغ) نے ان کی نفرت میں مزید اضافہ کر دیا ‘‘۔(الفرقان 60)
یا جیسا کہ بعض مبتدعہ نے اللہ تعالیٰ کا نام تو تسلیم کیا لیکن اس نام پر مشتمل صفت کا انکار کردیا جیسا کہ بعض باطل فرقے کہتے ہیں ’’ اللہ رحیم ہے بغیر رحمت کے اور سمیع ہے بلا سمع کے ۔
دوسری صورت : اللہ تعالیٰ کے ناموں پر اپنی طرف سے اضافے کرلینا ، یعنی اپنی طرف سے اللہ تعالیٰ کے نام گھڑ لینا جس کی اجازت اللہ تعالیٰ نے نہیں دی ۔ یہ الحاد اس بنا پر ہے کہ اللہ تعالیٰ کے تمام اسمائےعالیہ توقیفی ( یعنی اللہ کی طرف سے متعین کردہ ) ہیں ۔ لہذا جو شخص بھی اللہ تعالیٰ کے متعین کردہ ناموں جو اس نے اپنے لئے منتخب کئے ہیں انہیں چھوڑ کر اپنی طرف سے اللہ تعالیٰ کا کوئی نام گھڑ لیتاہے وہ اللہ تعالیٰ پر وہ بات کہتاہے جس کا اسے علم نہیں اور اللہ تعالیٰ نے ایسی بات کہنے سے منع فرمایا ہے چنانچہ ارشاد باری تعالیٰ ہے :
قُلْ إِنَّمَا حَرَّمَ رَبِّيَ الْفَوَاحِشَ مَا ظَهَرَ مِنْهَا وَمَا بَطَنَ وَالْإِثْمَ وَالْبَغْيَ بِغَيْرِ الْحَقِّ وَأَن تُشْرِكُوا بِاللهِ مَا لَمْ يُنَزِّلْ بِهِ سُلْطَانًا وَأَن تَقُولُوا عَلَى اللهِ مَا لَا تَعْلَمُونَ (الاعراف 33)
آپ فرما دیجیے کہ البتہ میرے رب نے صرف حرام کیا ہے ان تمام فحش باتوں کو جو اعلانیہ ہیں اور جو پوشیدہ ہیں اور ہر گناہ کی بات کو ناحق کسی پر ظلم کرنے کو اس بات کو کہ اللہ کے ساتھ کسی ایسی چیز کو شریک ٹھہراؤ جس کی اللہ نے کوئی سند نازل نہیں کی اور اس بات کو کہ تم لوگ اللہ کے ذمے ایسی بات نہ لگا دو جس کو تم جانتے نہیں ۔
جیسا کہ بعض لوگوں نے اللہ تعالیٰ کو لفظ ’’خدا ‘‘ ’’ گوڈ ‘‘ یا فلاسفہ نے علہ الفاعلہ اور عیسائیوں نے ’’الاب ‘‘ (والعیاذ باللہ ) کا نام اللہ کیلئے متعین کیا ہے ۔
تیسری صورت : اللہ تعالیٰ کے ناموں میں تبدیلی کردینا جیسا کہ مشرکین نے کیا کہ اللہ کے ذاتی نام سے اپنے بت کا نام ’’ لات ‘‘ رکھ لیا اور اس کے صفاتی ناموں عزیز سے ’’عزیٰ ‘‘ اور ’’ المنان ‘‘ سے ’’مناۃ ‘‘ بنالیا ۔
اس کے الحاد ہونے کی وجہ یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کے رکھے ہوئے نام اسی کی ذات کیلئے خاص ہیں ۔ لہذا انہی معنوں میں اللہ کے وہ نام مخلوق کیلئے استعمال کرنا کہ اس کی اللہ کے علاوہ عبادت کی جانے لگے ۔ یہ الحاد ( کج روی ) ہے ۔
فرمان باریٰ تعالیٰ ہے:
رَبُّ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ وَمَا بَيْنَہُمَا فَاعْبُدْہُ وَاصْطَبِرْ لِعِبَادَتِہٖ۝۰ہَلْ تَعْلَمُ لَہٗ سَمِيًّا (مریم:65)
’’ آسمانوں کا، زمین کا اور جو کچھ ان کے درمیان ہے سب کا رب وہی ہے تو اسی کی بندگی کر اور اس کی عبادت پر جم جا۔ کیا تیرے علم میں اس کا ہم نام ہم پلہ کوئی اور بھی ہے؟ ‘‘۔
چوتھی صورت : اللہ تعالیٰ کے ناموں میں کمی کردی جائے ۔ مثلاً: اسے کسی ایک ہی مخصوص نام سے پکارا جائے اور دوسرے صفاتی ناموں سے پکارنے کو برا سمجھا جائے ۔
پانچویں صورت : اللہ کے ناموں اور صفات میں الحاد کی ایک صور ت یہ بھی ہے کہ ان میں تاویل ، تعطیل ، یا تشبیہ سے کام لیا جائے ۔
تاویل : اس طرح کہ جیسا کہ بعض مبتدعہ کہتے ہیں کہ ’’یداللہ ‘‘ سے مراد قوت ہے اور ’’ استواء‘‘ کا مطلب غلبہ ہے ۔ اللہ کو ہر جگہ ذات کے اعتبار سے حاضر سمجھتے ہیں ۔
اور تعطیل سے مراد کلی انکار ہے ۔تشبیہ سے مراد مخلوق کی صفات
چھٹی صورت : یہ عقیدہ رکھنا کہ اللہ تعالیٰ کے مذکورہ نام یا صفات ایسی ہی ہیں جیسا کہ مخلوق کی صفات ۔ جیسا کہ بعض مبتدعہ نے یہ کہا کہ اللہ کا ہاتھ مخلوق کے ہاتھ کی طرح ہے ۔ اس کا استواء ونزول مخلوق کے نزول واستواء کی طرح ہے ۔ وغیرہ وغیرہ ۔
ساتویں صورت : اللہ تعالیٰ کی صفات میں پائے جانے والے معنیٰ ومفہوم کو مخلوق کیلئے بھی استعمال کرنا اور یہ عقیدہ رکھنا کہ مخلوق بھی اس صفت کی مالک ہے جیسا کہ اللہ ۔ مثال کے طور پر ہمارے معاشرے میں عام طور پر رائج ہے کہ لوگ اپنے پیروں اور بزرگوں کو ان صفات سے متصف کرتے ہیں جو ان معنیٰ میں محض اللہ تعالیٰ کیلئے استعمال ہوتی ہیں ۔
مثلاً: جیسا پیر عبد القادر جیلانی کو غوث اعظم اور دست گیر کہا جاتاہے ۔ علی ہجویری کو داتا ، گنج بخش کہا جاتاہے ، خواجہ معین الدین چشتی کو غریب نواز کہا جاتاہے ۔ وغیرہ وغیرہ
یہ تمام صفات اللہ تعالیٰ کی صفات ہیں اب آئیے دیکھتے ہیں کہ ان القابات اور صفات کا جو غیر اللہ کیلئے استعمال کی گئی ہیں حقیقۃ وہ اللہ تعالیٰ کی صفات ہیں ۔ آئیے دیکھتے ہیں ان کا معنیٰ ومفہوم کیا ہے ؟
غوث اعظم سے مراد: سب سے بڑا فریاد سننے والا
اب قرآن کریم کی روشنی میں ملاحظہ کریں کہ سب سے بڑا فریاد سننے والا کون ہے ؟
فرمان باری تعالیٰ ہے :
اَمَّنْ يُّجِيْبُ الْمُضْطَرَّ اِذَا دَعَاہُ وَيَكْشِفُ السُّوْۗءَ وَيَجْعَلُكُمْ خُلَـفَاۗءَ الْاَرْضِءَ اِلٰہٌ مَّعَ اللہِ قَلِيْلًا مَّا تَذَكَّرُوْنَ (النمل62)
’’ بھلا کون ہے جو لاچار کی فریاد رسی کرتا ہے جب وہ اسے پکارتا ہے اور اس کی تکلیف کو دور کردیتا ہے اور (کون ہے جو) تمہیں زمین کے جانشین بناتا ہے؟ کیا اللہ کے ساتھ کوئی اور الٰہ ہے؟ تم لوگ تھوڑا ہی غور کرتے ہو ۔ ‘‘
دست گیر :کا معنیٰ ہے مصیبت کے وقت تھامنے والا ۔
یہ اللہ کی صفت ہے فرمان باری تعالیٰ ہے:
وَاِذَا مَسَّ الْاِنْسَانَ الضُّرُّ دَعَانَا لِجَنْۢبِہٖٓ اَوْ قَاعِدًا اَوْ قَاۗىِٕمًافَلَمَّا كَشَفْنَا عَنْہُ ضُرَّہٗ مَرَّ كَاَنْ لَّمْ يَدْعُنَآ اِلٰى ضُرٍّ مَّسَّہٗ كَذٰلِكَ زُيِّنَ لِلْمُسْرِفِيْنَ مَا كَانُوْا يَعْمَلُوْنَ (یونس12 )
’’ اور جب انسان کو کوئی تکلیف پہنچتی ہے تو ہمیں اپنے پہلو پر یا بیٹھے ہوئے یا کھڑے ہر حالت میں پکارتا ہے پھر جب ہم اس سے وہ تکلیف دور کردیتے ہیں تو ایسے گزر جاتا ہے جیسے اس نے تکلیف کے وقت ہمیں پکارا ہی نہ تھا۔ ایسے حد سے بڑھے ہوئے لوگوں کو وہی کام اچھے معلوم ہونے لگتے ہیں جو وہ کرتے ہیں۔‘‘
داتا سے مراد : سب کچھ دینے والا
یہ بھی اللہ تعالیٰ کی صفت ہے۔ فرمان باری تعالیٰ ہے :
مَا يَفْتَحِ اللہُ لِلنَّاسِ مِنْ رَّحْمَۃٍ فَلَا مُمْسِكَ لَہَا وَمَا يُمْسِكْ فَلَا مُرْسِلَ لَہٗ مِنْۢ بَعْدِہٖ وَہُوَ الْعَزِيْزُ الْحَكِيْمُ (فاطر:2)
’’ اللہ اگر لوگوں کے لئے اپنی رحمت (کا دروازہ) کھول دے تو اسے کوئی بند کرنے والا نہیں اور جسے وہ بند کردے تو اس کے بعد اسے کوئی کھولنے والا نہیں ۔ اور وہ سب پر غالب اور حکمت والا ہے‘‘۔
نیز ایک اور آیت میں فرمایا :
لِلہِ مُلْكُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ يَخْلُقُ مَا يَشَاۗءُ يَہَبُ لِمَنْ يَّشَاۗءُ اِنَاثًا وَّيَہَبُ لِمَنْ يَّشَاۗءُ الذُّكُوْرَ۝۴۹ۙ اَوْ يُزَوِّجُہُمْ ذُكْرَانًا وَّاِنَاثًا۝۰ۚ وَيَجْعَلُ مَنْ يَّشَاۗءُ عَــقِـيْمًا۝۰ۭ اِنَّہٗ عَلِيْمٌ قَدِيْرٌ۝۵۰ (الشوریٰ)
’’ آسمانوں کی اور زمین کی سلطنت اللہ تعالٰی ہی کے لئے ہے، وہ جو چاہتا ہے پیدا کرتا ہے جس کو چاہتا ہے بیٹیاں دیتا ہے جسے چاہے بیٹے دیتا ہے۔یا انہیں جمع کر دیتا ہے بیٹے بھی اور بیٹیاں بھی اور جسے چاہے بانجھ کر دیتا ہے وہ بڑے علم والا اور کامل قدرت والا ہے۔
گنج بخش :سے مراد خزانے بخشنے والا ۔
یہ صفت بھی اللہ تعالیٰ کی صفت ہے لیکن اسے مخلوق میں چند پیروں کیلئے استعمال کیا جاتاہے ۔
فرمان باری تعالیٰ ہے :
وَلِلّٰهِ خَزَاۗىِٕنُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ وَلٰكِنَّ الْمُنٰفِقِيْنَ لَا يَفْقَهُوْنَ (المنافقون7)
’’اور آسمان و زمین کے خزانے اللہ تعالٰی کی ملکیت ہیں لیکن یہ منافق بےسمجھ ہیں ‘‘۔
نیز فرمایا :
اِنَّ اللّٰهَ يَرْزُقُ مَنْ يَّشَاۗءُ بِغَيْرِ حِسَابٍ (آل عمران 37)
’’بلاشبہ اللہ جسے چاہے بے حساب رزق دیتا ہے‘‘۔
غریب نواز سے مراد : غریبوں کو نوازنے والا ۔
غریبوں کو نوازنے والی ذات اللہ تعالیٰ کی ذات ہے ۔
فرمان باریٰ تعالیٰ ہے :
يٰٓاَيُّهَا النَّاسُ اَنْتُمُ الْفُقَرَاۗءُ اِلَى اللّٰهِ وَاللّٰهُ هُوَ الْغَنِيُّ الْحَمِيْدُ (سورہ فاطر 15)
’’ لوگو! تم سب اللہ کے محتاج ہو اور وہ (ہر چیز سے) بے نیاز اور حمد کے لائق ہے۔‘‘
یعنی سب سے بڑا مدد کرنے والا ، مشکل میں ہاتھ تھامنے والا ، دینے والا ، غریبوں کو نوازنے والا یہ سب اللہ تعالیٰ کی صفات اور افعال ہیں ۔ مخلوق کیلئے ان کا استعمال شرک بھی ہے اور الحاد بھی ۔

ملاحظہ کیا گیا 115 بار آخری تعدیل الإثنين, 16 تشرين1/أكتوير 2017 12:59
  • Image
  • Text
  • Additional info
  • Author

’’الحاد کے معنیٰ ہیں : کسی ایک طرف مائل ہونا ۔ اسی سے لحد ہے جو اس قبر کو کہا جاتاہے جو قبر کے گھڑے کے اندر ایک طرف بنائی جاتی ہے ۔ دین میں الحاد اختیار کرنے کا مطلب کج روی اور گمراہی اختیار کرنا ہے‘‘ ۔ ( تفسیر احسن البیان ص ۳۹۰ مطبوعہ دار السلام لاہور)
اسماء ، اسم کی جمع ہے جس سے مراد :اللہ تعالیٰ کے وہ پیارے نام ہیں جو باری تعالیٰ نے خود اپنے لئے منتخب کئے ہیں اور اپنے رسول ﷺ اور کتابِ عظیم کے ذریعے کچھ ہمیں بھی بتلائے ہیں ۔
اسی طرح صفات صفت کی جمع ہے جس سے مراد : اللہ تعالیٰ کی وہ بلند وبرتر صفات ہیں جن میں اس کا کوئی شریک نہیں جیسا کہ فرمان باری تعالیٰ ہے :
لَيْسَ كَمِثْلِهِ شَيْءٌ وَهُوَ السَّمِيعُ الْبَصِيرُ (الشوریٰ :11)
’’ اس جیسی کوئی چیز نہیں وہ سننے والا اور دیکھنے والا ہے‘‘۔
اہل سنت والجماعت کا اللہ تعالیٰ کے اسماء وصفات کے باب میں یہ عقیدہ ہےکہ ’’ اللہ تعالیٰ کے تمام ناموں اور تمام صفات پر حقیقی معنیٰ میں بغیرتمثیل ‘بغیر تشبیہ ‘بغیر تکييف ‘بغیر تعطیل اور بغیر تحریف کئے ایمان لانا ‘ جونام اللہ نے خود ہمیں بتائے ہیں یا نبی کریم ﷺ نے بتائے ہیںجیسے استواء ‘ نزول ‘ ید وغیرہ۔قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں کہ
لَيْسَ كَمِثْلِهِ شَيْءٌ وَهُوَ السَّمِيعُ الْبَصِيرُ (الشوریٰ :11)
’’اس جیسی کوئی چیز نہیں ‘وہ سننے اور دیکھنے والا ہے‘‘یعنی کائنات میں اللہ جیسی کوئی چیز نہیں‘نہ ذات میں نہ صفات میں۔پس وہ اپنی نظیر آپ ہی ہے۔واحد اور بے نیازہے۔
اللہ تعالیٰ کے ناموں میں الحاد کی صورتیں ۔
اللہ تعالیٰ کے ناموں اور صفات میں الحاد ( کج روی ) کی جملہ صورتیں ذیل کے سطور میں بیان کی جاتی ہیں ۔
پہلی صورت : اللہ تعالیٰ کے ناموں میں سے کسی نام یا اس سے ثابت ہونے والی صفت کا انکار کرنا ۔ جیسا کہ اہلِ جاہلیت اللہ تعالیٰ کے نام مبارک ’’رحمٰن ‘‘ کا انکار کیا کرتے تھے ۔چنانچہ فرمان باری تعالیٰ ہے:
وَاِذَا قِيْلَ لَہُمُ اسْجُدُوْا لِلرَّحْمٰنِ قَالُوْا وَمَا الرَّحْمٰنُ اَنَسْجُدُ لِمَا تَاْمُرُنَا وَزَادَہُمْ نُفُوْرًا
’’ ان سے جب بھی کہا جاتا ہے کہ رحمان کو سجدہ کرو تو جواب دیتے ہیں رحمان ہے کیا ؟ کیا ہم اسے سجدہ کریں جس کا تو ہمیں حکم دے رہا ہے اور اس (تبلیغ) نے ان کی نفرت میں مزید اضافہ کر دیا ‘‘۔(الفرقان 60)
یا جیسا کہ بعض مبتدعہ نے اللہ تعالیٰ کا نام تو تسلیم کیا لیکن اس نام پر مشتمل صفت کا انکار کردیا جیسا کہ بعض باطل فرقے کہتے ہیں ’’ اللہ رحیم ہے بغیر رحمت کے اور سمیع ہے بلا سمع کے ۔
دوسری صورت : اللہ تعالیٰ کے ناموں پر اپنی طرف سے اضافے کرلینا ، یعنی اپنی طرف سے اللہ تعالیٰ کے نام گھڑ لینا جس کی اجازت اللہ تعالیٰ نے نہیں دی ۔ یہ الحاد اس بنا پر ہے کہ اللہ تعالیٰ کے تمام اسمائےعالیہ توقیفی ( یعنی اللہ کی طرف سے متعین کردہ ) ہیں ۔ لہذا جو شخص بھی اللہ تعالیٰ کے متعین کردہ ناموں جو اس نے اپنے لئے منتخب کئے ہیں انہیں چھوڑ کر اپنی طرف سے اللہ تعالیٰ کا کوئی نام گھڑ لیتاہے وہ اللہ تعالیٰ پر وہ بات کہتاہے جس کا اسے علم نہیں اور اللہ تعالیٰ نے ایسی بات کہنے سے منع فرمایا ہے چنانچہ ارشاد باری تعالیٰ ہے :
قُلْ إِنَّمَا حَرَّمَ رَبِّيَ الْفَوَاحِشَ مَا ظَهَرَ مِنْهَا وَمَا بَطَنَ وَالْإِثْمَ وَالْبَغْيَ بِغَيْرِ الْحَقِّ وَأَن تُشْرِكُوا بِاللهِ مَا لَمْ يُنَزِّلْ بِهِ سُلْطَانًا وَأَن تَقُولُوا عَلَى اللهِ مَا لَا تَعْلَمُونَ (الاعراف 33)
آپ فرما دیجیے کہ البتہ میرے رب نے صرف حرام کیا ہے ان تمام فحش باتوں کو جو اعلانیہ ہیں اور جو پوشیدہ ہیں اور ہر گناہ کی بات کو ناحق کسی پر ظلم کرنے کو اس بات کو کہ اللہ کے ساتھ کسی ایسی چیز کو شریک ٹھہراؤ جس کی اللہ نے کوئی سند نازل نہیں کی اور اس بات کو کہ تم لوگ اللہ کے ذمے ایسی بات نہ لگا دو جس کو تم جانتے نہیں ۔
جیسا کہ بعض لوگوں نے اللہ تعالیٰ کو لفظ ’’خدا ‘‘ ’’ گوڈ ‘‘ یا فلاسفہ نے علہ الفاعلہ اور عیسائیوں نے ’’الاب ‘‘ (والعیاذ باللہ ) کا نام اللہ کیلئے متعین کیا ہے ۔
تیسری صورت : اللہ تعالیٰ کے ناموں میں تبدیلی کردینا جیسا کہ مشرکین نے کیا کہ اللہ کے ذاتی نام سے اپنے بت کا نام ’’ لات ‘‘ رکھ لیا اور اس کے صفاتی ناموں عزیز سے ’’عزیٰ ‘‘ اور ’’ المنان ‘‘ سے ’’مناۃ ‘‘ بنالیا ۔
اس کے الحاد ہونے کی وجہ یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کے رکھے ہوئے نام اسی کی ذات کیلئے خاص ہیں ۔ لہذا انہی معنوں میں اللہ کے وہ نام مخلوق کیلئے استعمال کرنا کہ اس کی اللہ کے علاوہ عبادت کی جانے لگے ۔ یہ الحاد ( کج روی ) ہے ۔
فرمان باریٰ تعالیٰ ہے:
رَبُّ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ وَمَا بَيْنَہُمَا فَاعْبُدْہُ وَاصْطَبِرْ لِعِبَادَتِہٖ۝۰ہَلْ تَعْلَمُ لَہٗ سَمِيًّا (مریم:65)
’’ آسمانوں کا، زمین کا اور جو کچھ ان کے درمیان ہے سب کا رب وہی ہے تو اسی کی بندگی کر اور اس کی عبادت پر جم جا۔ کیا تیرے علم میں اس کا ہم نام ہم پلہ کوئی اور بھی ہے؟ ‘‘۔
چوتھی صورت : اللہ تعالیٰ کے ناموں میں کمی کردی جائے ۔ مثلاً: اسے کسی ایک ہی مخصوص نام سے پکارا جائے اور دوسرے صفاتی ناموں سے پکارنے کو برا سمجھا جائے ۔
پانچویں صورت : اللہ کے ناموں اور صفات میں الحاد کی ایک صور ت یہ بھی ہے کہ ان میں تاویل ، تعطیل ، یا تشبیہ سے کام لیا جائے ۔
تاویل : اس طرح کہ جیسا کہ بعض مبتدعہ کہتے ہیں کہ ’’یداللہ ‘‘ سے مراد قوت ہے اور ’’ استواء‘‘ کا مطلب غلبہ ہے ۔ اللہ کو ہر جگہ ذات کے اعتبار سے حاضر سمجھتے ہیں ۔
اور تعطیل سے مراد کلی انکار ہے ۔تشبیہ سے مراد مخلوق کی صفات
چھٹی صورت : یہ عقیدہ رکھنا کہ اللہ تعالیٰ کے مذکورہ نام یا صفات ایسی ہی ہیں جیسا کہ مخلوق کی صفات ۔ جیسا کہ بعض مبتدعہ نے یہ کہا کہ اللہ کا ہاتھ مخلوق کے ہاتھ کی طرح ہے ۔ اس کا استواء ونزول مخلوق کے نزول واستواء کی طرح ہے ۔ وغیرہ وغیرہ ۔
ساتویں صورت : اللہ تعالیٰ کی صفات میں پائے جانے والے معنیٰ ومفہوم کو مخلوق کیلئے بھی استعمال کرنا اور یہ عقیدہ رکھنا کہ مخلوق بھی اس صفت کی مالک ہے جیسا کہ اللہ ۔ مثال کے طور پر ہمارے معاشرے میں عام طور پر رائج ہے کہ لوگ اپنے پیروں اور بزرگوں کو ان صفات سے متصف کرتے ہیں جو ان معنیٰ میں محض اللہ تعالیٰ کیلئے استعمال ہوتی ہیں ۔
مثلاً: جیسا پیر عبد القادر جیلانی کو غوث اعظم اور دست گیر کہا جاتاہے ۔ علی ہجویری کو داتا ، گنج بخش کہا جاتاہے ، خواجہ معین الدین چشتی کو غریب نواز کہا جاتاہے ۔ وغیرہ وغیرہ
یہ تمام صفات اللہ تعالیٰ کی صفات ہیں اب آئیے دیکھتے ہیں کہ ان القابات اور صفات کا جو غیر اللہ کیلئے استعمال کی گئی ہیں حقیقۃ وہ اللہ تعالیٰ کی صفات ہیں ۔ آئیے دیکھتے ہیں ان کا معنیٰ ومفہوم کیا ہے ؟
غوث اعظم سے مراد: سب سے بڑا فریاد سننے والا
اب قرآن کریم کی روشنی میں ملاحظہ کریں کہ سب سے بڑا فریاد سننے والا کون ہے ؟
فرمان باری تعالیٰ ہے :
اَمَّنْ يُّجِيْبُ الْمُضْطَرَّ اِذَا دَعَاہُ وَيَكْشِفُ السُّوْۗءَ وَيَجْعَلُكُمْ خُلَـفَاۗءَ الْاَرْضِءَ اِلٰہٌ مَّعَ اللہِ قَلِيْلًا مَّا تَذَكَّرُوْنَ (النمل62)
’’ بھلا کون ہے جو لاچار کی فریاد رسی کرتا ہے جب وہ اسے پکارتا ہے اور اس کی تکلیف کو دور کردیتا ہے اور (کون ہے جو) تمہیں زمین کے جانشین بناتا ہے؟ کیا اللہ کے ساتھ کوئی اور الٰہ ہے؟ تم لوگ تھوڑا ہی غور کرتے ہو ۔ ‘‘
دست گیر :کا معنیٰ ہے مصیبت کے وقت تھامنے والا ۔
یہ اللہ کی صفت ہے فرمان باری تعالیٰ ہے:
وَاِذَا مَسَّ الْاِنْسَانَ الضُّرُّ دَعَانَا لِجَنْۢبِہٖٓ اَوْ قَاعِدًا اَوْ قَاۗىِٕمًافَلَمَّا كَشَفْنَا عَنْہُ ضُرَّہٗ مَرَّ كَاَنْ لَّمْ يَدْعُنَآ اِلٰى ضُرٍّ مَّسَّہٗ كَذٰلِكَ زُيِّنَ لِلْمُسْرِفِيْنَ مَا كَانُوْا يَعْمَلُوْنَ (یونس12 )
’’ اور جب انسان کو کوئی تکلیف پہنچتی ہے تو ہمیں اپنے پہلو پر یا بیٹھے ہوئے یا کھڑے ہر حالت میں پکارتا ہے پھر جب ہم اس سے وہ تکلیف دور کردیتے ہیں تو ایسے گزر جاتا ہے جیسے اس نے تکلیف کے وقت ہمیں پکارا ہی نہ تھا۔ ایسے حد سے بڑھے ہوئے لوگوں کو وہی کام اچھے معلوم ہونے لگتے ہیں جو وہ کرتے ہیں۔‘‘
داتا سے مراد : سب کچھ دینے والا
یہ بھی اللہ تعالیٰ کی صفت ہے۔ فرمان باری تعالیٰ ہے :
مَا يَفْتَحِ اللہُ لِلنَّاسِ مِنْ رَّحْمَۃٍ فَلَا مُمْسِكَ لَہَا وَمَا يُمْسِكْ فَلَا مُرْسِلَ لَہٗ مِنْۢ بَعْدِہٖ وَہُوَ الْعَزِيْزُ الْحَكِيْمُ (فاطر:2)
’’ اللہ اگر لوگوں کے لئے اپنی رحمت (کا دروازہ) کھول دے تو اسے کوئی بند کرنے والا نہیں اور جسے وہ بند کردے تو اس کے بعد اسے کوئی کھولنے والا نہیں ۔ اور وہ سب پر غالب اور حکمت والا ہے‘‘۔
نیز ایک اور آیت میں فرمایا :
لِلہِ مُلْكُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ يَخْلُقُ مَا يَشَاۗءُ يَہَبُ لِمَنْ يَّشَاۗءُ اِنَاثًا وَّيَہَبُ لِمَنْ يَّشَاۗءُ الذُّكُوْرَ۝۴۹ۙ اَوْ يُزَوِّجُہُمْ ذُكْرَانًا وَّاِنَاثًا۝۰ۚ وَيَجْعَلُ مَنْ يَّشَاۗءُ عَــقِـيْمًا۝۰ۭ اِنَّہٗ عَلِيْمٌ قَدِيْرٌ۝۵۰ (الشوریٰ)
’’ آسمانوں کی اور زمین کی سلطنت اللہ تعالٰی ہی کے لئے ہے، وہ جو چاہتا ہے پیدا کرتا ہے جس کو چاہتا ہے بیٹیاں دیتا ہے جسے چاہے بیٹے دیتا ہے۔یا انہیں جمع کر دیتا ہے بیٹے بھی اور بیٹیاں بھی اور جسے چاہے بانجھ کر دیتا ہے وہ بڑے علم والا اور کامل قدرت والا ہے۔
گنج بخش :سے مراد خزانے بخشنے والا ۔
یہ صفت بھی اللہ تعالیٰ کی صفت ہے لیکن اسے مخلوق میں چند پیروں کیلئے استعمال کیا جاتاہے ۔
فرمان باری تعالیٰ ہے :
وَلِلّٰهِ خَزَاۗىِٕنُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ وَلٰكِنَّ الْمُنٰفِقِيْنَ لَا يَفْقَهُوْنَ (المنافقون7)
’’اور آسمان و زمین کے خزانے اللہ تعالٰی کی ملکیت ہیں لیکن یہ منافق بےسمجھ ہیں ‘‘۔
نیز فرمایا :
اِنَّ اللّٰهَ يَرْزُقُ مَنْ يَّشَاۗءُ بِغَيْرِ حِسَابٍ (آل عمران 37)
’’بلاشبہ اللہ جسے چاہے بے حساب رزق دیتا ہے‘‘۔
غریب نواز سے مراد : غریبوں کو نوازنے والا ۔
غریبوں کو نوازنے والی ذات اللہ تعالیٰ کی ذات ہے ۔
فرمان باریٰ تعالیٰ ہے :
يٰٓاَيُّهَا النَّاسُ اَنْتُمُ الْفُقَرَاۗءُ اِلَى اللّٰهِ وَاللّٰهُ هُوَ الْغَنِيُّ الْحَمِيْدُ (سورہ فاطر 15)
’’ لوگو! تم سب اللہ کے محتاج ہو اور وہ (ہر چیز سے) بے نیاز اور حمد کے لائق ہے۔‘‘
یعنی سب سے بڑا مدد کرنے والا ، مشکل میں ہاتھ تھامنے والا ، دینے والا ، غریبوں کو نوازنے والا یہ سب اللہ تعالیٰ کی صفات اور افعال ہیں ۔ مخلوق کیلئے ان کا استعمال شرک بھی ہے اور الحاد بھی ۔