بسم اللہ الرحمن الرحیم،الحمد للہ والصلوٰۃ والسلام علی من لا نبی بعدہ 

Albayan

cache/resized/b5c3c837abcc7ff15cf9cc11d5f30243.jpg
, بدھ, 15 نومبر 2017
البیان شمارہ نمبر 18 کے مضامین دنیا میں عذاب ...
cache/resized/546a1de403129ae94579dcddd91ffdf5.jpg
, منگل, 19 ستمبر 2017
البیان شمارہ 11کے اہم مضامین رویت ہلال، ماہِ ...
cache/resized/99c824d9b5000898d4a9d80362151376.jpg
, جمعرات, 17 اگست 2017
خواتین کا حقیقی تحفظ اور حالیہ بل حدیث کی صحت ...
cache/resized/cd47dbe0421f0ddfb5e2e89b376b7cff.jpg
, پیر, 30 نومبر -0001
اہم عنوانات: حافظ  عبد الحمید ازہر رحمہ اللہ ...
cache/resized/23c20f71d364f30bc8cb4e2ca3184ed1.jpg
, بدھ, 09 مارچ 2016
سہ ماہی مجلہ البیان شمارہ 13  
cache/resized/3f1931e1a03afb5cdfec7a0feb0dba0e.jpg
, ہفتہ, 31 اکتوبر 2015
سہ ماہی مجلہ البیان کراچی۔ اسلامی ثقافت نمبر، ...
cache/resized/bcdf5a89a87a5acbca8666d47358de3b.jpg
, منگل, 17 مارچ 2015
عوام اور علمائے کرام میں خلیج، اسباب و علاج ...
cache/resized/e09f9ff4ca94456a314f43f7ef93d24d.jpg
, منگل, 08 اکتوبر 2013
برائے ڈاونلوڈ
cache/resized/b02c4cba4d5db2a30e998ad1bb5a32ed.jpg
, اتوار, 01 اگست 2010
سہ ماہی مجلہ البیان 3کراچیخصوصی نمبر: تعظیم حرمات ...

جدید مضامین و مقالات، ویڈیوز و کتب

  • مروجہ اسلامی  بینکوں کے ذرائع تمویل(مروجہ مرابحہ ،  اجارہ اور مشارکہ متناقصہ) کی شرعی حیثیت
    مروجہ اسلامی بینکوں کے ذرائع تمویل(مروجہ مرابحہ ، اجارہ اور مشارکہ متناقصہ) کی شرعی حیثیت
    مروجہ اسلامی  بینکوں کے ذرائع تمویل(مروجہ مرابحہ ،  اجارہ اور مشارکہ متناقصہ) کی شرعی حیثیت یہ مضمون اور اس سے متعلقہ بینکاری، تجارت سے متعلق اہم مضامین ادارے کی جانب سے شائع شدہ مجلہ’’ سہ ماہی البیان مروجہ اسلامی بینکاری و جدید معیشت نمبر ‘‘میں ملاحظہ فرمائیں عثمان صفدر [1] اسلامی بینکوں میں کیا جانے والا مرابحہ ، اجارہ اور مشارکہ متناقصہ وہ معاملات ہیں جو ان بینکوں کے دیگر معاملات پر حاوی ہیں ۔سب سے زیادہ معاہدے اور ٹرانزیکشن انہی معاملات کے تحت ہوتی ہیں۔بلکہ اگر یوں بھی کہا جائے تو غلط نہ ہوگا کہ جس طرح سودی بینکوں…
  • انشورنس اور تکافل میزانِ شریعت میں
    انشورنس اور تکافل میزانِ شریعت میں
    انشورنس اور تکافل میزانِ شریعت میں!  عثمان صفدر[1]     تمام تعریفات اللہ رب العالمین کے لئے ہیں جس نے ہمیں عدم سے وجود بخشا، ہمیں بیشما رنعتوں سے نوازا، پاک ہے وہ ذات جس نے اپنی مخلوق کو پیدا کر کے تنہا نہیں چھوڑا، بلکہ ان کے رزق کی ضمانت لی ، ان کے لئے رزق کو پہلےسے لکھ دیا، حصول رزق کے اسباب مہیا کئے ، اور پوری کائنات کو انسانوں کی خدمت کے لئے مسخر کردیا، اللہ تعالی کا فرمان ہے : {اَللّٰهُ الَّذِيْ خَلَقَ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضَ وَاَنْزَلَ مِنَ السَّمَاۗءِ مَاۗءً فَاَخْرَجَ بِهٖ مِنَ الثَّمَرٰتِ رِزْقًا لَّكُمْ…
  • سرمایہ دارانہ نظام کے نتائج
    سرمایہ دارانہ نظام کے نتائج
    سرمایہ دارانہ نظام کے نتائج The Consequences of the Capitalism                                      عثمان صفدر1[1] گزشتہ دو صدیوں سے سرمایہ دارانہ نظام نے دنیا کو اپنے شکنجہ میں جکڑ رکھا ہے ، یہ وہ نظام ہے جونہ صرف جسمانی بلکہ مالی اور ذہنی ظلم و استبداد پر مشتمل ہے ، جس کی بنیاد میں غریبوں کا خون اور چوٹی پر ارتکاز دولت ہے ، جس نظام کی نس نس میں لالچ وحرص بھری ہے ، اس نظام کے سرکردہ لوگ اپنے پیٹ کا جہنم لئے پوری دنیا میں دندناتے پھرتے ہیں اور دولت کا ایندھن اس جہنم کی آگ کوٹھنڈا کرنے کے…
  • عقد استصناع کی اسلامی بینکوں میں رائج صورتیں اور ان کا شرعی حکم
    عقد استصناع کی اسلامی بینکوں میں رائج صورتیں اور ان کا شرعی حکم
    عقد استصناع کی اسلامی بینکوں میں رائج صورتیں اور ان کا شرعی حکم استصناع( Manufacturing Contract ) کی صورت : استصناع سے مراد ’’ آرڈر پر کوئی چیز تیار کروانا‘‘ فقہاء کی اصطلاح میں استصناع سے مراد : ایک انسان کسی دوسرے کومخصوص رقم کے عوض معینہ اقسام اور صفات پر مشتمل کسی ایسی چیز بنانے کا آرڈر دے جو ابھی تک تیار نہیں ۔ استصناع اور عام بیع میں فرق عام بیع اور استصناع میں جو بنیادی فرق ہے وہ یہ کہ اگرچہ استصناع میں بھی خرید وفروخت ہوتی ہے لیکن نوعیت کے لحاظ سے اور شرعی حکم کے…
  • دینِ اسلام میں خرید و فروخت  کی بنیادی شرائط
    دینِ اسلام میں خرید و فروخت کی بنیادی شرائط
    دینِ اسلام میں خرید و فروخت  کی بنیادی شرائط!   حماد امین چاؤلہ1[1]      شرط کی لغوی واصطلاحی تعریف لغوی تعریف :  شرط: (’’را ‘‘ پرجزم وسکون کے ساتھ) کا لغوی معنی ہے : کسی بھی چیز کو لازم پکڑ لینا اس سے چمٹ جانا۔ اصطلاحی تعریف: فقہاء وعلماء اصول کے مطابق شرط کی تعریف یہ ہے کہ : ’’ جس کے فقدان سے کسی چیز کا نہ ہونا لازم ہواور اس کے وجود سے ہونایا نہ ہونا لازم نہ آئے ‘‘۔ [2] آسان الفاظ میں یوں کہا جاسکتا ہےکہ: کوئی بھی عمل اس وقت تک درست نہیں ہوسکتا جب تک…

مجلہ البیان